Friday, January 28, 2022  | 24 Jamadilakhir, 1443

سیالکوٹ واقعہ: وزیراعظم کا ملک عدنان کے لیے تمغہ شجاعت کا اعلان

SAMAA | - Posted: Dec 5, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Dec 5, 2021 | Last Updated: 2 months ago

وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ سیالکوٹ واقعہ میں سری لنکن شہری کو جتھے سے بچانے کی کوشش کرنے والے ملک عدنان کو تمغۂ شجاعت سے نوازیں گے۔

وزیراعظم عمران خان نے اپنے ٹویٹر پیغام میں کہا کہ پوری قوم کی جانب سے ملک عدنان کی بہادری اور اخلاقی جرات کو سلام پیش کرتا ہوں جنہوں نے اپنی جان خطرے میں ڈال کر پریانتھا دیاوادنا کو پناہ دینے اور خود کو ڈھال بنا کر انہیں جنونی جتھے سے بچانے کی پوری کوشش کی تھی۔

خیال رہے کہ ہفتہ کے روز سے سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو وائرل ہے جس میں ملک عدنان جو راجکو انڈسٹریز میں پروڈکشن مینیجر بتائے جاتے ہیں سری لنکن شہری پریانتھا دیاوادنا  کو بچانے کی کوشش کررہے ہیں۔

ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ ملک عدنان پریانتھا دیاوادنا  کے سر کو ہجوم کے حملے سے بچانے کی کوشش کررہے ہیں جبکہ مقتول سری لنکن شہری اس کی ٹانگوں سے چمٹا ہوا ہیں۔

وائرل ویڈیو میں ملک عدنان کو ہجوم کے سامنے درخواست کرتے ہوئے بھی دیکھے جاسکتے ہیں۔

سرخ سویٹر میں ملبوس عدنان ویڈیو میں پریانتھا کے اوپر جھکے ہوئے نظر آرہے ہیں جبکہ ہجوم سری لنکن شہری کو نیچے پھینکنے کے لیے اس سے چھیننے کی کوشش کر رہا ہے۔ اس دوران بہت سے لوگوں کو یہ کہتے ہوئے سنا جاتا ہے کہ “وہ آج نہیں بچ سکے گا۔

فیکٹری کے صحن میں ریکارڈ کی گئی ایک اور ویڈیو میں دکھایا گیا ہے کہ عدنان فیکٹری کے کارکنوں کو قائل کرنے کی کوشش کر رہا ہے کہ وہ پریانتھا دیاوادنا  کو ہجوم سے بچائیں جبکہ کچھ سوشل میڈیا صارفین کا دعویٰ ہے کہ عدنان نے ہجوم کو کل 45 منٹ تک روکے رکھا تھا۔

6دوسری جانب سیالکوٹ فیکٹری ملازمین کے تشدد سے سری لنکن شہری کی ہلاکت کے واقعے میں مزید  ملزمان کو گرفتار کرلیا گیا ہے، جب کہ 13 مرکزی ملزمان کو ایک روزہ سفری ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا گیا ملزمان کو کل گوجرانوالہ انسداد دہشت گردی عدالت میں پیش کیا جائے گا۔

پولیس کے مطابق مقتول منيجر پر تشدد کرنے والے مزيد 6 ملزمان کو گرفتار کیا گیا ہے۔ جس کے بعد گرفتار ملزمان کی تعداد 124 ہوگئی ہے۔ مقتول منيجر کی ڈيڈ باڈی پير 6 دسمبر کو سری لنکا منتقل کيے جانے کا امکان ہے۔

پنجاب پولیس کےترجمان کا کہنا ہے کہ ملزمان کے خلاف کریک ڈاؤن جاری ہے، سی سی ٹی وی فوٹیج اور موبائل ڈیٹا سے 12 گھنٹوں میں مزید 6 ملزمان گرفتار کرلیے گئے ہیں۔ پولیس کے مطابق ملزمان اپنے دوستوں اور رشتے داروں کے گھروں میں چھپے ہوئے تھے، اب تک 124 گرفتار افراد میں سے 13 ملزمان کا مرکزی کردار سامنے آیا ہے۔

گرفتار افراد میں سے اشتعال پھیلانے اور تشدد میں ملوث افراد کی نشاندہی کرنے کا عمل جاری ہے، سانحہ سیالکوٹ میں 900 افراد کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا تھا جس میں دہشت گردی کی دفعات بھی شامل ہیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube