Monday, April 12, 2021  | 28 Shaaban, 1442

کوئٹہ، عوامی نیشنل پارٹی کے لاپتہ رہنما کی لاش مل گئی

SAMAA | - Posted: Feb 27, 2021 | Last Updated: 1 month ago
Posted: Feb 27, 2021 | Last Updated: 1 month ago

کوئٹہ سے لاپتہ ہونے والے عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی سیکرٹری اطلاعات اسد خان اچکزئی کی پانچ ماہ بعد لاش مل گئی۔ واقعے کے خلاف پشتون اسٹوڈنٹس فیڈریشن نے منان چوک پر ٹائر جلا کر احتجاج کیا۔ پولیس نے قتل میں مبینہ طور پر ملوث ایک ملزم کو گرفتار کرلیا۔

پولیس کے مطابق اسد خان اچکزئی کی لاش کوئٹہ کے نواحی علاقے نوحصار سے ملی۔ لاش 50 فٹ گہری کاریز میں پڑی ہوئی تھی جسے کرین کی مدد سے باہر نکالا گیا۔ لاش تین سے چارہ ماہ پرانی اور مسخ شدہ تھی۔

اسد خان اچکزئی کے بھائی کلیم اللہ نے لاش کو شناخت کیا جبکہ اسد خان اچکزئی کے اہلخانہ اور عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر اصغر خان اچکزئی نے بھی اسد خان اچکزئی کی ہلاکت کی تصدیق کر دی۔

پولیس حکام کا کہنا ہے کہ اسد خان اچکزئی کے قتل میں مبینہ طور پر ملوث ایک ملزم کو گرفتار کیا گیا ہے۔ اس کا تعلق مستونگ سے ہے اور لیویز فورس کا ملازم ہے۔ مزید تحقیقات جاری ہیں۔

اسد خان اچکزئی کی کی ہلاکت کے خلاف کوئٹہ میں پشتون سٹوڈنٹس فیڈریشن نے احتجاجی مظاہرہ کیا۔ مظاہرین نے ٹائر جلا کر چوک کو بند کر دیا اور حکومت کے خلاف نعرے لگائے۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ اے این پی کے رہنماؤں اور کارکنوں کو ایک عرصے سے دہشت گردی کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ اس کے باوجود ہمارے حوصلے پست نہیں ہوئے نہ ہی ہم اپنے بیانیے سے پیچھے ہٹیں گے۔

خاندانی ذرائع کے مطابق اسد خان اچکزئی کی تدفین کل چمن میں کی جائے گی۔

واضح رہے کہ اسد اخان اچکزئی کو پانچ ماہ قبل کوئٹہ کے علاقے ایئرپورٹ روڈ سے اغوا کیا گیا تھا۔ ان کے اغوا کے خلاف بلوچستان ہائی کورٹ میں کیس زیر سماعت تھا۔

اسد خان اچکزئی اے این پی کے صوبائی صدر اصغر خان اچکزئی کے چچا زاد بھائی تھے جبکہ اصغر خان کے والد جیلانی خان اور ایک بھائی عسکر خان کو بھی اس سے قبل نامعلوم افراد قتل کرچکے ہیں۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube