Saturday, January 22, 2022  | 18 Jamadilakhir, 1443

این اے75ضمنی انتخاب:پریزایئڈنگ افسران کا لاپتہ ہونامنصوبہ بندی تھی،انکوائری رپورٹ

SAMAA | - Posted: Nov 5, 2021 | Last Updated: 3 months ago
Posted: Nov 5, 2021 | Last Updated: 3 months ago

این اے 75 ڈسکہ میں ضمنی انتخاب کے حوالے سے انکوائری رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ حلقے سے پریزایئڈنگ افسران کا لاپتہ ہونا اتفاق نہیں بلکہ منصوبہ بندی تھی۔

این اے 75 ڈسکہ کے ضمنی انتخاب کی انکوائری رپورٹ منظرعام پر آگئی ہے۔جوائنٹ الیکشن کمشنر پنجاب سعید گل نے انکوائری رپورٹ الیکشن کمیشن میں جمع کرائی ہے۔رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ پریذائيڈنگ افسران کی گمشدگی اتفاق نہیں بلکہ منصوبہ بندی تھی۔پریذائيڈنگ افسران کوپہلے پسرور اور پھر سیالکوٹ لےجایا گیا۔

رپورٹ کے مطابق ضمنی انتخاب میں دھاندلی کیلئے اسسٹنٹ کمشنر ڈسکہ کے گھر میٹنگ ہوئی جس میں فردوس عاشق اعوان، ڈپٹی ڈائریکٹر محکمہ تعلیم محمد اقبال اور ديگررہنما موجود تھے۔

رپورٹ کے مطابق پریذایئڈنگ افسران کو شناختی کارڈ کی نقول پر بھی ووٹ ڈالنے کی اجازت دینے کا کہا گیا جبکہ انکوائری رپورٹ میں لاپتہ پریذایئڈنگ افسران کا کردار بھی مشکوک قراردیا گیا۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ عملے کو کہا گیا تھا کہ پولیس اورانتظامیہ کے کام میں مداخلت نہیں کرنی ہے اور انتخابی عملہ اور سرکاری مشینری کوئی کارروائی کرنے سے قاصر تھی۔

اس کےعلاوہ انکوائری میں الیکشن کمیشن کے اپنے افسران کو بھی ذمہ دار قرار دیا گیا ہے۔ ڈی آر او اور ریٹرننگ افسر کو آئندہ انتخابی ڈیوٹی سے دور رکھنے کی سفارش کی گئی ہے۔ ڈی آر اوعابد حسین اورآراواطہر عباسی الیکشن کمیشن کے اپنے افسران تھے۔۔

انکوائری کمیشن نے فارم 45 اور 46 میں ترمیم کی بھی سفارش کردی ہے۔فارم 45 اور 46 میں پولنگ ایجنٹ کی ریسونگ کا خانہ شامل کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube