Wednesday, December 1, 2021  | 25 Rabiulakhir, 1443

سب سے زیادہ  انٹرنیشنل گولز کا ریکارڈ رونالڈو کا منتظر

SAMAA | - Posted: Aug 31, 2021 | Last Updated: 3 months ago
SAMAA |
Posted: Aug 31, 2021 | Last Updated: 3 months ago

پرتگال کے کپتان اور اسٹار فٹبالر 36  سالہ کرسٹیانو رونالڈوکو سر ایلکس فرگوسن  نے  مانچسٹر سٹی سے  ہائی جیک کرلیا اور انہیں دوبارہ مانچسٹر یونائٹیڈ میں شامل کروانے میں مرکزی کردار ادا کیا۔

ایلکس فرگوسن کو مانچسٹر یونائٹیڈ چھوڑے آٹھ سال سے زائد عرصہ گزر چکا ہے لیکن مانچسٹر یونائٹیڈ میں اب بھی ان کا زبردست اثر و رسوخ ہے ۔ رونالڈو کے مانچسٹر سٹی جوائن کرنے کی  باتیں زوروں پر تھیں  اور رونالڈو کا مانچسٹر سٹی کے پیپ گارڈیولا سے ٹرانسفر کیلے اصولی اتفاق ہو گیا تھا لیکن اس دوران سر ایلکس فرگوسن نے رونالڈو سے رابطہ کیا اور انہیں اپنے پرانے کلب مانچسٹر یونائٹیڈ میں دوبارہ شمولیت کیلئے آمادہ کر لیا۔

حالانکہ رونالڈو حریف کلب مانچسٹر سٹی کے ساتھ معاہدہ کرنے  جا رہے تھے مگر فرگوسن کے  فون پر رونالڈو  نے اس فیصلے کو پس پشت ڈال دیا۔

کرسٹیانو رونالڈو  12 سال کی جدائی کے بعد پھر مانچسٹر یونائٹیڈ میں واپس پہنچ گئے ۔ انگلش فٹبال سیزن شروع ہو چکا ہے لیکن انگلش تماشائی فوری طور پر رونالڈو کو ایکشن میں نہیں دیکھ سکیں گے کیونکہ مانچسٹر یونائٹیڈ کے ساتھ نئے سفر کا آغاز کرنے سے قبل  وہ فیفا ورلڈ کپ 2022 کے یورپی کوالیفائنگ رائونڈ میں اپنے ملک پرتگال کی نمائندگی کریں گے۔

سب سے زیادہ انٹرنیشنل گول کرنے والے کھلاڑی کا اعزاز بھی رونالڈو کا منتظر ہے  انہوں نے ایران کے علی داعی کا 109 انٹر نیشنل گول  کا عالمی ریکارڈ یورو کپ 2020  میں برابر کر دیا تھا ۔اگر رونالڈو ان میچوں میں گول کرنے میں کامیاب ہو جاتے ہیں تو رونالڈو مینز فٹبال میں سب سے زیادہ انٹرنیشنل گول کرنے والے کھلاڑی بن جائیں گے۔

رونالڈو بدھ یکم ستمبر کو جمہوریہ آئرلینڈ کے خلاف ورلڈ کپ کوالیفائنگ میچ کھیلیں گے اگر رونالڈو میچ میں کسی فائول پر بک ہو گئے تو پھر اگلا میچ نہیں کھیل پائیں گے اس کے بعد پرتگال سات  ستمبر  کو باکو میں آزربائیجان کے خلاف میچ کھیلے گا۔

کرسٹیانو رونالڈو ایلکس فرگوسن کا والد کی طرح احترام کرتے ہیں اور فرگوسن کو  فٹبال میں اپنا باپ قرار دیتے ہیں دونوں ایک دوسرے کیلئے باپ بیٹے جیسے جذبات رکھتے ہیں۔

فرگوسن رونالڈو کے سابق باس ہیں جنہوں نے رونالڈو کو عالمی شہرت یافتہ فٹبالر بنانے میں مرکزی کردار ادا کیا تھا  رونالڈو کا کہنا ہے کہ وہ  میری اسپورٹس لائف میں انتہائی اہم ہیں۔ انہوں نے میری جس انداز میں تربیت کی اور مجھے جو کچھ سکھایا اس کی بدولت میں سپر اسٹار بنا ہوں۔ میرے دل میں ان کیلئے ایک خاص مقام ہے میں ان سے مسلسل رابطے میں رہتا ہوں اوراب بھی وہ مشکل مرحلے میں رہنمائی کرتے ہیں۔

رونالڈو نے اطالوی فٹبال کلب یوونٹس میں  تین سیزن میں 134  میچوں میں نمائندگی کرتے ہوئے  101  گول کیے اور دو سیری اے ٹرافی  جیتیں ۔  یوونٹس کے مینیجر میکس ایلگری نے  بتایا کہ  مجھے رونالڈو نے کہا تھا کہ وہ اطالوی کلب سے مزید نہیں کھیلنا چاہتا اس لیے میں نے رونالڈو کو امپولی کے خلاف میچ کیلئے بھی نہیں بلایا تھا۔

رونالڈو کا  کہنا ہے کہ میں اطالوی کلب کو اپنی زندگی کے آخری دن تک یاد رکھوں گا یہاں میں نے بہترین وقت گزارا ہے  رونالڈو کلب کے نوجوان کھلاڑیوں کیلئے رول ماڈل ہے۔ انہوں نے تمام کھلاڑیوں سے الوداعی ملاقاتیں کیں۔  رونالڈو کا کہنا ہے  تبدیلیاں زندگی کا حصہ ہیں۔

یہ تبدیلیاں انسان کو متحرک رکھتی  اور آگے بڑھاتی ہیں اور کارکردگی میں بہتری لاتی ہیں حالانکہ یوونٹس کے ساتھ رونالڈو کے کنٹریکٹ کا ابھی ایک سال باقی تھا ۔  رونالڈو نے مانچسٹر یونائٹیڈ کے ساتھ ایک اور ریال میڈرڈ کے ساتھ چار چیمپئنز لیگ ٹائٹل جیتے لیکن وہ یوونٹس کو ایک بار بھی چیمپئنز لیگ نہیں جتوا پائے ۔ وہ دو سیزن میں اطالوی فٹبال لیگ سیری اے میں ٹاپ اسکورر رہے۔

جس دن رونالڈو کی ڈیل کا اعلان ہوا تو اسی روز مانچسٹر سٹی نے ولورہمپٹن کو بڑے مارجن سے شکست دی تھی جس پر اس کے مینجیر گورڈیولا نے کہا کہ ہمیں رونالڈو یا کسی اور کی ضرورت نہیں ۔ مانچسٹر سٹی کلب انگلش فٹبال  کپتان کین سے بھی معاہدہ کرنے کا خواہاں تھا لیکن کین نے اس سال ٹوٹنہیم میں ہی رہنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اس سے قبل2018 میں مانچسٹر سٹی فٹبال کلب الیکسی سانچیز سے معاہدہ کرنے کے قریب تھا تو مانچسٹر یونائٹیڈ  نے اسی طرح سانچیزکو بھی اچک لیا تھا۔

رونالڈ 2003 کے  دبلے پتلے لڑکے سے اب ایک سخت جاں کھلاڑی بن چکے ہیں  اگلے سال ان کی عمر 37 سال ہو جائے گی   لیکن اس عمر میں بھی وہ گول مشین ہیں اور ٹیم کی کامیابی میں مرکزی کردار ادا کرتے ہیں۔

رونالڈو کو بھی اپنی بڑھتی عمر کا احساس ہے اسی لیے انہوں نے اپنے کیریئر کے آخری چند سال اچھے فٹبال کلب سے وابستہ کرنے کا فیصلہ کیا کیونکہ ہسپانوہی اور اطالوی کلبس کو انگلش کلبوں کے مقابلے میں زیادہ مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہاہے بارسلونا جیسا کلب جس کے پاس دنیا کے اسٹار فٹبالرز کی کھیپ ہوتی تھی اب ان سے جان چھڑوا رہا ہے کیونکہ اس کو مالی  دبائو کا سامنا ہے۔

کرسٹیانو رونالڈو نے پہلی  بار 2003 میں جہاں دیدہ ایلکس فرگوسن کے دل میں اس وقت جگہ بنائی جب مانچسٹر یونائٹیڈ کی ٹیم لزبن میں سپورٹنگ کلب ڈی پرتگال کے خلاف دوستانہ میچ کھیل رہی تھی اور اس میچ میں  18 سالہ فٹبالر کا شاندار کھیل سب کی توجہ کا مرکز تھا۔

اس نوجوان کے کھیل نے مانچسٹر یونائیٹڈ کی مضبوط ٹیم کے خلاف سپورٹنگ کو 3-1  سے کامیابی دلوائی تھی۔ میچ کے بعد مانچسٹر یونائٹیڈ کے کھلاڑیوں نے سر ایلکس فرگوسن کو مشورہ دیا کہ اس نوجوان کھلاڑی سے معاہدہ کر کے اسے اپنے ساتھ ہی جہاز میں مانچسٹر لے جانا چاہیے۔

نوجوان فٹبالر رونالڈو ایلکس فرگوسن کو بھی اپنی صلاحیتوں اور شاندار کارکردگی سے  گرویدہ بنا چکا تھا ۔ انہوں نے اس ہونہار فٹبالزر سے بات کی اور اس کے کھیل کی تعریف کی ۔  وہ  فرگوسن کے دل میں گھر کر چکا تھا جو اسے مانچسٹر یونائٹیڈ کا حصہ بنانے کیلئے بے چین ہو گئے تھے۔  انہوں نے کلب کی انتظامیہ کو رونالڈ کی خدمات حاصل کرنے کیلئے معاہدے کی ہدایت کی  فرگوسن نے اس نوجوان کیلئے  15 ملین یورو کی بڈ دی جو اس سے معاہدے کیلئے فیس کی مد میں خاصی بڑی رقم تھی جس نے رونالڈو کو اس وقت انگلش فٹبال تاریخ کا مہنگا ترین ٹین ایجر بنا دیا تھا  رونالڈو مانچسٹر یونائٹیڈ میں شمولیت اختیار کرنے والا پہلا پرتگالی فٹبالر بن گیا۔

مانچسٹر یونائٹیڈ میں دی جانے والی ٹریننگ نے کرسٹیانو رونالڈو کے کھیل میں مزید نکھار پیدا کیا ۔ کلب کے دیگر کھلاڑیوں نے رونالڈو کی بھرپور مدد کی اور اسے اجنبیت کا کوئی احساس نہیں ہونے دیا کیونکہ وہ پہلی مرتبہ کسی غیر ملکی فٹبال کلب کا حصہ بنے تھے  جہاں سے رونالڈو کی عالمگیر شہرت کا سفر شروع ہوا۔

مانچسٹر یونائٹیڈ  میں  کرسٹیانو رونالڈو کو 7 نمبر کی شرٹ دی گئی جو اس کلب میں کئی لیجنڈ کھلاڑیوں نے پہنی تھی جن میں جارج بیسٹ ‘ ایرک کینٹونا اور ڈیوڈ بیکہم شامل ہیں ۔  کلب میں شمولیت کے چار دن بعد ہی رونالڈو کا نام بولٹن کے خلاف میچ کیلئے اعلان کردہ ٹیم میں موجود تھا۔

رونالڈو نے اولڈ ٹریفورڈ میں مانچسٹر یونائیٹڈ کی جانب سے اپنا ڈیبیو میچ بولٹن کے خلاف کھیلا تھا ۔ 35 ویں منٹ میں ریان گگس نے فری کک پرگول کر کے ٹیم کو برتری دلوائی تھی رونالڈو بینچ پر بیٹھے تھے ۔پہلے ہاف میں کھیل سست رفتاری سے ہوا تھا۔

دوسرے ہاف میں کھیل کے  61 ویں منٹ میں فرگوسن نے اس پرتگالی نوجوان کو نکی بٹ کی جگہ متبادل کھلاڑی کی حیثیت سے میدان میں اتارا ۔ اس وقت اسٹیڈیم میں موجود 60 ہزار سے زائد افراد میں سے غالب اکثریت نے اس نوجوان کا نام بھی نہیں سنا تھا لیکن چند منٹوں میں اس کی برق رفتاری شاندار ڈربلنگ ڈاجنگ اور پاسنگ نے کھیل میں ایک نئی روح پھونک دی اور وہ تماشائیوں کا مرکز نگاہ بن گیا جب بھی گیند اس کے پائوں میں آتی تو اسٹیڈیم میں شور برپا ہو جاتا تھا ۔   نصف گھنٹے میں انہوں نے کرشماتی کھیل سے لوگوں کے دل موہ لیے ۔

اس ٹیم میں پال سکولز‘  ریو فرڈینیڈ‘  روئے کین ‘ ریان گگس ‘  رڈ وان نسٹل روئے ‘سولسکجیرشامل تھے ۔ سولسکجیر اب مانچسٹر یونائٹیڈ کے مینیجر ہیں اور وہ رونالڈو کے ڈیبیو میچ میں ان کے ساتھ  چھ منٹ تک  کھیلے تھے ۔ سولسکجیر کو 67 منٹ میں تبدیل کیا گیا تھا ۔

 رونالڈو سفید چمکیلے بوٹ پہن کرگرائونڈ میں اترے تھے اور تین چار ٹچ میں نروس رہے پھر جلد ہی ردھم میں آگئے ۔ انہوں نے شاندار کارکردگی کے ذریعے پنالٹی حاصل کی جس پر نسٹل روئے گول نہ کر سکے پھر انہوں نے نسٹل روئے کیلئے گول کا سنہری موقع فراہم کیا جس میں وہ گیند کو جال میں نہ پہنچا سکے۔ گگس کے دوسرے گول میں بھی رونالڈو نے اہم کردار کیا تھا۔

گگس نے دو گول کیے سکولز کی کارکردگی شاندار رہی لیکن میچ کے بعد ہر ایک صرف رونالڈو کی بات کررہا تھا ۔ فرگوسن نئی اور نوجوان کھلاڑیوں کوزیادہ دبائو میں نہیں آنے دیتے تھے میچ کے بعد ان کا کہنا تھا کہ یونائٹیڈ کو نیا ہیرو مل گیا ۔ اس میچ کے بعد ہی رونالڈو کو پرتگال کی قومی ٹیم کیلئے طلب کر لیا گیا تھا ۔ رونالڈو نے مانچسٹر یونائٹیڈ کیلئے اپنا پہلا گول پورٹسمتھ کے خلاف میچ میں  کیا تھا۔

مانچسٹر  یونائٹیڈ  نے جب 2003 میں رونالڈو سے معاہدہ کیا تھا تو اسی وقت چیلسی کلب نے ویسٹ ہام سے 21 سالہ فٹبالر جو کول کو 7 ملیبن پونڈ کا معاہدہ کیا تھا۔  2003 میں بھی رونالڈو آرسنل کے ساتھ معاہدہ کرنے والا تھا اور اس نے آرسینی ویگنر سے نارتھ لندن میں ملاقات کی تھی۔

اس کاانکشاف  بعد میں ایک انٹرویو میں پرتگالی فٹبالر نے کیا اور ویگنر سے معذرت بھی کی۔ آرسنل نے اس کیلئے 4.5ملین پونڈ کی بڈ دی تھی۔  ویگنر کاکہنا تھا کہ اگر رونالڈ کا آرسنل سے معاہدہ ہو جاتا تو وہ اور تھیری ہنری کلب میں نئی روح پھونک دیتے۔

جب 2003 میں رونالڈو اولڈ ٹریفورڈ آئے تھے تو ان کو کوئی نہیں جانتا تھا لیکن چھ سال بعد وہاں سے گئے تو ان کے لاکھوں مداح تھے جو افسردہ تھے۔ انہوں نے مانچسٹر یونائٹیڈ کی نمائندگی کرتے ہوئے تین پریمیئر لیگ ٹائٹل ‘دو لیگ کپ ‘ایک چیمیئنز لیگ ٹرافی‘ایف اے کپ ‘ کلب ورلڈ کپ  اور ایک بیلن ڈی اور ایوراڈ جیتا تھا۔ مانچسٹر یونائٹیڈ کے ساتھ اپنے پہلے دورمیں 292 میچوں میں 118 گول کیے تھے۔  2008  میں انہوں نے مانچسٹر  یونائٹیڈ کی جانب سے 49 میچوں میں 42 گول کیے جن میں چیمپئنزلیگ فائنل میں چیلسی کے خلاف ایک گول بھی شامل تھا۔ اسی سال پہلی بار بیلن ڈی اور کا اعزاز ان کے حصے میں آیا تھا۔

کرسٹیانو رونالڈو کی بچپن سے خواہش تھی کہ وہ سفید شرٹ پہن کر ریال میڈرڈ کی نمائندگی کریں  انہوں  نے 2008 میں اپنی اس خواہش کا اظہار سر فرگوسن سے بھی کیا تو انہوں نے رونالڈو کو مزید ایک سال کیلئے مانچسٹر  کے ساتھ کھیلنے اور اگلے سال ریال میڈرڈ جانے کا کہا جس کو رونالڈو نے مان لیا تھا۔

وہ  ریکارڈ  ڈیل پر ہسپانوی کلب ریال میڈرڈ چلے گئے تھے جہاں وہ شہرت کی بلندیوں پر پہنچے اور ریال میڈرڈ کی جانب سے کلب کیلئے سب سے زیادہ گول کرنے کا نیا ریکارڈ اپنے نام کیا۔ رونالڈو نے آٹھ سال کے دوران ریال میڈرڈ کی جانب سے 451 گول کیے جبکہ راول نے 438 گول کیے تھے۔ رونالڈو نے چار چیمپئنز لیگ سمیت 15  ٹرافیاں جیتیں۔

رونالڈو نے مانچسٹر یونائیٹڈ چھوڑنے کے بعد اپنا ناطہ مکمل طور پر نہیں توڑا تھا بلکہ ایلکس فرگوسن اور ان کی تربیت اور رہنمائی کی وجہ سے اولڈ ٹریفورڈ سے محبت رونالڈو کے دل میں رچ بس گئی تھی ۔ رونالڈو نے متعدد بار اس خواہش کا اظہار کیا تھا کہ وہ ایک بار پھر مانچسٹر یونائیٹڈ کی نمائندگی کرے گا اور وہ واقعی دوبارہ مانچسٹر یونائٹیڈ پہنچ گئے  ۔

 کرسٹیانو رونالڈو کے مانچسٹر یونائٹیڈ چھوڑنے کے بعد 12 سال کے دوران انگلش فٹبال لیگ کا لینڈ اسکیپ تبدیل ہو چکا ہے ۔ جب وہ یہاں سے گئے تھے تو اس وقت چیلسی اور مانچسٹر یونائٹیڈ انگلش لیگ کی ٹاپ ٹیم تھیں لیکن اب صورت حال بہت بدل گئی ہے۔

ایک دہائی میں مانچسٹر یونائٹیڈ  کا حریف کلب مانچسٹر سٹی جو رونالڈو کی خدمات حاصل کرنا چاہتا تھا گزشتہ دہائی میں انگلش لیگ میں بالادست رہا ہے جس نے 2012 کے بعد پانچ ٹائٹل جیتے ہیں ۔ رونالڈو کو اب مانچسٹر یونائٹیڈ میں 9 سالہ میسن گرین وڈ ‘ایڈنسن  کیوانی ‘ سانچو ‘ مارکوس ریشفورڈ  اور پال پوگبا جیسے فارورڈ کی مدد بھی حاصل ہو گی۔   مانچسٹر یونائٹیڈ کلب کو امید ہے کہ وہ رونالڈو کی شمولیت سے انگلش فٹبال ٹائٹل جیتنے کا مضبوط امیدوار ہو گا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube