Friday, December 3, 2021  | 27 Rabiulakhir, 1443

سیاحت کیلئےنکل رہے ہیں؟ جانیے راستوں، ہوٹل،موسم سےمتعلق مفید معلومات

SAMAA | - Posted: Oct 14, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Oct 14, 2021 | Last Updated: 2 months ago

خیبرپختونخوا اور گلگت میں موسم تبدیل ہورہا ہے اور حالیہ بارشوں اور موسم سرما کی پہلی برف باری کے  باعث سردی نے اپنی آمد کا اعلان کردیا ہے جس کے باعث مختلف مقامات خصوصاً بابوسر ٹاپ پر سیاحوں کو کافی پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔

سیاح ناکافی معلومات راستوں سے ناواقفیت اور احتیاطی تدابیر کو نظر انداز کرنے کے باعث مختلف نوعیت کی پریشانیوں کا شکار ہورہے ہیں اور اس کی وجہ بالائی علاقوں کا بدلتا موسم ہے لہٰذا ضرورت اس بات کی ہے کہ سیاح کوئی بھی ٹور پلان کرنے سے قبل مطلوبہ علاقے کی سڑکوں کی صورتحال اور موسم کی معلومات حاصل کرلیا کریں تاکہ شدید بارش یا برف باری کی صورت میں انہیں کسی دقت کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

یوں تو پاکستان کا چپہ چپہ ہی خوبصورت ہے مگر موجودہ موسم میں ملک بھر سے لوگ برف باری دیکھنے خیبرپختونخوا اور شمالی علاقہ جات کے دلکش علاقوں کا رخ کرتے ہیں۔

سیاحت کے لیے کہیں روانہ ہونے سے قبل اگر تھوڑی بہت متعلقہ معلومات حاصل کرلی جائیں تو اس سے سفر اور رہائش کے معاملات مزید آسان و خوشگوار رہتے ہیں۔

بالائی علاقوں میں موسم اور راستوں کی صورتحال

اگر آپ اس وقت کوئی ٹور پلان کررہے ہیں تو پھر یہ انتہائی موزوں وقت ہے کیوں کہ اگلے ایک ڈیڑھ ماہ بعد برف باری کا آغاز ہوسکتا ہے جس کے باعث لینڈ سلائیڈنگ اور سڑکوں کی بندش کے علاوہ موسم کی شدت بھی سیاحوں کی راہ میں مشکل کھڑی کرسکتی ہے۔

محکمہ سیاحت خیبرپختونخوا کے مطابق اس وقت صوبے بھر کی سڑکیں کھلی اور موسم صاف ہے تاہممحکمہ موسمیات نے خیبر پختونخوا کے بعض اضلاع میں جمعہ22  اکتوبر کی شام سے بارشوں اور پہاڑوں پر برفباری کا کے نئے سلسلے کے آغاز کی پیشگوئی کی ہے جس کے اتوار 24 اکتوبر تک وقفے وقفے سے جاری رہنے کا امکان ظاہر کیا گیا ہے۔

جن علاقوں میں تیز بارشوں اور پہاڑوں پر برفباری کی پیشگوئی کی گئی ہے ان میں  چترال، دیر، سوات، مالاکنڈ، کوہستان، شانگلہ، بونیر، مانسہرہ، ایبٹ آباد، ہری پور، صوابی، مردان، نوشہرہ، پشاور، چارسدہ، باجوڑ، کرم، وزیرستان اور کوہاٹ شامل ہیں۔

ڈی جی پی ڈی ایم اے شریف حسین نے تیزبارشوں کے پیش نظرضلعی انتظامیہ اورمتعلقہ اداروں کو پیشگی اقدامات کرنے اور الرٹ رہنے کی ہدایت کی ہے۔

پی ڈی ایم اے خیبر پختونخوا نے دوران سفر سیاحوں کو خصوصی احتیاطی تدابیر اختیار کرنے اور موسمی صورت حال سے باخبر رہنے کا مشورہ دیا گیا ہے۔

پی ڈی ایم اے کا ایمر جنسی آپریشن سنٹر مکمل فعال ہے اور عوام کسی بھی ناخوشگوار واقعے کی صورت میں صوبائی ڈیزاسٹر منمجمنٹ اٹھارٹی کی ہیلپ لائن 1700 پر رابطہ کرسکتے ہیں۔

مانسہرہ: تمام پرفضا مقامات کھلے اور اس وقت سفر کے لیے موزوں ہیں۔ مطلع صاف اور موسم معتدل ہے تاہم بابوسر ٹاپ کا راستہ خراب موسم کے باعث بند کردیا گیا ہے۔ علاوہ ازیں ایبٹ آباد اور گلیات کے راستے بھی کھلے اور سفر کےلیے موزوں ہیں۔

سوات:تمام ٹوررسٹ اسپاٹ بشمول کالام مہو ڈنڈ اور ملم جبہ کی سڑکیں کھلی اور مطلع صاف ہے اور فی الوقت وہاں جانے میں کسی قسم کی کوئی رکاوٹ نہیں ہے۔

کمراٹ: لوئر اور اپر دیر کے تمام مقامات بشول کمراٹ تک اس وقت بآسانی پہنچا جاسکتا ہے اور ان جگہوں کا موسم بھی صاف ہے۔

اس وقت صوبہ بھر میں دن کے اوقات میں درجہ حرارت زیادہ سے زیادہ 35 جبکہ کم سے کم 19 سینٹی گریڈ رہتا ہے تاہم کالام، ملم جبہ ناران سمیت تمام بالائی علاقوں میں درجہ حرات رات کے وقت 10 سینٹی گریڈ سے بھی کم رہتا ہے۔ سیاحوں کو چاہیے کہ ان مقامات کا رخ کرتے وقت گرم کپڑے بھی اپنے ساتھ رکھیں اور خصوصاً رات کے وقت سردی کی شدت اور موسم کے مضر اثرات سے بچنے کے لیے گرم لباس زیب تن کریں۔

سیاحتی مقامات پر ان دنوں ہوٹل کتنے فیصد بھرے ہوئے ہیں؟

اس وقت ایوبیہ میں 55 فیصد، ڈونگا گلی میں 65 فیصد اور نتھیاگلی میں 70 فیصد ہوٹلز بک ہیں۔

بالاکوٹ 40 فیصد، شوگراں 50 فیصد،کاغان 30، بٹہ کنڈی 40 اور ناران میں 50 فیصد ہوٹلز بھرچکے ہیں۔

ملم جبہ 40، مدین 35، بحرین 35،کالام 40، کمراٹ 25، دیر 20 اور چترال میں 25 فیصد ہوٹلز فل ہیں۔

سفر پر نکلنے سے پہلے مزید معلومات کے لیے خیبرپختونخوا کلچر اینڈ ٹورازم اتھارٹی کی 24 گھنٹے فعال رہنے والی فری ہیلپ لائن 1422 سے بھی استفادہ کیا جاسکتا ہے جس پر سیاحوں کی رہنمائی کی جاتی ہے۔

اس ہیلپ لائن کے ذریعے خیبرپختونخوا آنے والے سیاح پُر فضا مقامات، موسمیاتی حالات، قریبی اہم مقامات کی معلومات سمیت ٹریفک اور ایمرجنسی سروس سے متعلق معلومات بھی حاصل کرسکتے ہیں۔

گھومنے پھرنے کے لیے روانہ ہونے سے پہلے رہائش کا انتظام یقینی بنا لینا بھی سیاحوں کے لیے ایک ضروری اور مفید عمل ہے۔ اس مقصد کے لیے بھی سرکاری موبائل ایپ یا محکمہ سیاحت خیبرپختونخوا کی ویب سائٹ سے معلومات حاصل کی جاسکتی ہیں۔

محکمہ سیاحت خیبرپختوںخوا نے سیاحوں کے سہولت کے لیے صوبے میں 10سیاحتی مقامات پر کیمپنگ پاڈز نصب کیے ہیں۔ ان سیاحتی مقامات میں ٹھنڈیانی، شڑاں، بیشیگرام، گبین جبہ، یخ تنگی، شیخ بدین، مہابن، شہیدہ سر، الئی اور بمبوریت شامل ہیں۔

سیاحوں کا رات کے وقت سفر کرنے سے گریز بہتر ہے اور پہاڑی راستوں پر خود گاڑی چلانے کے بجائے مقامی ڈرائیوروں پر انحصار زیادہ محفوظ عمل ہے۔

اپنے بچوں اور خواتین کو دریا، ندی نالوں اور جھیلوں کے بہت قریب جانے یا پانی میں اترنے سےمنع کریں۔ ان علاقوں میں پانی ٹھنڈا، توقع سے زیادہ گہرا اور بہاؤ کافی تیز ہوتا ہے۔

کرونا وبا کا پھیلاؤ روکنے کے لیے بھی صوبائی حکومت نے ایس او پیز جاری کی ہیں جس کے مطابق سیاح سفر سے پہلے اطمینان کر لیں کہ وہ صحت مند اور سفر کے لیے جسمانی طور پر فٹ ہیں۔

حکومت نے تمام سیاحوں کو یہ ہدایت بھی کی ہے کہ سیاحی مقامت کا رخ کرتے وقت وہ اپنے قومی شناخت ساتھ رکھنے کے علاوہ کرونا ویکسینیشن سرٹفیکیٹ اپنے پاس رکھیں۔

رپورٹ میں شامل ضروری معلومات اپ ڈیٹ کی جاتی رہیں گی

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube