Wednesday, September 22, 2021  | 14 Safar, 1443

دین میں سورج گرہن کےدوران کام نہ کرنےکا تذکرہ نہیں،مفتی زبیر

SAMAA | - Posted: Jun 10, 2021 | Last Updated: 3 months ago
SAMAA |
Posted: Jun 10, 2021 | Last Updated: 3 months ago

چاند کےسورج اور زمین کے بیچ آنے کی وجہ سے سورج گرہن ہوتا ہے

مفتی زبیر نے کہا ہے کہ شریعت اور قرآن میں سورج گرہن کے دوران گھر کے کام نہ کرنے اور حاملہ عورتوں کو اندر رہنے سے متعلق کوئی تذکرہ نہیں ہے۔

سماء کے پروگرام نیا دن میں بات کرتے ہوئے ماہر فلکیات جاوید اقبال نے بتایا کہ سورج گرہن عام طور پر سال میں دو بار ہوتے ہیں۔ چاند کے سورج اور زمین کے بیچ آنے کی وجہ سے سورج گرہن ہوتا ہے۔اس دوران دن کے وقت سورج کی شعائیں زمین تک نہیں پہنچتی ہیں۔مکمل سورج گرہن کے دوران کچھ ستارے دکھائی دیتے ہیں اور اس حوالے سے کچھ تجربات بھی کیے جاتے ہیں۔

مذہبی اسکالر مفتی زبیر نے بتایا کہ سورج اورچاند کا گرہن ہونا اللہ کی نشانیوں کے معاملات ہیں۔ اس دوران اللہ کا ذکر کرنا چاہئے۔مفتی زبیر کا کہنا تھا کہ سورج گرہن کے دوران حاملہ عورت کو کام کرنے سے روکنا شریعت اور قرآن مجید میں نہیں ہے۔ نہ  کسی حدیث میں ایسی کوئی بات آئی ہے تاہم طبی معاملے میں ایسا ہوسکتا ہے۔

پاکستانی وقت کےمطابق سورج گرہن دوپہر 1 بج کر 12 منٹ پر شروع ہوا ہے اور دوپہر 3  بج کر 42منٹ پر سورج گرہن اپنے عروج پر ہوگا۔سورج گرہن کا اختتام شام 4 بج کر 34 منٹ پر ہوگا۔اس کا مکمل دورانیہ پاکستان میں 3 گھنٹے 22 منٹ ہوگا۔

سورج گرہن روس، گرین لینڈ، شمالی کینیڈا، شمالی ایشیا، یورپ اور امریکا میں دیکھا جاسکے گا۔سورج گرہن کے دوران اس کا رِنگ آف فائر دیکھا جاسکے گا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube