ففتھ جنریشن سےتعلق رکھنےوالادنیاکاسپراسٹیلتھ طیارہ

August 27, 2018

وکٹوریہ : آسٹریلیا میں جاری ایئرشو میں شرکت کرنے کیلئے طیاروں کی 5ویں جنریشن سے تعلق رکھنے والا ایف 35 اسٹیلتھ طیارہ بھی جلوے دکھانے پہنچ گیا ہے۔ خبر رساں ایجنسی رائٹرز کی جانب سے طیارے کی دلکش تصاویر جاری کی گئی ہیں۔

آسٹریلیا کے شہر وکٹوریہ میں ایئر شو پورے آب و تاب کے ساتھ جاری ہے، 28 فروری سے شروع ہونے والا یہ ائیر شو 3 مارچ تک جاری رہے گا۔ ایئرشو میں جہاں دنیا بھر سے مختلف جدید ٹیکنالوجی کے حامل طیاروں نے بڑھ چڑھ کر شرکت کی وہی ہواؤں میں اپنی دھک بیٹھتا دنیا کا مہنگا اور جدید ترین فائٹر ایف 35 بھی موجود تھا۔

airshow

اپنی خوبصورت وضع کے ساتھ لوک ہیڈ مارٹن کے دیگر طیارے ایف 17، ایف16، سوئڈیش گریپن، فرانسیسی رافیل اور دیگر لڑاکا طیارے لوگوں کی نگاہوں کا مرکز تھے، وہی ایف 35 اسٹیلتھ طیارے نے ہر کسی کا دل موہ لیا۔

Visitors inspect a Lockheed Martin Corp F-35 stealth fighter jet on display at the Avalon Airshow in Victoria, Australia, March 3, 2017. AAP/Tracey Nearmy/via REUTERS ATTENTION EDITORS - THIS IMAGE WAS PROVIDED BY A THIRD PARTY. EDITORIAL USE ONLY. NO RESALES. NO ARCHIVE. AUSTRALIA OUT. NEW ZEALAND OUT.

ایئرشو میں موجود ہر شخص اس طیارے کی کاک پٹ میں بیٹھے کو بے تاب نظر آیا، صرف شو میں اسٹینڈ کے اندر کھڑے اس دلکش لڑاکا طیارے کے جلوے ہی کافی نہیں تھے، یہ طیارہ جب جب کرتب دکھانے ہوا میں بلند ہوا، دیکھنے والوں اور اس کی اسپیڈ پر لوگوں نے دلوں کو تھام لیا۔

A Lockheed Martin Corp F-35 stealth fighter jet lands at the Avalon Airshow in Victoria, Australia, March 3, 2017. Australian Defence Force/Handout via REUTERS ATTENTION EDITORS - THIS IMAGE WAS PROVIDED BY A THIRD PARTY. EDITORIAL USE ONLY. NO RESALES. NO ARCHIVE. THIS PICTURE WAS PROCESSED BY REUTERS TO ENHANCE QUALITY. AN UNPOCESSED VERSION HAS BEEN PROVIDED SEPERATELY.

ایف 35 طیارے امریکا سے اڑان بھر کر آسٹریلیا پہنچے، اس دیو قدامت جوائنٹ اسٹرئیک فائٹر کو پہلی بار آسٹریلوی ایئرشو میں پیش کیا گیا۔ یہ طیارہ فضا سے زمین اور فضا سے فضا تک مار کرنے والے میزائلوں سے بھی لیس ہے۔

26918-7003527

اسٹیلتھ ٹیکنالوجی:

اسٹیلتھ ٹیکنالوجی ایک ایسی ٹیکنالوجی ہے، جس کے ذریعے جنگی ہیلی کاپٹر اور طیارے دشمن کے ریڈاروں پر نمودار ہونے سے محفوظ رہتے ہیں اور بغیر ریڈار میں نمودار ہوئے دشمن کے سر پر جا پہنچتے ہیں۔

اسٹیلتھ ٹیک کے حامی طیاروں کو ایک خاص طریقے سے بنایا جاتا ہے کہ وہ ریڈار سے نکلنے والی شعاعوں کو اپنی باڈی کی مدد سے روکتے ہیں اور اسی وجہ سے ریڈار پر نمودار نہیں ہو پاتے، اس وجہ سے اس فائٹر طیارے کی تیاری میں ایسی دھات اور مٹیریل استعمال ہوتا ہے، جو ریڈار سے نکلنے والے سگنلز کو روک سکے۔

F-35B_night

اس طیارے کی ایک اور خاص بات کہ اس کے اندر سے انفراریڈ شعاعیں بھی خارج نہیں ہوتی ہیں۔ یہ طیارے دیگر فائٹر طیاروں کی طرح سپر سوینک نہیں ہوتے ، یہ ہی وجہ ہے کہ طیارے خاموشی سے اپنی کارروائی کرنے کا ہنر جانتے ہیں، یہ طیارے زمین سے قریب رہ کر پرواز کرتے ہیں۔

F-111-Fuel-Dump,-Avalon,-VIC-23.03.2007

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ معشیت اور غربت کے بوجھ تلے دبے بھارت نے بھی دنیا کی سپر پاؤرز کو دیکھتے ہوئے مقامی طور پر ایک اسٹیلتھ طیارہ "ہل ایم کا" تیار کررہا ہے، روایتی حریف کی چال بازیوں کو دیکھتے ہوئے پاکستان بھی اپنی فضائی برتری قائم رکھنے اور مضبوط فضائی دفاع کیلئے ففتھ جنریشن کے جنگی طیارے خریدنے کا سوچ رہا ہے۔ سماء