Tuesday, September 28, 2021  | 20 Safar, 1443

عمران خان کوبتادیا کہ شہزاداکبر قبول نہیں، نذیر احمد چوہان

SAMAA | - Posted: Apr 28, 2021 | Last Updated: 5 months ago
SAMAA |
Posted: Apr 28, 2021 | Last Updated: 5 months ago

تحریک انصاف کے رکن پنجاب اسمبلی نذیر احمد چوہان کا کہنا ہے کہ ہم نے وزیراعظم کو بتادیا ہے کہ شہزاداکبر ہمیں کسی صورت قبول نہیں ہیں۔

سماء کے پروگرام آواز میں گفتگو کرتے ہوئے رہنماء تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ منگل کی ملاقات میں وزیراعظم عمران خان کو جہانگیرترین کیس سے متعلق بریف کردیا ہے کہ اس سلسلے میں اداروں پر دباؤ ڈالا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جہانگیرترین کے خلاف درج مقدمات میں چینی کا ذکرتک نہیں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جہانگیرترین نے تحریک انصاف کیلئے قربانیاں دی ہیں اور آج وہ پارٹی سے باہر بیٹھے ہیں، ان کے ساتھ انصاف کیاجائے اگر وہ غلط ثابت ہوتے ہیں تو ہم ان کا ساتھ نہیں دیں گے۔

نذیرچوہان کا کہنا تھا کہ وزیراعظم نے بیرسٹر علی ظفر کو کیس کا انچارج بنایا ہے اور اب شہزاداکبر اس کیس کے انچارج نہیں رہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ وزیراعظم نے یقین دہانی کرائی ہے کہ اس کیس کو وہ خود دیکھیں گے اور کسی کے ساتھ ناانصافی نہیں ہونے دیں گے۔

احتسابی عمل پر اپوزیشن کے تحفظات سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ اپوزیشن رہنماؤں کے خلاف کیسز موجودہ دور حکومت میں نہیں بنے یہ ان کے اپنے ادوار میں ایک دوسرے کے خلاف بنائے گئے کیسز ہیں۔

نذیرچوہان کا کہنا تھا کہ ہم چاہ رہے ہیں کہ جہانگیرترین کا احتساب بھی علیم خان اور سبطین خان کی طرح آزادانہ ہو۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ وزیراعظم کو کسی نے غلط مشورہ دیا تھا کہ جہانگیرترین پر کیسز بناکر یہ  ثابت کیا جائے کہ ہم بلاتفریق احتساب کررہے ہیں۔

شاہ محمود قریشی کے حالیہ بیان سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ ان کا اقدام جلتی پر تیل ڈالنے کے مترادف تھا اور جہانگیرترین کا یہ مقصد ہرگز نہیں کہ پارٹی کو کمزور کیا جائے۔

نذیر چوہان کا کہنا تھا کہ ہم شاہ محمودقریشی کے بیان کو اہمیت نہیں دیتے کیوں کہ بااصول لوگوں کو عہدوں کی ضرورت نہیں ہوتی جبکہ کچھ لوگوں کے پاس عہدوں کے باوجود کردار نہیں ہوتا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube