Thursday, September 23, 2021  | 15 Safar, 1443

گھنٹی کیوں بجائی؟، گارڈ کی فائرنگ سے ڈیلیوری بوائے زخمی

SAMAA | - Posted: Jul 24, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Jul 24, 2021 | Last Updated: 2 months ago

متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) کے ٹکٹ سے منتخب ہونیوالے رکن سندھ اسمبلی خواجہ اظہارالحسن کے گارڈ نے آن لائن فوڈ ڈیلیوری بوائے کو بنگلے کی گھنٹی بجانے پر فائرنگ کرکے زخمی کردیا اور فرار ہوگیا۔

درخشاں پولیس اسٹیشن کے ایس ایچ او عرفان میو نے سماء ڈیجیٹل کو بتایا کہ سندھ اسمبلی کے سابق اپوزیشن لیڈر اور ایم کیو ایم پاکستان کے رہنماء خواجہ اظہار االحسن کے اہلخانہ نے آن لائن فوڈ ڈیلیوری کمپنی کو کھانے کا آرڈر دیا تھا۔

نجی کمپنی کا ڈیلیوری بوائے، جس کی شناخت ندیم کے نام سے کی گئی ہے، خواجہ اظہار الحسن کے ڈیفنس خیابان بدر میں واقع رہائشگاہ پر پہنچا اور ڈیلیوری دینے کیلئے بنگلے کی گھنٹی بجادی۔

ڈیلیوری بوائے کے پولیس کو دیئے گئے ابتدائی بیان کے مطابق جیسے ہی اس نے بنگلے کی گھنٹی بجائی تو سادہ لباس میں ملبوس مسلح شخص اس کے پاس آیا اور کہا کہ ڈیلیوری اس کے حوالے کردی جائے۔

ایس ایچ او کے مطابق ڈیلیوری بوائے نے گارڈ کی بات کو نظر انداز کرتے ہوئے دوبارہ بنگلے کی گھنٹی بجائی جس پر گارڈ مشتعل ہوگیا اور ڈیلیوری بوائے کو مغلظات بکنا شروع کردیں۔

ڈیلیوری کی حوالگی سے مسلسل انکار پر مشتعل گارڈ نے ڈیلیوری بوائے پر اسلحہ تان لیا لیکن اس کے باوجود جب ڈیلیوری گارڈ کے حوالے نہ کی گئی تو اس نے ڈیلیوری بوائے کو فائرنگ کرکے زخمی کردیا۔

ضلع جنوبی کے ایس ایس پی زبیر نذیر نے سماء ڈیجیٹل کو بتایا کہ واقعے کے فوراً بعد پولیس کی نفری جائے وقوعہ پر پہنچ گئی اور متاثرہ شخص کو علاج معالجے کیلئے جناح پوسٹ گریجویٹ میڈیکل سینٹر منتقل کیا۔

ایس ایس پی کے مطابق متاثرہ شخص کو گولی گھٹنے میں لگی ہے اور ابتدائی طبی امداد کے بعد ڈاکٹرز نے اس کی حالت کو خطرے سے باہر قرار دے دیا ہے۔

ایس ایس پی نے مزید بتایا کہ فائرنگ کرنے والا گارڈ جائے وقوعہ سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا ہے لیکن اس کی تلاش جاری ہے۔

پولیس نے متاثرہ شخص کے بیان اور سی سی ٹی وی کیمروں کی مدد سے واقعے کی تحقیقات کا آغاز کردیا ہے۔

خواجہ اظہار الحسن

واقعہ سے متعلق ایم کیو ایم رہنما کہنا ہے کہ فائرنگ کسی سرکاری گارڈ یا پولیس نے نہیں کی تھی۔ واقعہ جب رونما ہوا تو میں اس وقت گھر پر موجود نہیں تھا۔ ڈیلیوری کرنے والا شخص ڈیلیوری کے بعد پیسے لے کر گھر سے چلا گیا تھا اور اس وقت تک کوئی جھگڑا نہیں ہوا تھا۔

انہوں نے مزید بتایا کہ واقعہ میرے فلیٹ کے باہر ہوا۔ زخمی شخص کا نام ندیم ہے، جسے فوری طور پر قریبی واقع نجی اسپتال منتقل کیا گیا۔ علاج ہونے تک متعلق شخص کی تنخواہ اور طبی اخراجات میری ذمہ داری ہیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube