پینسٹھ سالہ پاکستانی نژاد برطانوی سیاح پاکستان کے حسُن کے معترف

January 9, 2019

لندن کے پینسٹھ سالہ ناظم خان پیدا افریقہ میں ہوئے،رہائش کاروبار برطانیہ میں لیکن دھڑکنوں میں باپ دادا کی سرزمین بسی ہے۔تبھی تو سات ہزار کلومیٹر سفر طے کرتے تن تنہا پاکستان پہنچ گئے۔

پاکستانی نژاد گھرانے کے ناظم خان فرام انگلستان ان کی عمر پر نہ جائیے ان کے عزم و حوصلے پر نظر جمائیے۔تن تنہا اپنی جیپ کے سنگ ملکوں ملکوں پھرنے والے اس مسافر نے ہزاروں میلوں کی خاک چھانی۔

انگلینڈ سے جرمنی پھر بلجیئم، فرانس، ترکی اور ایران سے ہوتے ناظم خان پاکستان پہنچے ۔

کہتے ہیں بس مواقع پیدا کیے جائیں تو اس ملک میں سیاحوں کا سیلاب امڈ آئےاور زرمبادلہ کی ریل پیل ہوجائے۔

ناظم خان کا کہنا ہے کہ میرے یہاں پہنچنے کے بعد بہت سے پیغام آئے لوگ بذریعہ سڑک پاکستان آنا چاہتے ہیں ملک کی سیاحت میں انوسٹ کرنا چاہتے ہیں۔

صرف 6 گھنٹے آرام اور 18 گھنٹے ڈرائیونگ معمول بنانے والےناظم خان کہتے ہیں ملک میں عدم تحفظ کا تو کہیں احساس تک نہیں ہوا،میں یہاں اپنی آزادی سے گاڑی چلا سکتا ہوں گھوم سکتا ہوں اور بالکل محفوظ ہوں۔

ناظم خان نئے پاکستان سے بھی بہت متاثر ہیں تبھی تو کہتے ہیں کہ وزیر اعظم عمران خان کی سیاحتی پالیسی کا فروغ بہت ضروری ہے۔