Tuesday, November 30, 2021  | 24 Rabiulakhir, 1443

راناشمیم پرن لیگ کےبعد پيپلزپارٹی کی مہربانيوں کی داستان

SAMAA | - Posted: Nov 25, 2021 | Last Updated: 5 days ago
SAMAA |
Posted: Nov 25, 2021 | Last Updated: 5 days ago

رانا شميم سندھ کی تاريخ کے مہنگے ترين وائس چانسلر ہیں

گلگت بلتستان کے سابق چیف جج رانا شمیم پر ن ليگ ہی نہيں پيپلزپارٹی کی مہربانيوں کی فہرست بھی طويل ہے۔ سندھ حکومت نے اسلام آباد ميں مقيم رانا شميم کو کراچی کی لاء يونيورسٹی کا مہنگا ترين وائس چانسلربنايا ہے۔

سابق چیف جج رانا شمیم سابق وزیراعظم نوازشریف کے حق میں بیان حلفی دینے کے بعد سے توجہ کا مرکز بنے ہوئے ہیں۔ جتنا رانا شمیم مسلم لیگ ن پر مہربان ہے اس سے کہیں زیادہ پیپلزپارٹی اور سندھ حکومت رانا شمیم پر مہربان  نظر آتی ہے۔

کراچی کی شہید ذوالفقار علی بھٹو یونیورسٹی کے وائس چانسلر کے تقرر کا مرحلہ آیا تو سندھ کے سارے قانون دانوں کو چھوڑ کر اسلام آباد میں مقیم  رانا شمیم  کو ہی منتخب کیا۔

یونیورسٹیز اینڈ بورڈز کے سابق مشیر نثار کھوڑو کا کہنا ہے کہ اس کام کے لیے ان سے بہتر تو کوئی ہو ہی نہیں سکتا تھا۔ چند دن قبل وزیراعلیٰ سندھ  مراد علی شاہ نے بھی رانا شمیم کی  ڈٹ کر خوبیاں گنوائیں۔

شہید ذوالفقار علی بھٹو یونیورسٹی  کے وائس چانسلر کی تقرری کے بعد تنخواہ اور مراعات  طے کرنے کا مرحلہ آیا تو سندھ حکومت نے سخاوت کے سارے ریکارڈ توڑ دیے۔ رانا شمیم کی بطور وائس چانسلر کے ساتھ ماہانہ 30 لاکھ روپے  کی تنخواہ اور مراعات مقرر کردیں جو اس سے پہلے سندھ کی کسی  یونیورسٹی کے وائس چانسلر کو نہیں دی گئی تھیں۔

سرکاری خزانے سے ماہانہ 30 لاکھ روپے لینے والے وائس چانسلر رانا شمیم  پر سندھ حکومت کی سب سے بڑی مہربانی  ان کا کئی ماہ تک یونیورسٹی نہ آنے کے باوجود عہدے پر برقرار رکھنا ہے۔

ذوالفقار علی بھٹو یونیورسٹی کے ممبرسنڈیکیٹ اور رکن  سندھ اسمبلی  لیاقت آسکانی کہتے ہیں رانا شمیم آخری بار 9 ماہ پہلے سنڈیکیٹ کے اجلاس میں آئے تھے۔ سندھ کے وزیر جامعات اور تعلیمی بورڈز  اسماعیل راہو کہتے ہیں کہ وائس  چانسلر کو یونیورسٹی آنا چاہیے۔

رانا شمیم  پر سندھ حکومت کی مہربانیاں یہیں تمام نہیں ہوتیں بلکہ  مسلسل غیر حاضری کے باوجود عہدے پر برقرار رکھنے کے لیے ان کے اسلام آباد آفس کو  کراچی کی یونیورسٹی کا کیمپس کا درجہ بھی دے دیا گیا۔

وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ تو رانا شمیم کو سالانہ ساڑھے تین کروڑ روپے سے زائد معاوضے پر وائس چانسلر لگانے پر ڈٹے ہوئے ہیں مگر رانا شمیم کے طرز عمل نے متعلقہ وزیراسماعیل راہو اور ارکان سندھ اسمبلی کے لیے بھی اس کا دفاع  ناممکن بنا دیا ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube