پیپلزپارٹی نےحکومتی اتحادیوں سےہاتھ ملایا، راناثناء اللہ

SAMAA | - Posted: Apr 3, 2021 | Last Updated: 4 months ago
SAMAA |
Posted: Apr 3, 2021 | Last Updated: 4 months ago

پیپلزپارٹی کو اپنی پوزشین واضح کرنی ہوگی

مسلم لیگ نون کے رہنماء رانا ثناء اللہ نے پیپلزپارٹی پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ پیپلزپارٹی نےحکومتی اتحادیوں کےساتھ ہاتھ ملایا۔

سماء کے پروگرام ایجنڈا 360میں رانا ثناء اللہ نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پیپلزپارٹی نے پی ڈی ایم کے پہلے سربراہی اجلاس میں موقف اپنایا تھا کہ استعفیٰ دیے بغیر حکومت کے خلاف تحریک چلانی چاہیے جبکہ پی ڈی ایم میں شامل تمام جماعتوں کا موقف تھا کہ لانگ مارچ کے ساتھ اسمبلیوں سے استعفیٰ دیے جائیں۔

انہوں نےکہا کہ سینیٹ میں اپوزیشن لیڈر کے انتخاب کے دوران پیپلزپارٹی نے بےاصولی کو روا رکھا اور حکومتی اتحاد میں شامل جماعتوں سے ووٹ لیے اور اکثریت کو شکست دی گئی۔

اپوزیشن کیطرف ہاتھ بڑھائیں مگر زبان کنٹرول کریں، رانا ثناء

سینٹ الیکشن کے دوران صادق سنجرانی نے 48 اور یوسف رضا گیلانی 49 ووٹ لیے جبکہ جماعت اسلامی نے اپنا ووٹ کسی کو نہیں دیا لیکن 7ووٹ غلط ڈالنے پر یوسف رضا گیلانی اپوزیشن میں آگئے اور یہ کیسے ممکن ہے کہ اپوزیشن کےلیڈر کے انتخاب میں وہی 7 ووٹ اٹھے اور انھوں نے ووٹ ڈالا دیا۔ اسی بے اصولی کےساتھ پیپلزپارٹی کو ساتھ نہیں چلایا جاسکتا اور نہ پیپلزپارٹی اس طرح چل سکتی ہے۔

رہنماء مسلم لیگ نون نے مزید کہا کہ پی ڈی ایم میں کتنی جماعتیں ہیں اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا، تحریک کا مقصد اور سمت کو واضح ہونا چاہیے۔

رانا ثناءاللہ کا کہنا تھا کہ پی پی شہبازشریف اور حمزہ کا استعفیٰ لے اور اپنے استعفے دے، پیپلزپارٹی غلطی کی وضاحت نہیں کرسکتی،اس لیےغلطی مانے۔ پنجاب میں کسی ووٹ کی ہیرا پھیری نہیں ہوئی۔ پیپلزپارٹی سے ہر چیز پربات ہوسکتی ہے پہلے انہیں اپنی پوزشین واضح کرنی ہوگی۔

پروگرام میں پیپلزپارٹی کے رہنماء حیدر زمان قریشی نے رانا ثناءاللہ کو چیلنج کرتے ہوئے کہا کہ مسلم لیگ نون اگر اپوزیشن لیڈر شہباز شریف اور حمزہ شہباز کے استعفیٰ لےتو وہ پیپلزپارٹی کے استعفیٰ وہ خود جمع کرائیں گے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube