ہوم   > بلاگز

راکھ کی چنگاریاں ایشز کرکٹ سیریز

SAMAA | - Posted: Nov 30, 2017 | Last Updated: 2 years ago
SAMAA |
Posted: Nov 30, 2017 | Last Updated: 2 years ago

تحریر:راشدحسین

جلا ہے جسم جہاں، دل بھی جل گیا ہوگا
کریدتے ہو جو اب راکھ جستجو کیا ہے

غالب نے جب یہ شعر کہا تھا تو کسی نے اسے محبوب کے فراق میں دل کے زخموں کا تذکرہ تک ہی محدود جانا۔ لیکن راکھ کوئی ایسی بھی فضول شے نہیں دنیائے کرکٹ کی سب سے قدیم ٹیسٹ سیریز(ایشز) جو ایک عرصے تک کرکٹ کا غیر اعلانیہ ورلڈکپ بھی بنی رہی، حسینہ اور راکھ دونوں سے تعلق رکھتی ہے۔ قصہ کچھ یوں ہے کہ انگلینڈ جسے اپنی کرکٹ پر بہت ناز تھا بلکہ کرکٹ کے جملہ حقوق اپنے پاس رکھے ہوئے تھے کو جمعہ جمعہ آٹھ دن کی آسٹریلین ٹیم نے ہوم گراؤنڈ پرشکست دے دی۔تو اک حسینہ نے اوول شکست کے واقعے کی برطانوی اخبار میں چھپنے والی خبریں جمع کیں اور اسے قدیم انداز میں جلائی گئی لاشوں کی باقیات محفوظ رکھنے والے برتن میں رکھ کر آسٹریلین کپتان کو پیش کردی جو وہ اپنے ساتھ لے گئے۔

انگلش اخبار میں اس کا تعزیتی اشتہار چھپا تو انگلش شائقین کے تن بدن میں آگ لگ گئی۔کرکٹ کے رستم بننے والے انگلش کرکٹرز نے اسے سپر پاور آف کرکٹ کی بے عزتی جانا اور راکھ کی واپسی کی جنگ شروع ہوگئی۔ جسے دنیا کرکٹ ایشز سیریز کے نام سے جانتی ہے اور یہی ایشز دنیا بھر میں کرکٹ کو مقبول بنانے کا سبب بھی بنی۔انتیس اگست اٹھارہ سو بیاسی سے دنیائے کرکٹ کی دو مضبوط ٹیمیں آسٹریلیا اور انگلینڈ اس راکھ کو کرید رہے ہیں اور اس سے کرکٹ کو ہر بار نئی اور بھڑکتی ہوئی چنگاریاں مل رہی ہیں۔گو وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ پاک بھارت کرکٹ دشمنی نے اس سیریز سے زیادہ پذیرائی حاصل کرلی لیکن ایشز کی اہمیت اب بھی برقرار ہے۔انگلینڈ اور آسٹریلیا کی ہر ٹیسٹ سیریز کو انیس سو چار سے باقاعدہ ایشز سیریز قرار دیا جاتا ہےاور ٹی ٹوئنٹی، ٹی ٹین، ون ڈے سمیت ہر رنگ دار کرکٹ دونوں ٹیموں کی سفید یونیفارم کی سیریز کے سامنے پھیکی پڑجاتی ہے۔

کرکٹ کے جنٹلمین گیم میں رقابت کا پہلا بیج بونے والی سیریزنے کئی کہانیوں کو جنم دیا۔سر ڈان بریڈ مین کی اننگز ہوں یا باڈی لائن کی سفاک بالنگ ۔ شکست سے بچنے کے لئے وکٹ کو تیل کا نذرانہ پیش کرنا ہویا پھر کھلاڑیوں کے ایک دوسرے پر حملے، ڈینس للی کی وجہ سے ایلومینیم سمیت دیگر دھاتوں کے بیٹ ہمیشہ کے لئے کرکٹ سے باہر بھی ایشز میچ میں ایلومینیم کے بلے سے نکلنے والی موسیقی کی وجہ سے ہوئے۔اچھے خاصے ذمہ دار آسٹریلین کپتان رکی پونٹنگ کے کیرئیر پر پچھتر فیصد میچ فیس کے جرمانے کا داغ بھی اسی راکھ کے نام کی سیریز نے لگایا۔کئی کپتانوں کی کپتانی کو ایشز نے کھایا۔ہیرو پل میں زیرو بنے تو زیرو نے ہیرو کا روپ دھارا۔

آسٹریلیا کا اب تک میچز میں پلڑا بھاری ہے۔ سیریز کی بات ہو تو ٹرافی پینتس بار انگلینڈ کی اور چونتیس بار آسٹریلیا کی ہوئی۔ ۔دوہزار سترہ میں خاک کس کے حصے میں آتی ہے اس کا فیصلہ آسٹریلیا کے میدانوں میں ہوگا۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube