Monday, January 17, 2022  | 13 Jamadilakhir, 1443

توہین رسالتﷺاورمذہب کے الزامات، تحقیقات پرمقتولین اکثربیگناہ ثابت ہوئے

SAMAA | - Posted: Dec 4, 2021 | Last Updated: 1 month ago
SAMAA |
Posted: Dec 4, 2021 | Last Updated: 1 month ago

فائل فوٹو

پاکستان میں توہین مذہب یا رسالت ﷺ کے الزام میں قتل کے متعدد واقعات پیش آچکے ہیں، تاہم ان میں سے اکثر تحقیقات کے بعد جھوٹے اور مقتولین بے گناہ نکلے ہیں۔

یہاں یہ بات بھی قابل غور ہے کہ جب ملک میں توہین مذہب اور توہین رسالت ﷺ کے حوالے سے قوانین موجود ہیں تو پھر الزام کی بنیاد پر کسی کو بغیر تحقیق اور تصدیق کے سرعام بدترین تشدد سے قتل کرنا جائز کیوں سمجھا جاتا ہے؟۔ جب کہ ان پرتشدد واقعات پر مذہبی رہنماؤں کی بھی مذمت سامنے آتی ہے۔

پاکستان میں اس سے پہلے بھی مشتعل گروہوں کے ہاتھوں مذہب کے نام پر تشدد کے واقعات میں صرف غیر مسلم ہی نہیں بعض اوقات مسلمانوں کو بھی قتل کیا گیا ہے۔ ایسے ہی چند دل سوز واقعات ذیل میں دیئے گئے ہیں۔ جس میں پرتشدد اور مشتعل ہجوم نے بغیر تصدیق اور تحقیق لوگوں کی سرعام جانیں لیں اور بعد ازاں تفتیش اور تحقیقات میں مقتولین بے گناہ ثابت ہوئے۔

American Accused of Blasphemy Is Killed in Pakistan Courtroom - The New  York Times

سنہ 2012

2012 میں بہاولپور میں ذہنی مسائل کے شکار ایک شخص کو مشتعل ہجوم نے توہین مذہب کے الزام میں پولیس اسٹیشن سے نکال کر سرعام آگ لگا دی۔

125 Christian houses burnt over blasphemy - Pakistan - DAWN.COM

سنہ 2013

مارچ 2013 میں 7 ہزار افراد پر مشتمل مشتعل ہجوم نے بادامی باغ لاہور کی جوزف کالونی میں مسیحی برادری کے 150 گھروں، 18 دکانوں اور دو گرجا گھروں کو آگ لگا دی۔ واقعہ ایک مسیحی شہری پر توہین مذہب کے الزام کے بعد پیش آیا تحقیقات پر یہ واقعہ ذاتی رنجش کا نتیجہ نکلا۔

کوٹ رادھاکشن

سنہ 2014

سال 2014 میں پنجاب میں مشتعل ہجوم نے ایک مسیحی جوڑے کو توہین مذہب کے الزام میں تشدد کرکے جان سے مار ڈالا اور سفاکی سے ان کی لاش کو آگ لگا دی۔ بعد ازاں تحقیقات میں مقتولین پر الزام غلط ثابت ہوا اور مجرمان کو سزائے موت سنائی گئی۔

مشال خان کیس:طلبا اور یونیورسٹی اہلکاروں سمیت مزید پانچ ملزمان گرفتار - BBC  News اردو

سنہ 2017

اپریل 2017 میں خیبر پختونخوا میں عبدالولی خان یونیورسٹی کے طالب علم مشعال خان کو اسی یونیورسٹی کے طلبہ نے توہین مذہب کا الزام لگا کر مشتعل ہجوم کی صورت میں بہیمانہ تشدد کا نشانہ بنایا۔ یہاں تک کہ اس کی جان چلی گئی، تحقیقات میں توہین مذہب کے الزامات جھوٹے نکلے۔

Ahmaddi Man Shot Dead Inside The Court Over Blasphemy - Republic Of Buzz

سال 2020

اسی طرح پشاور میں گزشتہ سال 29 جولائی کو عدالت میں جج کے سامنے ملزم فیصل عرف خالد نے توہین مذہب کے الزام میں طاہر احمد نسیم کو کمرہ عدالت میں گولی مارکرہلاک کیا، جس کے بعد پولیس اہلکاروں نے فائرنگ کرنے والے شخص کو گرفتار کیا اور پھر اُسے کے ساتھ سیلفی بنائی، مذکورہ اہلکاروں کے خلاف محکمہ جاتی کارروائی عمل میں لائی گئی تھی۔

Mob attacks Hindu Temple in Rahim Yar Khan over blasphemy - Global Village  Space

اگست 2020 میں رحیم یار خان میں مشتعل ہجوم نے ایک مندر پر حملہ کردیا اور املاک کو نقصان پہنچایا۔

Security guard who murdered Khushab bank manager sent on remand - SAMAA

نومبر 2020 میں خوشاب میں بینک منیجر کو گارڈ نے توہین مذہب کا الزام لگا کر گولی ماردی۔ میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا کہ گارڈ نے یہ قتل ذاتی رنجش کی بنا پر کیا۔

Pakistan: Mob sets police station on fire in search for man accused of  Quran desecration, South Asia News | wionews.com

رواں سال کے واقعات

نومبر 2021 میں مشتعل ہجوم نے چارسدہ پولیس اسٹیشن کو آگ لگا دی۔ تھانے میں ایک شخص موجود تھا جس پر توہین مذہب کا الزام تھا اور مشتعل ہجوم کا مطالبہ تھا کہ پولیس تحویل میں موجود اس شخص کو ان کے حوالے کیا جائے۔

Man Acquitted Of Blasphemy Charges After Spending 3 Years in Jail Killed By  Policeman

اس سے قبل رواں سال 2 جولائی کو پنجاب کے علاقے صادق آباد میں بینک مینیجر کو پولیس اہلکار نے توہین مذہب کے الزام میں فائرنگ کر کے قتل کیا، ملزم اس سے قبل تین سال جیل کی سزا کاٹ کر رہا ہوا تھا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube