Tuesday, October 19, 2021  | 12 Rabiulawal, 1443

پیپلزپارٹی کا طرزعمل اپوزیشن کمزور کرنےکےمترداف ہے،احسن اقبال

SAMAA | - Posted: Jun 29, 2021 | Last Updated: 4 months ago
Posted: Jun 29, 2021 | Last Updated: 4 months ago

پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما احسن اقبال نے اسمبلی اجلاس میں شہباز شریف کی عدم شرکت پر پیپلز پارٹی کی تنقید کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایسا طرز عمل اپوزیشن کو کمزور کرنے کے مترادف ہے۔
سماء کے پروگرام ندیم ملک لائیو میں گفتگو کرتے ہوئے احسن اقبال کا کہنا تھا کہ پیپلزپارٹی شرارت کررہی ہے اور اسے ایسے غیرذمہ دارانہ بیانات نہیں دینے چاہئیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کو فنانس بل میں ہرانا ناممکن تھا۔
احسن اقبال کا کہنا تھا کہ اپوزیشن لیڈر شہبازشریف کے کزن کا انتقال ہوا ہے اس لیے وہ آج کے اجلاس میں شرکت نہیں کرسکے لیکن اگر اپوزیشن 100 فیصد حاضری بھی یقینی بناتی تب بھی ہمارے پاس اکثریت نہیں تھی۔
رہنما ن لیگ کا کہنا تھا کہ ہمارے اراکین نے آج کے اجلاس میں بھرپور شرکت کی پیپلزپارٹی والے صرف اپوزیشن اتحاد میں دراڑ ڈالنے کی کوشش کررہی ہے۔
احسن اقبال کا کہنا تھا کہ یہ تاثر دینا کہ بجٹ مسلم لیگ ن کی وجہ سے پاس ہوا گمراہ کن ہے ورنہ اراکین تو پیپلزپارٹی کے بھی اجلاس سے غیرحاضر رہے۔
انہوں نے کہا کہ آج شہبازشریف کے خلاف پیپلزپارٹی اور تحریک انصاف یک زبان ہیں جس کا مطلب یہ ہے کہ دونوں کا ہدف ایک ہے۔
احسن اقبال کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ ن میں اختلاف رائے ضرور ہے اور اس میں ایک نہیں 6 قسم کی سوچ رکھنے والے ہوسکتے ہیں مگر پارٹی نوازشریف کے بیانیے پر یکسو ہے۔ اور شہبازشریف کے منگل کو اسمبلی میں اجلاس میں شرکت نہ کرنے کو ایشو نہیں بنانا چاہیے۔
احسن اقبال کا کہنا تھا کہ اپوزیشن کے دباؤ میں آکر حکومت کو بہت سارے اقدامات واپس لینے پڑے اور یہ اپوزیشن کی کامیابی ہے جس نے حکومت کو پیچھے ہٹنے پر مجبور کیا۔
انہوں نے کہا کہ ہمارے دور حکومت میں پی آئی اے کے جہاز شمالی امریکا تک جاتے تھے مگر آج یورپ جانے پر بھی پابندی ہے اور یہ ادارے بنائے جارہے ہیں۔
احسن اقبال کا کہنا تھا کہ جو کچھ بجٹ اجلاس اور آج سندھ اسمبلی میں ہوا اس کی وجہ یہ ہے الیکشن 2018 میں ان لوگوں کو اٹھاکر سیٹوں پر بٹھایا گیا جو کونسلر بھی نہیں بن سکتے تھے۔
پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے وزیرمملکت پارلیمانی امور علی محمد خان کا کہنا تھا کہ حکومت کے تمام سپورٹرز کو آج بجٹ پاس ہونے کی مبارکباد دیتا ہوں جبکہ جو کہتے تھے کہ بجٹ پاس نہیں ہوگا آج ان کےلیے یوم سیاہ ہے۔
علی محمد خان کا کہنا تھا کہ صدر ن لیگ بجٹ پاس نہ ہونے دینے کے دعوے کرتے تھے مگر آج کے اجلاس سے غائب تھے، وہ کدھر ہیں کیا ان کے لیے تلاش گمشدہ کا اشتہار لگایا جائے۔
انہوں نے کہا کہ جو ہم کہتے تھے کہ مسلم لیگ ن میں سے ش نکلے گا آج کا اجلاس اسی کا عملی نمونہ تھا آج شہبازشریف نے اجلاس میں شریک نہ ہوکر نوازشریف کو ایک پیغام دیا ہے۔
علی محمد خان کا کہنا تھا کہ کرونا کی باوجود ملک کی معاشی صورتحال بہتری کی جانب گامزن ہے اور بجٹ میں بھی غریب عوام اور تاجروں کو ریلیف دیا گیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ اپوزیشن دو چیزوں سے امید لگا کر بیٹھی تھی ایک وہ معاشی صورتحال جو یہ چھوڑ کر گئے تھے اور دوسری کرونا کی وباء مگر اللہ کے کرم اور وزیراعظم کی حکمت عملی سے ہم دونوں مسائل سے نمٹنے میں کامیاب ہوگئے۔
علی محمد خان کا کہنا تھا کہ ایک ایسے وقت میں جب دنیا کی مضبوط معیشتیں زوال پذیر ہیں ہماری گروتھ بڑھ رہی ہے اور یہی بات اپوزیشن کو پریشان کررہی ہے۔

رہنما تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ ماضی میں ملک کو مستحکم ہونے نہیں دیا گیا بلکہ مصنوعی طریقے سے چلایا جارہا تھا۔
علی محمد خان کا کہنا تھا کہ اگر کوئی عمران خان کے قریب ہے تو اسے کسی غلط کام کا لائسنس نہیں مل جاتا اور وہ بھی احتساب سے نہیں بچ سکتا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube