Thursday, September 23, 2021  | 15 Safar, 1443

جعلی بھرتی کیس:سندھ حکومت کی جادوئی کارکردگی پرسپریم کورٹ حیران

SAMAA | - Posted: Jul 7, 2021 | Last Updated: 3 months ago
Posted: Jul 7, 2021 | Last Updated: 3 months ago

فوٹو: آن لائن

جعلی بھرتی کیس میں محکمہ خزانہ سندھ کی جادوئی کارکردگی پر سپریم کورٹ نے سوال اٹھا دیا۔ پوچھا کہ ایک ہی دن میں 10 ہزار ٹیسٹ ہوئے، نتائج آگئے، انٹرویو ہوگئے اور حتمی فہرست بھی جاری ہوگئی؟۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ عدالت کو 10 ہزار جوابی پرچے بھی دکھانا ہوں گے۔ عدالت عظمیٰ نے کیس سندھ ہائیکورٹ کو بھجوا دیا۔

سندھ میں جعلی بھرتیوں سے متعلق کیس کی سماعت سپریم کورٹ آف پاکستان میں چیف جسٹس کی سربراہی میں بینچ نے کی۔ عدالت عظمیٰ نے محکمہ خزانہ سندھ کے چمتکار پر حیرانی کا اظہار کرتے ہوئے کیس سندھ ہائیکورٹ کو واپس بھجوا دیا۔

سپریم کورٹ نے عدالت عالیہ کو گریڈ ایک سے 16 تک کے ملازمین کی بھرتیوں کے ریکارڈ کی مکمل چھان بین کا حکم دیتے ہوئے یہ بھی واضح کر دیا کہ گریڈ 17، 18 اور 19 کی بھرتیاں پبلک سروس کمیشن کے ذریعے ہی ہوسکتی ہیں۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ ایک ہی دن میں 10 ہزار سے زائد امیدواروں کے ٹیسٹ ہوئے، نتائج آگئے، انٹرویو ہوگئے اور اسی دن حتمی فہرست بھی جاری کردی گئی، کچھ تو خدا کا خوف کریں۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ 10 ہزار سوالنامے تو تیار کر ہی لیں گے لیکن عدالت کو حل شدہ پرچے بھی دکھانا ہوں گے، غیر قانونی بھرتیوں کے پیچھتے کیا کچھ ہوتا ہے سب معلوم ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube