Friday, December 3, 2021  | 27 Rabiulakhir, 1443

پروین رحمان قتل کیس کا فیصلہ موخر کردیا گیا

SAMAA | - Posted: Oct 28, 2021 | Last Updated: 1 month ago
SAMAA |
Posted: Oct 28, 2021 | Last Updated: 1 month ago

کراچی میں 8 سال قبل قتل ہونے والی سماجی کارکن پروین رحمان کے کیس کا فیصلہ 3 نومبر تک موخر کردیا گیا ہے۔

جمعرات 28 اکتوبر کو ڈائریکٹراورنگی پائلٹ پروجیکٹ پروین رحمان قتل کیس میں استغاثہ کی ترمیمی فرد جرم عائد کرنے کی درخواست کی سماعت ہوئی۔

انسدادِ دہشت گردی عدالت نے اورنگی پائلٹ پروجیکٹ کی ڈائریکٹر پروین رحمان قتل کیس کی سماعت 15 اکتوبر کو مکمل کرلی تھی۔ مدعی مقدمہ کے وکیل فیصل صدیقی نے بھی دلائل مکمل کرلئے تھے۔عدالت نے کیس کا فیصلہ محفوظ کرتے ہوئے ریمارکس دئیے تھے کہ فیصلہ 28 اکتوبر2021  کو سنایا جائے گا تاہم عدالت نے فیصلہ 3 نومبر تک موخر کردیا ہے۔

سندھ ہائی کورٹ نے ترمیمی فرد جرم کی درخواست پرسرکاری وکیل سے دلائل طلب کرلئے ہیں۔درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ قتل کی سازش تیاری کی دفعہ کا اضافہ کیاجائے۔سرکاری وکیل نے موقف دیا ہے کہ مرکزی ملزم کے بیان اور تفتیشی مواد سے سازش کے شواہد ملتے ہیں۔عدالت نے درخواست پر سرکاری وکیل سے دلائل طلب کرلئے ہیں۔

پروین رحمان قتل،عدالت نے کیس 2 ماہ میں نمٹانے کا حکم دیدیا

چوبیس اپریل 2018 کو ڈائریکٹر اورنگی پائلٹ پروجیکٹ اور سماجی کارکن پروین رحمان کے قتل کی تحقیقات کیلئے قائم کی گئی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے اپنی حتمی تحقیقاتی رپورٹ سپریم کورٹ میں جمع کرائی تھی۔

پروین رحمان قتل: دونوں جےآئی رپورٹس ریکارڈ کاحصہ بنانے کاحکم

رپورٹ کے مطابق پروین رحمان کے قتل کے بعد گوٹھوں کی ڈاکومنٹیشن کا کام رک گیا، جس کے باعث وہاں کے رہائشیوں کے لیے حقوق ملکیت سے لینڈ مافیا کیلئے قبضہ مشکل ہوا۔ تحقیقاتی رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا  کہ گوٹھ آباد اسکیم کے غلط استعمال سے سیاسی اثر و رسوخ رکھنے والے افراد نے فائدہ اٹھایا،اس کے علاوہ روزی گوٹھ کے معاملے میں پروین رحمان نے پچیس ایکڑ زمین کی نشاندہی کی، کہ حتمی الاٹمنٹ میں 25 کے بجائے 75 ایکڑ زمین الاٹ کی گئی تھی۔

پروین رحمان کی زندگی پرفلم’ان ٹو ڈسٹ’ ایمیزون پرجاری

واضح رہے کہ اورنگی پائیلٹ پراجیکٹ کی ڈائریکٹر پروین رحمان کو سال 2013 میں کراچی کےعلاقے منگھوپیر میں موٹر سائیکل سوار مسلح افراد نے فائرنگ کرکے قتل کیا، جب وہ دفتر سے اپنے گھر واپس جا رہی تھیں۔ اس مقدمے میں رحیم سواتی،عمران سواتی،احمد خان ،امجد حسین اور ایاز سواتی کو گرفتار گیا گیا تھا۔

مارچ 2015 میں مانسہرہ کےعلاقے کشمیری بازار میں چھاپے کے دوران پروین رحمان کے قاتل امجد حسین عرف پپو شاہ کو گرفتار کیا گیا تھا اور ملزم کے قبضے سے اسلحہ بھی برآمد کرلیا گیا تھا۔

اورنگی پائلٹ پروجیکٹ نامی این جی او کا قیام 1980ء میں عمل میں آیا تھا، یہ این جی او اورنگی ٹاؤن میں غیر قانونی تعمیرات کے معاملات پر نظر رکھتی ہے اور اسی حوالے سے پروین رحمان کچی بستیوں اور گوٹھوں کی ریگولرائزیشن کی خواہاں تھیں۔

پروین رحمان کی زندگی پرمبنی ڈاکیومینٹری فلم نے بھارت میں ایوارڈ جیت لیا

بھارت میں منعقد ہونے والے ساتویں دہلی انٹرنیشنل فلم فیسٹیول 2018 میں پروین رحمن کی زندگی پر ڈائریکٹر مہرا عمر کی جانب سے بنائی گئی ڈاکیومینٹری فلم پروین رحمن دی ربل اپٹیمسٹ نے بہترین ڈاکومنٹری کا ایوارڈ اپنے نام کیا تھا ۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube