Friday, January 28, 2022  | 24 Jamadilakhir, 1443

غسال کے کام کے نشیب و فراز

SAMAA | - Posted: Dec 4, 2021 | Last Updated: 2 months ago
Posted: Dec 4, 2021 | Last Updated: 2 months ago

کچھ لوگوں کا روزگار ایسے کام سے وابستہ ہوتا ہے جس کی وجہ سے کوئی بھی بخوشی ان کے پاس نہیں جاتا۔ سرد خانوں میں میتیں نہلانے والے غسال کا کام بھی ایسا ہی ہوتاہے۔کراچی کے ایک سردخانے میں غسال محمد صدیق 25 سال سے میت کو نہلانے کا کام کررہا ہے۔ محمد صدیق نے بتایا کہ کرونا کی لہر میں  روز100 سے 150 میتیں آتی تھیں۔ ان میتوں سے لواحقین بھی دوررہتے تھے تاہم غسال اپنا کام کرتے تھے۔انھوں نے بتایا کہ بچوں کی میتیں نہلاتے ہوئے آنکھیں بھر آتی ہیں۔ ایک واقعہ سناتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ جب ایک ملنگ کوغسل دیا تواس نے خواب میں عمرہ کرایا جب کہ ایک  بار جب غسل دینے کےلیے میت  پرپانی ڈالا تو مردہ اٹھ کر کھڑا ہوگیا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube