Friday, September 24, 2021  | 16 Safar, 1443

کراچی: مریض نے اسپتال کی عمارت سے کودکر خودکشی کرلی

SAMAA | - Posted: Jul 14, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Jul 14, 2021 | Last Updated: 2 months ago

کراچی کے علاقے صدر میں واقع نجی اسپتال میں زیر علاج مریض نے اسپتال کی چھت سے کود کر خودکشی کر لی۔ 

صدر پولیس کے مطابق 28سالہ شخص 13جولائی کو صدر میں واقع تاج میڈیکل سینٹر میں قائم ہمدرد یونیورسٹی اسپتال میں علاج کے لیے آیا تھا۔

پولیس حکام نے بتایا کہ متوفی ٹائیفائیڈ اور بخار کے عارضے میں مبتلا تھا۔ مرنے والے شخص کا تعلق بلوچستان کے ضلع لسبیلہ سے تھا اور وہ کراچی آنے سے پہلے آٹھ روز تک بلوچستان کے کسی سرکاری اسپتال میں زیر علاج رہا اور بخار میں کمی نا ہونے کے سبب اس کو 13جولائی بروز منگل تاج میڈیکل سینٹر میں واقع ہمدرد یونیورسٹی اسپتال لایا گیا جہاں اس نے اسپتال کی دسویں منزل سے کود لگا کر خودکشی کر لی۔

ریاض کے چاچا، جو اس کے ساتھ اس کا علاج کروانے کراچی لائے تھے، نے سما ڈیجیٹل کو بتایا کہ بھتیجا گزشتہ کئی روز سے بخار میں مبتلا تھا اور اس کا بخار کم نا ہونے کی وجہ سے اسے گزشتہ روز کراچی شفٹ کیا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ جس وقت یہ واقعہ پیش آیا اس وقت وہ سو رہا تھا اور اسپتال انتظامیہ نے اسے جگا کر اطلاع دی کہ اس نے خود کشی کر لی ہے۔

اس واقعہ کے فورا بعد اطلاعات موصول ہوئیں کہ صدر میں واقع نجی اسپتال میں زیر علاج مریض نے زیادہ بل بنانے پر اسپتال کی بلڈنگ کی چھت سے کود کر خودکشی کی لیکن ریاض کے چاچا نے ان اطلاعات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ اسپتال انتظامیہ نے اسے 20ہزار روپے جمع کروانے کو کہا تھا جو اس نے جمع کروا دیے اور بھتیجے کے علاج کے لیے پیسوں کا بھی مسئلہ نہیں تھا۔

انکا کہا تھا کہ اسپتال میں داخلے کے فورا بعد بھتیجے کے ٹائیفائید سمیت تمام ٹیسٹ کیے گئے اور اس واقعہ سے قبل تمام رپورٹس بھی آ گئیں جس میں یہ ثابت ہوگیا کہ مریض مکمل تندرست ہے۔

دوسری طرف پولیس نے ضابطے کی کاروائی کے لیے لاش کو جناح پوسٹ گریجویٹ میڈیکل سینٹر منتقل کر کے تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube