پنجاب میں کوئی افسر ایسا نہیں جو بغیرپیسہ لیے لگایا گیا ہو،خاقان

SAMAA | - Posted: Apr 27, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Apr 27, 2021 | Last Updated: 2 months ago

پنجاب میں تاریخ کی بدترین حکومت ہے

شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ پنجاب میں تاریخ کی بدترین حکومت ہےاورہر نظام تباہ ہوچکا ہے۔ کوئی افسر ایسا نہیں جو بغیر پیسے لئے لگایا جائے۔

منگل کو اسلام آباد کی احتساب عدالت میں شاہد خاقان عباسی کے خلاف ایل این جی ریفرنس پر سماعت ہوئی۔ شاہد خاقان عباسی،عبداللہ خاقان و دیگر عدالت میں پیش ہوئے۔ شاہد خاقان نے عدالت کو بتایا کہ وکیل بیرسٹر ظفر اللہ کا کرونا ٹیسٹ ابھی منفی نہیں آیا ہے۔ جج نے شاہد خاقان کو کہا کہ آپ سے کہا تھا کہ بیرسٹر صاحب سے کہیں کہ کسی معاون وکیل کو پیش ہونے کا کہ دیں، معاون وکیل کی موجودگی میں کم از کم نئے گواہ کا بیان تو ریکارڈ ہوجائے۔

شاہد خاقان عباسی نے جج کو جواب دیا کہ بیرسٹر ظفراللہ سے بات کر کے کچھ بتا دیتا ہوں۔ اس پر جج نے اظہار برہمی کرتے ہوئے کہا کہ یہ غلط بات ہے،آپ اب کہہ رہے ہیں کہ بات کرکے بتاؤں گا،آپ لوگ ایسے کریں گے تو روزانہ سماعت کرنا ہوگی۔عدالت نے شاہد خاقان کی واپس جانے کی استدعا بھی مسترد کردی۔

جج نے کہا کہ آپ کے وکیل بھی موجود نہیں توآپ کی موجودگی میں بیان قلمبند ہوگا۔بیرسٹر صاحب سے کہیں وہ یہاں کوئی نمائندہ مقررکریں۔ یہاں وہ کسی وکیل کوآج نامزد کریں گے تب ہی آپ کوجانے دیں گے۔ شاہد خاقان عباسی نے جج سے وکیل کو ٹیلی فون کرنے کی اجازت مانگی تو عدالت نے شاہد خاقان کو وکیل سے رابطے کی مہلت دے دی۔

شاہد خاقان کی جانب سے منوراقبال دُگل ایڈوکیٹ عدالت میں پیش ہوئے۔ منور دُگل نے عدالت کو بتایا کہ شاہدخاقان کے وکیل دو چار روز میں تندرست ہو جائیں گے۔عدالت سے درخواست ہے کہ شاہد خاقان کوجانے کی اجازت دی جائے۔عدالت نےاستدعا منظورکرتے ہوئے سابق وزیراعظم کو جانے کی اجازت دیدی۔

اسلام آباد کی احتساب عدالت کےباہرمیڈیا سے بات کرتےہوئے سابق وزیراعظم شاہدخاقان عباسی نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ  ملک ترقی کررہا ہے، ہم ان سے یہ پوچھتے رہتے ہیں کہ کہاں ترقی کررہا ہے۔ عمران خان ہر روز تقریر کرتےہیں۔ ان کو چاہئے کہ بتائیں کہ کون سے شعبے میں ترقی ہورہی ہے۔ اس وقت ملک میں ہر شخص مہنگائی سے پریشان ہے اور بے روزگاری بڑھ رہی ہے۔

شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ کابینہ میں وزیر روز بدلے جاتے ہیں۔ جس پاکستان میں ہم رہتے ہیں وہاں ہرشخص پریشان ہے۔ پارلیمان میں عوام کی نہ بات ہوئی نہ ہی امید ہے کہ ہوگی۔

انھوں نے یہ بھی کہا کہ کشمیر کے مسئلے پر ہر روز نئے بیان سامنے آتے ہیں۔ جس مسئلے پرکوئی دو رائے نہیں تھی وہ سب سے متنازعہ بن چکا ہے۔ آج ہر پاکستان سوال کررہا ہے کہ ملک کدھر جا رہا ہے اورمیری زندگی کا کیا ہوگا۔

ن لیگ کی حکومت گرانے سے متعلق پالیسی کے سوال پر انھوں نے کہا کہ مریم نواز نے کہا ہے کہ جو عمران خان کو لائے ہیں اللہ کرے وہ پانچ سال پورے کریں تا کہ انہیں پتہ لگے ۔

کرونا سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ آج لاک ڈاؤن کوئی حل نہیں ہے۔اس وقت حل لوگوں کو ماسک پہنانے اور ویکسین لگانے میں ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube