وسیم اکرم سے متعلق غلط بیانی کرنے والی ڈرماٹولوجسٹ کیلئے شنیرا اکرم کا سخت پیغام

April 18, 2019

سیلیبریٹیز کیلئے خوبصورت نظر آنا انتہائی ضروری ہوتا ہے اور اس مقصد کیلئے کاسمیٹک سرجریز کروانا اب ایک عام سی بات ہے، لیکن اس کا مطلب یہ ہرگز نہیں کہ تمام معروف شخصیات اس مرحلے سے گزری ہوں۔ بوٹوکس اور فلرز کروانے والوں کی فہرست میں بغیر تصدیق کسی کا بھی نام درج کردینا اتنا آسان نہیں رہا۔

اسٹارکرکٹر وسیم اکرم کی آسٹریلین نژاد اہلیہ نے لاہور سے تعلق رکھنے والی ایک ڈرماٹولوجسٹ کی بھرپور کلاس لے ڈالی جنہوں نے اپنے انسٹا گرام پر وسیم اکرم کی تصویر استعمال کرتے ہوئے اپنا بزنس چمکانے کیلئے یہ تک لکھ ڈالا کہ وسیم اکرم کی بوٹوکس اور فلر ٹریٹمنٹس صحیح طور سے نہیں کی گئیں۔

الٹرا ڈرم بائی ڈاکٹر مدیحہ راؤ نامی اس پیج پر وسیم اکرم کے چہرے کا کلوز اپ شیئر کرتے ہوئے لکھا گیا تھا کہ یہ اچھا ہے یا برا؟ یہ کس نے کیا، مجھے علم نہیں ۔ لیکن بہت زیادہ فلرز سے وسیم اکرم کا منہ اتنا پھولا ہوا ہے کہ ان کیلئے مسکرانا بھی مشکل ہے۔ آپ دیکھ سکتے ہیں کہ وسیم اکرم نے کوئی ٹریٹمنٹ کروا رکھی ہے۔

متعلقہ ڈاکٹر نے اپنی رائے دیتے ہوئے مزید لکھا کہ فلرز اور بوٹوکس کو قدرتی طریقے سے کیا جاناچاہیے تا کہ کوئی اس کے طریقہ کار پر انگلی نہ اٹھا سکے۔ بلاشبہ وسیم اکرم کی ٹریٹمنٹ برے طریقے سے کی گئی ہے۔

اس پوسٹ پر لیجنڈ کرکٹر تو کچھ نہ بولے البتہ شنیرا نے مشرقی بیوی ہونے کا ثبوت دیتے ہوئے اس پوسٹ پر برہمی کا اظہار کیا اور متعلقہ ڈاکٹر کو ٹھیک ٹھاک سنا ڈالیں۔

اپنی پوسٹ میں شنیرا نے اسکرین شاٹ شئیر کرتےہوئے اسے گٹر ایڈورٹائزمنٹ قراردیا۔ شنیرا نے لکھا کہ اپنے کاروبار کو ترقی دینے اوردوسروں کو نیچا دکھانے کیلئے یہ بدترین طریقہ ہے۔ وسیم اکرم ایسی ٹریٹمنٹس کے سخت خلاف ہیں اور انہیں ان کی ضرورت بھی نہیں۔

شنیرا نے سخت الفاظ استعمال کرتے ہوئے مذکورہ ڈاکٹر کے طریقہ کار کو انتہائی غیر پیشہ ورانہ قراردیتے ہوئے لکھا کہ لوگوں کو آپ کے پاس جانے سے پہلے ایک بار سوچنا ضرور چاہیے۔ اپنے کام کو سنجیدگی سے کرنے کا مشورہ دیتے ہوئے شنیرا نے یہ بھی واضح کیا ایسا کرنے پر آپ کو وسیم اکرم سے معافی مانگنی چاہیئے۔

دوسری جانب سوشل میڈیا صارفین نے بھی سخت ردعمل ظاہر کیا جس کے بعد ڈاکٹر مدیحہ راؤ نے اپنے انسٹا پیج پر سے پوسٹ ڈیلیٹ کرتے ہوئے وسیم اکرم اور ان کے مداحوں سے معافی مانگ لی ہے۔