Sunday, September 19, 2021  | 11 Safar, 1443

غیررجسٹرڈ کاروبار پر ٹیکس عائد نہیں کیاجاسکتا،لاہورہائیکورٹ

SAMAA | - Posted: Jul 13, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Jul 13, 2021 | Last Updated: 2 months ago

فائل فوٹو

لاہور ہائيکورٹ نےغير رجسٹرڈ کاروبار پر ٹيکس کی وصولی روک دی ہے۔

جسٹس راحیل کامران شیخ نے برف کے کارخانوں پر ٹیکس اور ان کی رجسٹریشن سے متعلق 8 صفحات پر مشتمل فیصلہ جاری کردیا ہے۔ درخواست گزار محمد عارف نے لیسکو اور ایس این جی پی ایل کی طرف سے ‘مزید ٹیکس’ اور ‘ایکسٹرا ٹیکس’ کے خلاف درخواست دائر کی تھی۔

عدالت نے برف بنانے والے کارخانوں کو ٹیکس کی چھوٹ دیتے ہوئے کاروبار رجسٹرڈ کرنے کی پابندی بھی ختم کردی ہے۔عدالت نے درخواست گزار کی درخواست کو منظور کرتے ہوئے اسے ‘مزید ٹیکس’ اور ‘ایکسٹرا ٹیکس’ دینے سے روک دیا ہے۔

جسٹس راحیل کامران شیخ نے کہا ہے کہ جو کاروبار رجسٹر نہیں وہ  ٹیکس اور ایکسٹرا ٹیکس بھی دینے کا پابند نہیں ہے۔ جن کاروبار پر رجسٹریشن کی شرط نہیں اس کو مزید ٹیکس اور ایکسٹرا ٹیکس دینے پر مجبور کرنا بنیادی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔

جسٹس راحیل کامران شیخ نے فیصلے میں کہا ہے کہ کسی شہری کے کاروبارکوبغیر رجسٹریشن کے مزید ٹیکس اور ایکسٹرا ٹیکس دینے پر مجبور نہ کیا جائے۔

عدالتی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ درخواست گزار پہلے ہی بجلی اور گیس کے بلوں کی مد میں سیلز ٹیکس کی ادائیگی کررہا ہے۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ درخواست گزار محمد عارف ایک برف کا کارخانہ چلاتا ہے جہاں بجلی اور گیس کا میٹر لگا ہوا ہے اور بجلی اور گیس کے بل کی مد میں سیلز ٹیکس دیا جا رہا ہے۔ سیلز ٹیکس کے علاوہ لیسکو اور ایس این جی پی ایل کی جانب سے 3 فیصد’ مزید ٹیکس’ اور ‘ ایکسٹرا ٹیکس بھی دینے کا کہا گیا ہے۔ سب سے پہلا سوال یہ ہے کہ ایک شخص جو کوئی ایسی چیز بنا رہا ہے جس پر ٹیکس نہیں لگتا اس کو رجسٹرڈ ہونے کی ضرورت ہے کہ نہیں۔ سیکشن 14 کی رو سے ان کاروبار کی رجسٹریشن لازمی ہے جس میں کوئی امپورٹ، ایکسپورٹ، ریٹیلر، ہول سیلر، ڈیلر، ڈسٹریبیوشن وغیرہ پر ٹیکس لگتا ہے۔ صرف اس کیس کی بات کی جائے تو درخواست گزار برف بناتا ہے اور اس پر ٹیکس نہیں لگتا۔اگر برف خانوں میں برف بنتی ہے اور امپورٹ ایکسپورٹ نہیں ہوتی تو قانون میں ایسی کوئی شق نہیں جس کہ مطابق اس کو رجسٹر کرنا لازمی ہے۔درخواست گزار وفاقی قانون کے مطابق بھی اس کاروبار کو رجسٹر کرنے کا مجاز نہیں رکھتا۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ سب سے اہم سوال اب یہ ہے کہ آیا کوئی شخص جو کچھ ایسا بنائے جس پر ٹیکس کی چھوٹ ہو وہ مزید ٹیکس اور ایکسٹرا ٹیکس دیگا یا نہیں، فیصلہ

سیکشن 3 کی روح سے کوئی شخص کچھ بھی بنائے جس پر ٹیکس کی چھوٹ ہو اس پر مزید ٹیکس اور ایکسٹرا ٹیکس لاگو نہیں ہوگا۔درخواست گزار کا برف بیچنا سیلز ٹیکس کے لیوی ٹیکس میں نہیں آتا، جیسا کہ درخواست گزار کا برف بیچنا اور بنانا ٹیکس کی چھوٹ میں آتا ہے تو اس کو رجسٹر ہونے کی بھی ضرورت نہیں ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube