پیپلزپارٹی کاپی ڈی ایم کےتمام عہدوں سے مستعفی ہونے کافیصلہ

SAMAA | - Posted: Apr 12, 2021 | Last Updated: 4 weeks ago
SAMAA |
Posted: Apr 12, 2021 | Last Updated: 4 weeks ago

پیپلزپارٹی، اے این پی سے معافی مانگی جائے

پیپلز پارٹی کی سينٹرل ايگزيکٹو کميٹی نے شوکاز نوٹس پر پی ڈی ایم کے تمام عہدوں سے مستعفی ہونے کا فیصلہ کرلیا۔

فیصلے کے مطابق راجہ پرویز اشرف، شیری رحمان اور قمر زمان کائرہ اسٹیئرنگ کمیٹی سے استعفیٰ ديں گے۔ سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی اجلاس میں مؤقف اپنایا گیا کہ پی ڈی ایم ایک سیاسی اتحاد ہے اور کوئی جماعت کسی کی ماتحت نہیں۔

مؤقف میں یہ بھی کہا گیا کہ شوکاز دے کر دانستہ اپوزیشن اتحاد کو ناقابل تلافی نقصان پہنچانے کی کوشش کی گئی۔ پی ڈی ایم کو فعال رکھنا ہے تو پیپلز پارٹی اور اے این پی سے معافی مانگی جائے۔

پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کراچی میں پریس کانفرنس کے دوران شوکاز نوٹس کو مسترد کرتے ہوئے ہدایت کی کہ پی ڈی ایم کے تمام عہدوں سے مستعفی ہو جائیں۔ بلاول نے شوکاز نوٹس پر پی ڈی ايم سے معافی کا مطالبہ بھی کیا۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ ہم کسی سے ڈکٹیشن نہیں لیں گے اور سیاسی اتحاد میں شوکاز نوٹسز کی کوئی مثال نہیں ملتی۔ پیپلزپارٹی اور عوامی نیشنل پارٹی سے معافی مانگی جائے کیونکہ سياست عزت اور برابری کے ساتھ کی جاتی ہے۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ جس نے پارليمان سے استعفیٰ دينا ہے دے دے لیکن اپنے فیصلے دوسری جماعتوں پر مسلط نہ کریں۔ ہم نے ہميشہ پارليمان کے تقدس کا خيال رکھا اور آگے بھی رکھيں گے۔

انہوں نے کہا کہ پی ڈی ايم کا مؤقف سينيٹ اليکشن ميں حصہ لے کر صحيح ثابت ہوا، پی ڈی ايم نے حکومت کو بے نقاب کر ديا ہے اور پی ڈی ایم نے دکھا دیا کہ عوام کس کے ساتھ ہیں۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ ہمارا ایک ہی مؤقف ہے اسمبلیوں سے استعفے آخری ہتھیار ہونے چاہئیں۔ ہميں پارليمنٹ اور سينيٹ کو نہيں چھوڑنا چاہيئے، اگر دوسری جماعتوں کے کہنے پر چلتے تو غلط قدم ہوتا۔

پیپلزپارٹی اوراے این پی کوشوکاز نوٹس جاری کیے، شاہد خاقان

واضح رہے کہ ایک ہفتہ قبل مسلم لیگ ن کے سینیئر رہنما شاہد خاقان عباسی نے پیپلز پارٹی اور اے این پی کو شوکاز نوٹسز کے اجراء کی تصدیق کی تھی۔ شوکاز نوٹس جاری اتحاد کے فیصلوں اور اصولوں سے انحراف پر دیے گئے تھے۔

اسلام آباد میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ دونوں پارٹی سے وضاحت مانگی گئی ہے کہ "باپ" سے ووٹ کیوں ليے۔

لیگی رہنما نے کہا کہ میرا کام شوکاز نوٹس جاری کرنے تھا البتہ انہیں نکالنے کا فیصلہ پی ڈی ایم نے کرنا ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube