Saturday, October 16, 2021  | 9 Rabiulawal, 1443

ساحل پر پھنسے جہاز کو نکالنے کا آپریشن، پہلا مرحلہ ناکام

SAMAA | - Posted: Aug 16, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Aug 16, 2021 | Last Updated: 2 months ago

دوسرے مرحلہ کاآغاز اکیس اگست سے ہوگا

کراچی کے ساحل پر پھنسے جہاز کو نکالنے کے آپریشن میں کئی بار رکاوٹ آئی ہے اور آپریشن چند روز کے لیے موخر کردیا گیا ہے۔

کراچی کے ساحل پر25 روز سے زائد پھنسے بحری جہاز کو نکالنے کے لیے ریسکیوآپریشن کیلئے دبئی سے آنے والی ہارمنی ٹگ بوٹ پچھلے ہفتے خراب ہوگئی تھی۔سی میکس کمپنی کے نمائندے عارف شیخ نے بتایا ہے کہ ہارمنی ٹگ بوٹ میں لیکج ہوئی تھی جومرمت سے ٹھیک کرلی گئی ہے۔

اس سے قبل جہاز کو کھینچنے کیلئے باندھا گیا فولادی رسہ ٹوٹ کر سمندر میں گم ہوگیا تھا۔ رسہ ٹوٹنے سے قبل جہاز کو نکالنے والی کرین بردار بارج خود پھنس گئی تھی۔یوم آزادی پرعوام کی بڑی تعداد کےجہاز تک پہنچ جانے سے بھی آپریشن تاخیر کا شکار ہوا تھا۔

اس وقت ہینگ ٹونگ 77 جہاز کو نکالنے کا آپریشن 5 روز کیلئے ملتوی کیا گیا ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ جہاز نکالنے کیلئے سمندر میں مطلوبہ اونچی لہریں اب 20 اگست کے بعد ہونگی۔ سب کانٹریکٹر ایان شپ بریکرز نے بتایا ہے کہ ریسکیو آپریشن کےآغاز میں اب پہلے پھنسے ہوئے کرین بردار بارج کو نکالیں گے اور کرین بردار بارج کے ذریعے 21 اگست سے جہاز کو نکالنے کا آپریشن مکمل ہونے کا امکان ہے۔ 21اگست سے جہاز ریسکیو آپریشن کے دوسرے مرحلے کے آغاز کا امکان ہے۔

واضح رہے کہ ساحل پر پھنسے جہاز ہینگ ٹونگ 77 کو نکالنے کے لیے ٹگس اور بارج مقامی کمپنی کو استعمال کیا جارہا ہے۔ جہاز پانی میں کھینچنے کے بعد ٹگس اور بارج جہاز کو پورٹ کی جانب لے جانے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔ خراب موسم اور تکنیکی وجوہات کے باعث جہاز کو نکالنے کا آپریشن معطل کرنا پڑا تھا۔

پچھلے ہفتے وزارت بحری امورنے جہاز کو قبضے میں لینے کا فیصلہ کرلیا۔ جہاز سمندری سفر کیلئے ناموزوں ہوچکا ہے اور اس فیصلے سے کپتان کو تحریری طور پر آگاہ کردیا گیا ہے۔جہاز کو سمندر میں جانے کے قابل نہ ہونے پر پاکستان مرچنٹ آرڈیننس 2001 کی شق 400 کے تحت قبضے میں لیا جائے گا۔ جہاز کے نیوی گیشن آلات،مشینری اور ہل خراب ہے۔خراب جہاز انسانی جان اور املاک کے لئے نقصان دہ ہے۔

واضح رہے کہ کراچی کے ساحل پر ہینگ ٹونگ 77 بحری جہاز 21 جولائی کو ریت میں دھنسا تھا۔ اس کو نکالنے کے لیے پہلا آپریشن 10 اگست کو کیا تھا۔ پہلے آپریشن کو تیکنکی خرابی کی وجہ سے روک دیا گیا تھا لیکن جہاز کو 200 فٹ تک پانی کی جانب دھکیل دیا گیا تھا۔ 11 اگست کو ہونے والے آپریشن میں ٹگ بوٹ خراب ہوگئی تھی اور جہاز واپس ریت کی جانب آگیا تھا۔12 اگست کو جہاز کو 600 فٹ تک سمندر کی طرف کھینچ لیا گیا تھا جب کہ اونچی سمندری لہروں اور ہواؤں نے جہاز کا رخ 45 ڈگری سمندر کی طرف قدرتی طور پر موڑ دیا تھا۔ تاہم جمعہ کو تیز ہواؤں اور سمندری لہروں نے پچھلی پوزیشن پر دوبارہ موڑ دیا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube