Tuesday, August 3, 2021  | 23 Zilhaj, 1442

ڈہرکی ریل گاڑی حادثہ،جاں بحق افرادکی تعداد48ہوگئی،200 زخمی

SAMAA | - Posted: Jun 7, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Jun 7, 2021 | Last Updated: 2 months ago

گھوٹکی کے ريتی ريلوے اسٹيشن کے ریل گاڑی کے حادثے میں جاں بحق افراد کی تعداد 48 تک جا پہنچی ہے۔ حادثے میں 200 سے زائد افراد زخمی بھی ہوئے۔

ریلوے انتظامیہ کے مطابق ریتی ریلوے اسٹیشن کے قريب ملت ايکسپريس کی 4 بوگياں ٹريک سے اتريں تو دوسرے ٹريک پر آنے والی سرسيد ايکسپريس نے ٹکر مار دی۔

ريلوے حکام کا کہنا ہے کہ حادثے کی تحقيقات کررہے ہيں، حقائق سامنے لائيں گے، تاہم مسافروں نے الگ کہانی سنائی اور میڈیا کو بتایا کہ ملت ايکسپريس پہلے سے ہی خراب تھی، جس کا ريلوے حکام کو بھی عمل تھا۔ بروقت اقدامات کيے جاتے تو درجنوں خاندان متاثر نہ ہوتے۔

مسافروں کا کہنا تھا کہ حکام کو معلوم تھا کہ ملت ايکسپريس کا کلمپ ٹوٹا ہوا ہے۔ حادثہ اتوار اور پیر کی درمیانی شب رات ساڑھے 3 بجے ہوا۔ حادثے میں کراچی سے سرگودھا جانے والی ملت ایکسپریس کی 4 بوگياں گھوٹکی کے ريتی اسٹيشن پر اپنا ٹريک چھوڑ کر دوسرے ٹريک پر گری ہوئی تھیں کہ اسی دوران مسافر سنبھلنے ميں کوشاں تھے کہ اسی ٹريک پر آنيوالی سرسيد ايکسپريس نے بوگيوں کو ٹکر دے مار دی۔

ایک عينی شاہد مسافر نے حادثے ميں اپنی بيوی، بيٹی اور دوست کو کھويا۔ موقع پر امدادی کارروائياں اب بھی جاری ہيں۔ ريلوے حکام کے مطابق تحقيقات کے بعد حادثے کی وجوہات سامنے لائی جائيں گی۔

معلومات کیلئے رابطہ نمبر

محکمہ ریلوے سکھر ڈویژن نے انفارمیشن ڈیسک کا ٹیلی فون نمبر جاری کردیا اور کہا ہے کہ مسافروں کے رشتہ دار 0719310087 پر رابطہ کریں۔

گھوٹکی ٹرین حادثے میں کی معلومات حاصل کرنے کےلیے ریلوے حکام نے نمبرز جاری کردیے۔

فیصل آباد سے 0419200488اور 03334805996، راولپنڈی سے 0519270834، روہڑی اور سکھر سے 0715813433، 0719310087 جبکہ کراچی سے 03003754200 ان نمبرز پر رابطہ کیا جاسکتا ہے۔

ڈپٹی کمشنر کے مطابق حادثے ميں ٹرین کی تینوں بوگياں مکمل طور پر تباہ ہوگئی ہیں جبکہ ملبے تلے دبی لاشوں کو نکال لیا گیا ہے۔

گھوٹکی ٹرین حادثے میں ریلوے کے دو ملازمین کانسٹیبل دلبرحسین اور کانسٹیبل علی ناصر بھی جاں بحق ہوگئے۔ ترجمان ریلوے کے مطابق دونوں اہلکاروں کا تعلق ریلوے ملتان ڈویژن سے تھا، جاں بحق اہلکار علی ناصر کی اگلے ماہ شادی تھی۔

گھوٹکی کے قريب حادثے کے بعد دونوں ٹريک پر ٹرينوں کی آمد و وفت بند کردی گئی ہے جبکہ ديگر ٹرينوں کو مختلف اسٹيشنوں پر روک لیا گیا ہے، جس کے باعث مسافر شدید پریشانی کا شکار ہیں۔

دوسری جانب ترجمان سندھ رینجرز کا کہنا ہے امدادی سرگرمیوں کےلیے رینجرز اہکاروں کا ایک دستہ جائے حادثہ پر پہنچ گیا ہے۔

وزیراعظم عمران خان کا بیان

وزیراعظم عمران خان نے گھوٹکی ٹرین حادثہ پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے وفاقی وزیر ریلوے اعظم سواتی کو جائے حادثہ پر پہنچے کی ہدایت کردی ہے جبکہ حادثے میں زخمی ہونے والوں کو فوری امداد فراہم کرنے حکم دیا ہے۔

عمران خان کا کہنا ہے کہ حادثے میں جاں بحق ہونے والوں کے لواحقین کی فوری امداد کرنے اور ریلوے سیفٹی میں خرابیوں کی جامع تحقیقات کا حکم دیا ہے۔

آئی ایس پی آر کا بیان

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق پاک فوج کے ڈاکٹرز اور پیرامیڈیکل اسٹاف حادثے کی جگہ پہنچ چکے ہيں۔

اس سے قبل پاکستان ریلویز نے 6 مارچ کو روہڑی کے مقام پر ہونیوالے ٹرین حادثے میں کوتاہی پر 5 افسران کو معطل کیا تھا جبکہ حادثے میں خاتون جاں بحق اور 30 مسافر زخمی ہوئے تھے۔

واضح رہے کہ وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید کے دور میں سانحہ تیزگام ٹرین حادثے میں 75 افراد جاں بحق ہوئے تھے۔ ٹرین حادثے میں جاں بحق افراد کی لاشوں کی شناخت لواحقین کے ڈی این اے میچ کروا کر حوالے کی گئی تھیں۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube