پاکستان مسلم لیگ ن کےایم این اے جاوید لطیف گرفتار

SAMAA | - Posted: Apr 27, 2021 | Last Updated: 3 months ago
SAMAA |
Posted: Apr 27, 2021 | Last Updated: 3 months ago

عبوری ضمانت مسترد

 پاکستان مسلم لیگ ن کے ایم این اے جاوید لطیف کو لاہور سیشن کورٹ کے حکم پر سگیاں پل سے گرفتار کر لیا گیا۔

منگل کو سیشن کورٹ میں ریاست مخالف بیان کیس کی سماعت کے موقع پر سرکار نے جاوید لطیف کی ضمانت خارج کرنے کی استدعا کی۔ سرکاری وکیل نے عدالت کو بتایا کہ جاوید لطیف کا متنازعہ بیان اپنے ليڈر کی محبت ميں حدود کو تجاوز کرنے کے مترادف ہے اور بیان فرانزک کیلئے بھجوادیا گیا ہے۔ پراسیکیوشن کا کیس قانون کےتمام تقاضوں کےمطابق ہے اور اس اسٹیج پر جاوید لطیف کی ضمانت نہیں بنتی۔ جاوید لطیف کے کیس میں لگائے گئے سیکشن قابل ضمانت نہیں۔

جاوید لطیف کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ مریم نوازکو قتل کرنے کے لیے ایک سازش تیارکی گئی اور اس سازش کے تناظر میں جاوید لطیف نے یہ بات کی۔ یہ تفتیش کا کیس ہے اور اینکر کے ساتھ جاوید لطیف کا آمنا سامنا کرانا ہے۔ وکیل نےبتایا کہ سی آئی اے لاہوراس کیس کودیکھ رہی ہے اور یہاں کسی دہشت گردکی ضمانت نہیں لگی۔ پولیس کے پاس ان معاملات پر ایف آئی آر درج کرانے کا اختیار ہی نہیں ہے۔وکلاءکے دلائل مکمل ہونے پرسیشن کورٹ نے فیصلہ محفوظ کرلیا۔

فیصلہ سننے سے قبل جاوید لطیف عدالت سے روانہ ہوئے تو پولیس اہلکاروں کی دوڑیں لگ گئیں۔ تاہم لیگی ایم این اے کو سگیاں پل سے گرفتار کرلیا گیا۔

قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہبازشریف نے میاں جاوید لطیف کی گرفتاری کی شدید مذمت کی ہے۔ انھوں نے کہا ہے کہ جاوید لطیف پارٹی کے مخلص ساتھی ہیں اور ان کی گرفتاری پر افسوس ہوا۔ شہباز شریف نے کہا کہ پارٹی کارکنان اور رہنماؤں کی گرفتاریوں سے حکومت کی بوکھلاہٹ نظر آتی ہے۔ملک اور معاشرے کو افہام و تفہیم،برداشت اور ہم آہنگی کے جذبے آگے لے کر جاتے ہیں۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube