مہنگی بجلی کا سستا توڑ

November 3, 2018

اسلام آباد میں غریب ڈھابے والے نے مہنگی بجلی کے جھٹکوں کا سستا توڑ نکال لیا۔ بجلی جتنی مرضی مہنگی ہو جائے اسے کوئی پرواہ نہیں۔ ہوٹل مالک لوڈشیڈنگ کی فکروں سے بھی مکمل آزاد ہوگیا۔

ڈھابے والا سرکاری تبدیلی پربازی لے گیا۔ اسلام آباد کا ستا ڈھابہ اب رات بھرروشن رہتا ہے کیونکہ مالک نےمہنگی بجلی پر انحصار کے بجائے سولر پینل لگوالیا ہے۔

اب اس ڈھابے میں نہ حکومتی بجلی آتی ہے نہ مہنگے بل بلکہ صرف ایک پینل سے سارے بلب اورایک پنکھا چلتے ہیں۔ اس نے بتایا کہ سرکاری بجلی سے ایک ماہ میں 4سے 5 ہزار کا بل آتا تھا،اس لئے سولر پینل پر ایک بار ہی خرچہ کیا ہے۔

اس کو اب یونٹ بڑھنے یا لوڈ شیڈنگ کا بھی کوئی خطرہ نہیں ہے۔ اس نے دیگر لوگوں کو مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ میرے گاؤں میں بجلی نہیں ہے، وہاں بھی یہ سولر پینل لگے ہیں اور میں سب کو مشورہ بھی یہی دونگا کہ سولر لگائیں کیوں کہ غریب آدمی مہنگی بجلی نہیں برداشت کر سکتا۔ڈھابے والا سارا دن سُورج کی تپش کا فائدہ اٹھاتا ہے اوررات کو مزے سے ڈھابے کو چمکاتا ہے۔

دنیا کے بہت سے ممالک کائینیٹک، بائیو اور ونڈ انرجی بھی استعمال کررہے ہیں، اگرحکومتِ پاکستان بھی متبادل ذرائع پر اںحصار کرے تو توانائی کے بحران پر قابو پایا جا سکتا ہے۔