Thursday, August 5, 2021  | 25 Zilhaj, 1442

پیپلزپارٹی نےاعتماد توڑا،اعتماد بحال کرے ورنہ راہیں جداہی ہیں،شاہدخاقان

SAMAA | - Posted: Jun 1, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Jun 1, 2021 | Last Updated: 2 months ago

کشمیر پر موقف کمزور ہوگیا تو اِس کی تلافی کون کرے گا

شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی کو پی ڈی ایم میں واپس لانے کی کوئی کوشش نہیں کی جارہی ہے۔

منگل کو اسلام آباد کی احتساب عدالت میں ایل این جی کیس کی سماعت کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی  نے بتایا کہ  یہ یاد نہیں ہے کہ اس کیس میں کتنے سال اور پیشیاں ہوچکی ہیں۔ مطالبہ کیا ہے کہ کیمرے لگا کر کیس کی سماعت کریں تاکہ عوام کو نیب کی حقیقت پتہ چلے اور دیکھ سکیں کہ کون سی کرپشن کی ہے۔

نیب سے متعلق شاہد خاقان کا کہنا تھا کہ یہ وہ ادارہ ہے جس نے آج پاکستان کو مفلوج کر دیا ہے اور اس کی وجہ سے پاکستان کو ناقابلِ یقین حد تک نقصان پہنچا رہا ہے۔سینکڑوں ارب روپے کی حکومتی کرپشن کے کیس نیب کو نظر نہیں آتے۔

آزاد کشمیر انتخابات پر شاہد خاقان نے کہا کہ آزاد کشمیر کے الیکشن ملتوی کروانے کیلئے این سی او سی نے خط لکھا ہے جو ایک ملی بھگت ہے۔ انھوں نے سوال اٹھایا کہ دھاندلی کیلئے این سی او سی کا الیکشن سے کیا تعلق ہے۔ شاہد خاقان نے این سی او سی کا آزاد کمشیر کا الیکشن ملتوی کرنے کا خط واپس لینے کا مطالبہ بھی کیا۔

لیگی رہنما نے یہ بھی کہا کہ جو گلگت بلتستان میں ہوا ہے وہ ہی  تاریخ آزاد کشمیر میں دہرانے کی کوشش کی جارہی ہے۔ پوری مشینری کی کوششوں کے باوجودہ پاکستان مسلم لیگ نون کا ایک بندہ بھی نہیں توڑ سکے۔

انھوں نے مزید کہا کہ آزادکشمیر میں دھاندلی کرکے دنیا کو کیا منہ دکھائیں گے اور ہندوستان کے سامنے کیا پوزیشن ہوگی۔آزادکشمیر میں جب الیکشن چوری ہوگا تو کشمیر پر موقف میں کیا حیثیت رہ جائے گی۔

انھوں نے یہ بھی سوال اٹھایا کہ کیا پاکستان میں ، گلگت بلتستان میں کورونا کے دوران الیکشن نہیں ہوئے؟ امن کی باتیں کررہے ہیں لیکن پہلے ووٹ کو توعزت دیں۔ کشمیر پر موقف کمزور ہوگیا تو اِس کی تلافی کون کرے گا۔

اپوزیشن اتحاد سے متعلق شاہد خاقان کا کہنا تھا کہ جس نے اعتماد توڑا ہے وہ اعتماد بحال کرے ورنہ راہیں جدا ہیں۔ پیپلز پارٹی اور اے این پی اس وقت پی ڈی ایم کا حصہ نہیں ہیں۔

WhatsApp FaceBook
PDM

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube