نیب پیشی:مریم نوازکوضمانت قبل ازگرفتاری کا مشورہ دیدیا

SAMAA | - Posted: Mar 20, 2021 | Last Updated: 3 months ago
Posted: Mar 20, 2021 | Last Updated: 3 months ago

پاکستان مسلم لیگ ن کے سینیر رہنماؤں اور قانونی ٹیم نے مریم نواز شریف کو گرفتاری سے بچانے کیلئے ضمانت قبل از گرفتاری کا مشورہ دے دیا۔

ذرائع کے مطابق کچھ ليگی رہنماؤں کو مريم نواز کی نيب کے ہاتھوں پيشی پر گرفتار کيے جانے کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔ نواز شريف کی منظوری کے بعد ضمانت قبل از گرفتاری کی درخواست کا فيصلہ ہوگا۔

نيب لاہور نے مريم نواز کو دو کيسز ميں 26مارچ کو طلب کر رکھا ہے۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ نیب کی جانب سے مریم نواز کو جاتی امراء میں 1500 کنال اراضی کی مبینہ غیرقانونی منتقلی کی تحقیقات میں طلب کیا گیا ہے۔

نیب کا کہنا ہے کہ سال2013 میں شریف فیملی نے کم و بیش ساڑھے 3 ہزار کنال اراضی انتظامیہ کی مبینہ ملی بھگت سے حاصل کی، جب کہ سال 2015 میں اس وقت کے ڈی سی او نورالامین مینگل اور ڈی جی ایل ڈی اے احد خان چیمہ و دیگر کی مبینہ ملی بھگت سے لاہور کا ماسٹر پلان ہی تبدیل کروا دیا گیا۔

نیب کا اپنے طلبی کے نوٹس میں یہ بھی کہنا تھا کہ شریف فیملی کی انتظامیہ سے آپس کی ملی بھگت سے جاتی امراء میں ہزاروں کنال اراضی کو گرین لینڈ ایریا ڈکلیئر کروایا گیا۔

نیب لاہور کے جاری کردہ نوٹس میں مریم نواز کو ہدایت کی گئی ہے کہ پیشی کیلئے تمام مطلوبہ ریکارڈ ہمراہ لائیں۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ نیب لاہور نے مریم نواز کو 26 مارچ کو ہی چوہدری شوگر ملز کیس کی تحقیقات میں بھی طلب کر رکھا ہے۔

واضح رہے کہ مریم نوازاس سے قبل 11 اگست 2020 کو نیب لاہور میں پیش ہوئی تھیں۔ چوہدری شوگر ملز کیس میں مریم نواز پر منی لانڈرنگ میں ملوث ہونے کے الزامات ہیں۔

چند روز قبل نیب لاہور نے مسلم لیگ ن کی رہنما مریم نواز کی درخواست ضمانت خارج کرنے کیلئے ہائی کورٹ سے رجوع کیا تھا۔

لاہور ہائی کورٹ میں پراسکیوٹرجنرل نیب کی توسط سےدرخواست دائر کی تھی۔ درخواست میں مؤقف اختیار کہا گیا کہ مریم نواز لاہور ہائی کورٹ سے چوہدری شوگر ملز کیس میں ضمانت پر رہا ہیں تاہم وہ اپنی ضمانت کا ناجائز فائدہ اٹھا رہی ہیں۔

WhatsApp FaceBook
NAB

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube