شاہینوں کی افغانستان سے شکست پر فواد چوہدری کو باب وولمر کیوں یاد آگئے؟

May 25, 2019

ورلڈ کپ 2019 کے وارم اپ میچ میں افغانستان نے پاکستان کو سنسنی خیز مقابلے کے بعد 3 وکٹوں سے شکست دی تو شائقین کرکٹ کو شدید مایوسی ہوئی کیونکہ پاکستان کرکٹ ٹیم کی تسلسل کے ساتھ یہ گیارہویں شکست ہے۔

افغان ٹیم نے 263 رنز کا ہدف 50ویں اوور میں 7 وکٹوں پر پورا کرلیا، شکست پر حسب معمول سوشل میڈیا پر تجزیوں و تبصروں کا طوفان گرم ہوا جس میں شائقین نے خوب دل کی بھڑاس نکالی، ایسے میں وفاقی وزیر برائے سائنس و ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے بھی اپنا حصہ ڈالا۔

فواد چوہدری نے شاہینوں کی پے در پے شکست پر پاکستان کرکٹ ٹیم کے موجودہ کوچ مکی آرتھر کے مستقبل کو مرحوم کوچ باب وولمر سے جوڑ دیا جس پر ٹوئٹر صارفین نے ان کی حس مزاح سے لطف اندوز ہوتے ہوئے دلچسپ تبصرے کیے۔

اپنی ٹویٹ میں انہوں نے لکھا کہ ’’مجھے تو مکی آرتھر کی فکر ہورہی ہے، ابھی باب ووالمر کا غم نہیں بھولے۔

جواب میں ٹوئٹر صارفین نے بھی دل کھول کر حصہ ڈالا، کچھ تو کرکٹ تک ہی محدود رہے لیکن کچھ کرکٹ میں بھی سیاست لے آئے۔

یاد رہے کہ کھلاڑیوں کے ساتھ نے حد چھے تعلقات رکھنے والے باب وولمر واحد غیر ملکی کوچ تھے جن کو پی سی بی نے فارغ نہیں کیا مگر وہ زندگی کی بازی ہار گئے۔ ان کی آمد 2004 میں جاوید میانداد کی رخصتی کے بعد ہوئی تھی۔

ان کی سربراہی میں ٹیم نے بھارت، انگلینڈ اور سری لنکا کیخلاف انتہائی شاندار کامیابیاں سمیٹیں،تاہم یہ کامیابیوں کا سلسلہ زیادہ دیر تک نہ چل سکا اور سال 2007کے ورلڈ کپ میں آئرلینڈ سے شکست اور ورلڈکپ کے پہلے راؤنڈ سے ہی باہر ہونا دل پر لے لیا۔ میچ کے ٹھیک دوسرے روز 18 مارچ 2007 کو وہ جمیکا کے ہوٹل میں مردہ پائے گئے۔

کرکٹ کوچنگ میں لیپ ٹاپ کا استعمال شروع کرنے والوں میں سرفہرست رہےباب وولمر کی سربراہی میں قومی ٹیم کے انگلینڈ اور بھارت کے خلاف ہوم سیریز میں نتائج بہتر رہے اوربھارت کے دورے میں بھی ٹیم کی کارکردگی عمدہ رہی۔ سال2006ء کے انگلینڈ کے دورے میں پاکستانی باؤلرز پر لگنے والے بال ٹمپرنگ کے الزامات کا بھی انہوں نے خوبصورتی سے دفاع کیا۔