راولپنڈی رنگ روڈ اسکینڈل میں وفاقی وزراء ملوث ہیں،عطاتارڑ

SAMAA | - Posted: May 12, 2021 | Last Updated: 1 month ago
Posted: May 12, 2021 | Last Updated: 1 month ago

رہنماء مسلم لیگ ن عطاء تارڑ کا کہنا ہے کہ رنگ روڈ بڑا اسکینڈل ہے، جس میں 2 ارب 30 کروڑ روپے سرکاری خزانے سے ادا ہوچکے ہیں، پاکستانی عوام کے ٹیکس کا پیسہ حکومتی وزراء کے جیبوں میں جاچکا ہے۔

عطاء تارڑ کا کہنا تھا کہ ہمارے دور میں یہ 40 کلو میٹر کا منصوبہ تھا جس کو موجودہ حکومت نے مرضی کے ٹھیکیدار کو دے کر 66 کلومیٹر تک بڑھادیا۔

انہوں نے کہا کہ رنگ روڈ کو وفاقی وزیر غلام سرور خان کے ہاؤسنگ سوسائٹی کے دروازے تک پہنچایا گیا جبکہ ایک کلومیٹر اسلام آباد کا شامل کیا گیا جہاں زلفی بخاری کے رشتہ دار رہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ انکوائری لیٹر میں لکھا ہے کہ یہ ٹھیکہ اور ادائیگی دونوں غلط طریقے سے کی گئی ہے۔ اگر ہمت ہے تو وزیراعظم چیف جسٹس کو خط لکھیں اور معاملے پر جوڈیشل کمیشن بنائیں۔

عطاء تارڑ نے سوال کیا کہ کیا چیئرمین نیب اس معاملے کا نوٹس لے کر غلام سرور خان اور زلفی بخاری کو طلب کریں گے۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ رنگ روڈ منصوبے کے پی سی ون اور نظرثانی کی منظوری عثمان بزدار نے وزیراعظم عمران خان کے کہنے پر دی تھی۔

ن لیگی رہنماء کا کہنا ہے کہ شہباز شریف کو جب کینسر کا مرض لاحق ہوا تو اس وقت وہ جلاوطن تھے اور جن سے علاج کرارہے ہیں اسی ڈاکٹر نے خط لکھا ہے کہ آپ واپس آجائیں آپ کو چیک اپ کی ضرورت ہے۔

پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے رہنماء تحریک انصاف کنول شوذب کا کہنا تھا کہ رنگ روڈ اسکینڈل میں زلفی بخاری کا نام اس وجہ سے لیا جارہا ہے کیونکہ زلفی بخاری اسکینڈل میں مبینہ طور پر ملوث توقیر شاہ کے رشتہ دار ہیں۔

انہوں نے کہا کہ توقیر شاہ، شہباز شریف کا قریبی آدمی ہیں اور ن لیگ حکومت میں پنجاب کے کرتا دھرتا تھے، ابتدائی رپورٹ میں اسکینڈل میں بیوروکریٹ کے نام آرہے ہیں۔

کنول شوذب کا کہنا تھا کہ وزیراعظم نے ہی اس معاملے کا نوٹس لیا تھا اور اس کیس کی تحقیقات وزیراعظم خود کررہے ہیں اور بغیر کسی تفریق کے معاملے کو دیکھ رہے ہیں۔

کنول شوذب کا کہنا تھا کہ ماضی میں ججوں کی ویڈیوز بنانے والے ن لیگ کے ہی لوگ تھے جبکہ فوج پر الزامات بھی پی ڈی ایم کے پلیٹ فارم سے ہی لگتے رہے ہیں۔

رہنماء پیپلزپارٹی مولابخش چانڈیو کا کہنا تھا کہ ابھی اور انتظار کریں حکومتی کشتی ڈوبنے لگی ہے، ابھی مزید اسکینڈل سامنے آتے رہیں گے یہ تو ابھی شروعات ہے۔

مولا بخش چانڈیو کا کہنا تھا کہ حکومت نے ابھی تک عوام کیلئے کوئی کام نہیں کیا، سوائے سیاسی مخالفین کو گالیاں دینے کے، انہوں نے کہا کہ حکومت اس پر خوش ہے کہ سعودی عرب سے صدقے کے چاول لے کر آئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ غلام سرور نے ایک وزارت میں تباہی کی تو اس سے سوال پوچھنے کے بجائے دوسری وزارت دیدی گئی۔

رہنماء پیپلزپارٹی کا کہنا تھا کہ حکومتی وزراء پر الزامات لگ رہے ہیں ان کو سامنے آکر جواب دینا پڑے گا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت سپریم کورٹ کو بھی تحقیقات کیلئے درخواست دے سکتی ہے لیکن انہوں نے تو عدلیہ پر بھی تنقید شروع کردی ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube