Saturday, January 22, 2022  | 18 Jamadilakhir, 1443

ایئرکوالٹی انڈیکس کیلئے مختلف رنگوں کا استعمال

SAMAA | - Posted: Nov 24, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Nov 24, 2021 | Last Updated: 2 months ago

لاہور میں اسموگ کے ڈیرے برقرار ہیں۔غیر ملکی ادارے اسموگ سے ہونے والے  نقصان کو رنگوں میں بیان کرتے ہیں۔

 ائیرکوالٹی انڈیکس اگر صفر سے پچاس کے درمیان ہو تو خطرے کی بات نہیں ہوتی۔اس لیےاس کو سبز رنگ سے مشابہت دی گئی ہے۔51 سے 100 تک ائیرکوالٹی انڈیکس خطرے کے نشان کے پاس ہوتی ہے اور انڈيکس  سو سے نیچے ہونے کو انسانی صحت کیلئے نامناسب کہا جاتا ہے۔

ایک سو ایک سے ایک سو پچاس ائیر کوالٹی انڈیکس کی اورنج رنگ سے نشان دہی کی جاتی ہے۔ اس کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ مضر امراض اور بچوں کی صحت پر اس کے اثرات پڑسکتے ہیں۔

  ایک سو اکیاون سے دو سو انڈیکس کی سرخ رنگ سے نشان دہی کی جاتی ہے۔ اس دوران آنکھوں میں جلن بڑھنےلگتی ہے اور سانس کی بیماریاں بڑھ جاتی ہیں اور حد نگاہ بھی متاثر ہوتی ہے۔

 دوسےایک سے تین سے ائیرکوالٹی انڈیکس کوجامنی رنگ سے اجاگر کیا جاتا ہے اور یہ ہر عمر کے شخص کے لیے خطرے کا باعث ہوتی ہے۔

اگرائیرکوالٹی انڈیکس تین سو سے متجاوز کرجائے تو اس کو میرون کلر سے بتایا جاتا ہے اور یہ انسانی جانوں کے لیے انتہائی خطرناک کہی جاتی ہے۔

لاہور میں یہ فضائی آلودگی بعض علاقوں میں خطرناک ترین حد سے بھی اوپر جاچکی ہے جس سے شہریوں کی جانوں اور صحت کو سنگین خطرات لاحق ہیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube