Sunday, September 19, 2021  | 11 Safar, 1443

نیب آفس:لیگی رہنماؤں کی ہنگامہ آرائی،پولیس چالان پرپراسکیوشن برانچ کے اعتراضات

SAMAA | - Posted: Jul 19, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Jul 19, 2021 | Last Updated: 2 months ago

نیب آفس میں مریم نواز کی آمد پر لیگی رہنماؤں کی ہنگامہ آرائی کے پولیس چالان پر پراسکیوشن برانچ نے اعتراضات عائد کردئیے ہیں۔

پیر کو لاہور پولیس  نے پاکستان مسلم لیگ نون کی رہنما مریم نواز کی نیب آفس پیشی کے موقع پر ہنگامہ آرائی کیس کا چالان پراسکیوشن برانچ میں جمع کرادیا ہے۔چالان میں  مریم نواز،رانا ثنا اللہ، خواجہ برادرن اور اہم لیگی رہنماؤوں سمیت 190 ملزمان کو نامزد کردیا گیا ہے۔ کیپٹن ریٹائرڈ صفدر،جاوید لطیف، پرویز رشید، دانیال عزیز، سیف الملوک اور خواجہ عمران نذیر بھی ملزم نامزد کئے گئے ہیں۔

متن میں درج ہے کہ ملزمان نے مریم نواز کی نیب آفس پیشی کے موقع پر ہنگامہ آرائی اور توڑ پھوڑ کی۔ ملزمان کی توڑ پھوڑ سے 13 پولیس اہلکار زخمی ہوئے۔چالان میں پراسکیوشن کے 72گواہوں کو شامل کیا گیا ہے جبکہ نیب کے 3 افسران کو بھی بطور گواہ شامل کیا گیا ہے۔

پراسکیوشن برانچ نے پولیس کی جانب سے جمع کرایے گئے چالان پر اعتراضات عائد کردیے ہیں۔یہ اعتراض اٹھایا گیا ہےکہ چالان میں  پولیس اہلکاروں کے بیانات کو واضح طور نہیں لکھا گیا اور واقعہ کی فوٹیجز کا فرانزک کروا کر چالان کے ساتھ لف نہیں کی گئی۔ اس لئے چالان درست کر کے دوبارہ پراسکیوشن برانچ میں جمع کرایا جائے۔

واضح رہے کہ تھانہ چوہنگ پولیس نے 12اگست 2020 کو نیب آفس ہنگامہ آرائی کا مقدمہ درج کیا تھا۔ رانا ثناءاللہ ، سردار ایاز صادق سمیت نون لیگ کی دیگر قیادت نے انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت سے ضمناتیں کرا رکھی ہیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube