Saturday, October 16, 2021  | 9 Rabiulawal, 1443

فرانسک میڈیسن کےماہرڈاکٹرفرحت مرزا گھرمیں آتشزدگی کےواقعےمیں جاں بحق

SAMAA | - Posted: Aug 12, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Aug 12, 2021 | Last Updated: 2 months ago

ڈاکٹرفرحت مرزا سندھ میڈیکل کالج میں فرانسک میڈیسن ڈپارٹمنٹ میں چئیرمین تھے

جناح سندھ میڈیکل یونی ورسٹی کے سابق پروفیسر اور فرانسک میڈیسن کے ماہر ڈاکٹر فرحت مرزا کراچی کی محمد علی سوسائٹی کے گھر میں آگ لگنے سے جاں بحق ہوگئے۔

کراچی کے علاقےمحمد علی سوسائٹی میں میراں شاہ روڈ پرتین منزلہ مکان کی پہلی منزل پر آگ لگ گئی۔ آگ لگنے کے باعث دھواں بھرجانے سے ڈاکٹر فرحت مرزا سمیت 5 افراد جاں بحق ہوگئے۔ مرنے والے دیگر افراد کی شناخت صبیحہ،شائستہ،اکبر اور سلطان کے نام سے ہوئی ہے۔ صبیحہ ریٹائرڈ جج تھیں۔ابتدائی تحقیقات کے مطابق مرنے والوں میں سندھ گورنمنٹ اسپتال لیاقت آباد کے ریٹائرڈ میڈیکل سپریڈنڈنٹ بھی شامل ہیں۔

مکان میں آگ لگنے کی وجہ شارٹ سرکٹ بتائی گئی ہے۔آگ بجھانے کےلیے فائربریگیڈ کو طلب کیا گیا اور 3 فائرٹینڈرز نے آگ بجھائی۔ پولیس نے بتایا ہے کہ آگ لگنےکےوقت گھر میں 7 افراد موجود تھے جن میں سے 5 افراد کو بے ہوشی کی حالت میں اسپتال لے جایا گیا۔ مرنے والوں کی عمریں 45 سے 80 برس کے درمیان ہیں۔

ڈاکٹرفرحت مرزا کون تھے؟

ڈاکٹرفرحت مرزا سندھ میڈیکل کالج میں فرانسک میڈیسن ڈپارٹمنٹ میں چئیرمین تھے۔ انھوں نے کراچی میں اسلحے سے زخمی ہونے والے موضوعات پر کئی تحقیقات کیں۔ اس کےعلاوہ پولیس مقابلوں،آگ سے جھلس کر آنے والےزخموں،ریلوے ٹریک پر حادثات اور زہرخوانی سےہونے والی اموات پر بھی ان کی تحقیقات تھیں۔ میڈیکولیگل معاملات میں انھیں مہارت حاصل تھی۔

فرحت مرزا 1952 میں پیدا ہوئے۔ انھوں نے لیاقت میڈیکل کالج سے میڈیکل کی تعلیم حاصل کی۔ انھوں نے سندھ میڈیکل کالج،ڈاؤ یونی ورسٹی آف ہیلتھ سائنسز اور لیاری میڈیکل کالج میں فرانسک میڈیسن کی تعلیم دی۔

وہ کراچی فرانسک سوسائٹی کے سربراہ بھی رہے۔ وہ کالج آف فزیشنز اینڈ سرجنز میں فرانسک میڈیسن میں ایف سی پی ایس کے سپروائزر بھی رہے۔ وہ کئی اسپیشل میڈیکل بورڈز سے منسلک بھی تھے۔

سندھ حکومت نے میڈیکو لیگل کے شعبے میں اصلاحات کے لیے کمیٹی تشکیل دی جس کی صدارت ڈاکٹر فرحت نے کی۔ کمیٹی کی جانب سے تجویز کردہ اصلاحات کو سندھ ہائی کورٹ نے منظور کیا۔ چیف سیکریٹری کو سمری ارسال کرکے ان اصلاحات کو نافذ کیا گیا۔

میڈیکل لیگل ایکسپرٹ ڈاکٹرثومیہ سید نے بتایا ہے کہ ڈاکٹر فرحت کا شمار 45 برسوں میں فرانسک میڈیسن کے ماہرین میں ہوتا تھا۔انھوں نے ہزاروں میڈیکل کے طلبہ کی تربیت کی۔

قائم مقام وائس چانسلر پروفیسر شاہد رسول نے ڈاکٹرفرحت کو بہترین رہنما اور طلبہ کے لیے بےمثال استاد قرار دیا ہے۔ انھوں نے کہا ہے کہ ڈاکٹر فرحت کو پیشہ ورانہ خدمات،اپنے کام سے لگن  کےحوالے سے یاد رکھا جائے گا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube