Monday, October 25, 2021  | 18 Rabiulawal, 1443

افغانستان کیساتھ کھڑے ہونے کا وقت آگیا ہے، وزیراعظم

SAMAA | - Posted: Sep 17, 2021 | Last Updated: 1 month ago
SAMAA |
Posted: Sep 17, 2021 | Last Updated: 1 month ago
imran-khan

فوٹو: عمران خان/فیس بک

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ افغانستان کے لوگوں کے ساتھ کھڑے ہوں اور عالمی برادری مشکل صورتحال میں افغانستان کی مدد کرے۔

تاجکستان کے دارالحکومت دوشنبے میں 20وین شنگھائی تعاون تنظیم سمٹ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ 4دہائیوں کے بعد افغانستان میں امن و استحکام کا موقع آیا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ افغانستان میں خون خرابے اور فساد کے بغیر اقتدار کی منتقلی ہوئی اس لیے اب افغانستان کو معاشی طور پر مستحکم کرنا ایک اور بڑا چیلنج ہے۔ افغانستان کا امن خطے کا امن ہے اور افغانستان کا عدم استحکام خطے کا عدم استحکام ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ عالمی برادری افغانستان کی حقیقت کا ادراک کرے اور یقین دہانی کرنی ہوگی افغانستان دوبارہ دہشت گردی کی آماجگاہ نہ بنے۔ سیاسی اور علاقائی وابستگی سے بالاتر ہو کر افغانستان کی خوشحالی کا سوچنا ہوگا۔

وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان نے انسانی ہمدردی کی بنیاد پر افغانستان کی مالی مدد کی۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی ، وزیر اطلاعات فواد چوہدری ، اور قومی سلامتی کے مشیر معید یوسف نے بھی اجلاس میں شرکت کی۔

دہشت گردی مذہب سے کیوں منسلک ہے؟

نائن الیون حملوں کی 20 ویں برسی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ ان تمام سالوں میں دنیا نے دہشت گردی کے نتیجے میں ہونے والی تباہی دیکھی ہے اور اس کے خطرات آج بھی زندہ ہیں۔

انہوں نے دہشت گردی کو ایک مذہب سے جوڑنے پر تشویش کا اظہار کیا۔

پاکستان ان برسوں کے دوران دہشت گردی کا شکار رہا ہے اور اس دہشت گردی کو سرحد پار سے ریاستی اداروں نے منصوبہ بندی، معاونت او مالی اعانت سے منظم کیا۔

وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان سے زیادہ کسی دوسرے ملک نے نقصان نہیں اٹھایا۔ ہمیں 80ہزار سے زائد جانی نقصان اور 150 ارب ڈالر سے زیادہ کا معاشی نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ ان سب کے باوجود، دہشت گردی اور انتہا پسندی سے لڑنے کے لیے ملک کا عزم غیر متزلزل ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube