Friday, January 28, 2022  | 24 Jamadilakhir, 1443

فواد چوہدری کی سندھ حکومت کے اقدامات کی تعریف

SAMAA | - Posted: Dec 7, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Dec 7, 2021 | Last Updated: 2 months ago

وفاقی وزیراطلاعات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ آٹا اور چینی پورے ملک کے مقابلے میں کراچی و حیدرآباد میں سب سے زیادہ مہنگے داموں دستیاب ہیں تاہم یہ بات خوش آئند ہے کہ سندھ حکومت نے ہماری نشاندہی پر کچھ ایسے اقدامات کیے جن سے قیمتوں میں استحکام آیا ہے گو اس حوالے سے مزید کاوشوں کی ضرورت ہے۔ 

منگل کو اسلام آباد میں وفاقی کابینہ اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ پورے ملک میں 20 کلو آٹے کا تھیلا 1100 روپے مل رہا ہے مگر وہی کراچی میں ساڑھے 1400 اور حیدرآباد میں 1300 روپے میں مل رہا ہے۔  

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ پورے ملک میں چینی کی فی کلو قیمت 90 روپے ہے مگر صرف کراچی اور اسلام آباد میں چینی 97 روپے کلو مل رہی ہے جبکہ امید ہے اس قیمت میں مزید کمی واقع ہوگی۔

وزیراطلاعات کا کہنا تھا کہ ملک میں ایک مہم چلائی جارہی ہے کہ مہنگائی بڑھ گئی ہے مگر حقیقت یہ ہے کہ دو ہفتہ سے مسلسل اشیائے خورونوش کی قیمیتں کم ہورہی ہیں، اس ہفتہ ایس پی آئی انڈیکس میں صفر اعشاریہ 48 فیصد کمی ہوئی ہے۔ 

انہوں نے کہا کہ جنوری سے راشن پروگرام کے تحت آٹے پر ملک کے 2 کروڑ لوگوں کو 30 فیصد سبسڈی دینے کا آغاز کر رہے ہیں جس کے تحت عوام کو سن 2018 سے بھی پہلے کے قیمتوں پر آٹا ملے گا۔

فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ پاکستان میں اکثر اشیائے خورونوش کی قیمتیں خطے کے ممالک سری لنکا، بنگلہ دیش اور بھارت سے کم ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ کہ دنیا میں مہنگائی ہوتی ہے تو ہم پر بھی اثر پڑتا ہے کیوں کہ ہم کوئی علیحدہ سیارے پر نہیں رہتے مگر ہمیں یہ دیکھنا ہے کہ دیگر ممالک میں رائج قیمتوں کے لحاظ سے ہم خطے میں کہاں کھڑے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اس سال صرف زراعت کے شعبے میں 400 ارب روپے کی اضافی آمدنی ہوئی ہے اور اگر آمدنی و اخراجات کا موازنہ کیا جائے تو اصل حقائق سامنے آ جائیں گے۔

وفاقی وزیراطلاعات فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ مہنگائی ہے مگر ایک طبقے کے لیے ہمیں اس کے ساتھ خود کو ایڈجسٹ کرنا پڑے گا۔

وزیراطلاعات کا کہنا تھا کہ الیکٹرانک ووٹنگ مشین کے معاملے پر الیکشن کمیشن اور اپوزیشن کو اپنی تسلی کرلینی چاہیے اگر وقت سسٹم کو سمجھنے کے لیے لگ رہا ہے تو ٹھیک ہے ورنہ بغیر سمجھے ای وی ایم پر تنقید سمجھ سے باہر ہے۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ ہمارا آئندہ انتخابات ای وی ایم سے کرانے کا واحد مقصد صاف اور شفاف الیکشن ہے، الیکشن کمیشن اپنے اعتراضات جمع کرے تو ای وی ایم بنانے والی دنیا بھر کی کمپنیاں اپنے پروپوزل دے دیں گی۔

انہوں نے کہا کہ اوورسیز پاکستانیوں کے ووٹ کے حق کے معاملے پرمسلم لیگ ن اور پیپلپزپارٹی کی مہم سمجھ سے بالا تر ہے کیوں کہ سمندر پار پاکستانی صرف تحریک انصاف کے ووٹرز نہیں ہیں اور یہ صرف ہماری نہیں سب کی ذمہ داری ہے، ہم اپنے پارٹی منشور کے مطابق ان کو یہ حق ضرور دیں گے۔ 

فوادچوہدری کا کہنا تھا کہ اس وقت تو نوازشریف فیملی خود بیرون ملک پاکستانیوں کی فہرست میں آتا ہے کیوں کہ حسن نواز اور حسین نواز نے تو یہی کہا تھا کہ ہم پر پاکستان قانون کا اطلاق ہی نہیں ہوتا مگر ہم ان کو بھی یہ حق دے رہے ہیں کہ وہ اپنی پارٹی کو ووٹ دے سکیں۔ انہوں نے کہا کہ بلاول بھٹو کی زندگی بھی باہر گزری ہے لیکن ان کی بیرونی ممالک میں مقیم پاکستانیوں سے مخاصمت سمجھ سے باہر ہے۔

وزیراطلاعات کا کہنا تھا کہ پبلک اکاؤنٹ کمیٹی کے اراکین سے وزیراعظم کی ملاقات ہوئی ہے جس میں مذکورہ کمیٹی کو مزید مظبوط بنانے کے لیے ایک کمیٹی قائم کی گئی ہے جس سے کمیٹی کے کارروائی میں شفافیت بڑھے گی۔ 

انہوں نے کہا کہ وفاقی کابینہ نے انسانی ہمدردی کی بنیاد پر افغان باشندوں کو ملک بھر کے ایئرپورٹس سے بیرون ملک سفر کی اجازت دے دی ہے جبکہ افغانستان میں انسانی بحران کے مدنظر وہاں ڈھائی لاکھ ٹن گندم امداد بھی بھیجی جارہی ہے۔  

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ افغانستان کے 40 اشیاء پر درآمدی ڈیوٹی بھی ختم کردی گئی ہے تاکہ وہاں کے عوام کی مدد کیا جاسکے۔

وزیراطلاعات کا کہنا تھا کہ پیمرا کا ایک واضح موقف ہے کہ چینلز ذرائع سے وفاقی کابینہ کے اجلاسوں کی خبریں نشر نہیں کریں گے مگر پچھلی دفعہ کچھ چینلز نے یہ خبر دی تھی کہ وزیراعظم نے وفاقی وزراء کے بیرون ملک دوروں پر پابندی عائد کردی ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ اس وقت وزیرتعلیم شفقت محمود سعودی عرب، مشیرقومی سلامتی معید یوسف ماسکو، وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی برسلز جبکہ وفاقی وزیر مذہبی امور دبئی میں ہیں لیکن جب آپ سے خبر کے بارے میں پوچھا جائے تو صحافی کہتے ہیں انہیں وہ بات کسی نے بتائی تھی۔ 

فواد چوہدری نے کہا کہ میڈیا ذمہ داری کا مظاہرہ کرکے طریقہ کار کے مطابق چلے کیوں کہ کابینہ کی اس قسم کی خبروں سے ملک میں سنسنی پھیلتی ہے۔

اس موقع پر انہوں نے واضح کیا کہ ریاست پاکستان اقلیتوں سے تعلق رکھنے والے ہر فرد کے حقوق کے تحفظ کی پابند ہے، ہم ہندوستان نہیں جہاں مسلمانوں کے خلاف ایسے واقعات روز ہوتے  ہیں لیکن وہاں پتہ تک نہیں ہلتا۔ پاکستان کے معاشرے نے اس سانحہ پر جس طرح ردعمل دیا اس سے ظاہر ہوتا کہ ہم دیگر ممالک سے بہت مختلف ہیں۔ 

 فواد چوہدری نے سیالکوٹ واقعہ کو اسلامی تعلیمات کے منافی قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ پاکستان کا چہرا مسخ کرنے کے مترادف ہے اور کابینہ نے اس کی شدید مذمت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم نے پنجاب حکومت کو ہدایت کی ہے کہ جو ملزمان گرفتار ہوچکے ان کا ٹرائل جلد شروع کیا جائے اور انہیں قرار واقعی سزا دینے کے لیے اقدامات کریں۔ 

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube