Friday, October 15, 2021  | 8 Rabiulawal, 1443

اسلام آباد:سرکاری ملازمین کا احتجاج،پولیس کی شیلنگ،درجنوں گرفتار

SAMAA | , and - Posted: Feb 10, 2021 | Last Updated: 8 months ago
Posted: Feb 10, 2021 | Last Updated: 8 months ago

احتجاج پرتشدد مظاہرے میں بدل گیا

اسلام آباد میں وفاقی ملازمین کا تنخواہوں اورمراعات میں اضافےکےخلاف احتجاج پرتشدد مظاہرےمیں بدل گیا۔ پولیس اور مظاہرین کے درمیان شدید جھڑپوں میں ریڈ زون میدان جنگ بن گیا۔وزيراعظم ہاؤس اورسيکرٹريٹ جانےوالا راستہ بند ہوگیا۔کشمیر ہائی وےپربھی ٹریفک کی روانی متاثر ہوئی ہے۔

بدھ کو سیکرٹریٹ کی وزارتوں،محکموں،ڈویژنز میں سرکاری امورنہ ہوسکے۔منگل کی رات کوپولیس نےپاک سیکرٹریٹ گیٹ سےسرکاری ملازمین کوگرفتار کرليا۔ تھانہ سیکریٹریٹ پولیس نےیونین کے7رہنماؤں کوحراست میں لےلیا تھاجن میں مرکزی رہنماء رحمان باجوہ بھی شامل تھے۔رہنماؤں کی گرفتاریوں پرملازمین نےپاک سيکرٹريٹ مکمل بندکرنےکی کال دےدی تھی۔ دھرنا ناکام بنانے کےلیے پولیس نے ملازمین کی گرفتاریاں شروع کیں جس کے بعد صورتحال کشیدہ ہوگئی۔

صبح تقریبا ساڑھے 11 بجے پولیس کی جانب سےسڑک کلیئرکروانےاورمظاہرین کومنتشرکرنےکےلیے شدید شیلنگ کی گئی۔ جواب میں وفاقی ملازمین نے پولیس پرپتھراؤ کیا۔پولیس نےمرکزی گیٹ بندکرکےملازمین کومحصور کردیا۔ مرکزی گیٹ بندہونےکےباعث افسران اور عملہ بھی دفاتر نہ پہنچ سکے۔

وفاقی وزیرداخلہ شیخ رشید نے سماء سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ حکومت  سے16 گريڈ تک کے ملازمین کی تنخواہوں میں اضافے اورمراعات کے حوالے سے بات ہوئی تھی تاہم ملازمین 5 گريڈ تک چلے گئے۔حکومت 16 گریڈ تک کے ملازمین کی تنخواہوں میں اضافے اورمراعات کا نوٹيفکيشن جاری کرنے کےلیے تیار تھی تاہم سرکاری ملازمين پنجاب کو بھی شامل کرنے پر بضد ہيں۔

ویڈیو:وفاقی ملازمین کا احتجاج پُرتشدد مظاہرے میں تبدیل

انھوں نے بتایا کہ 18ويں ترميم کے بعد صوبوں کا اختيار وفاق کے پاس نہيں ہے۔خزانے ميں پيسے ہی نہيں ہیں تو کہاں سے ادائیگیاں کریں۔ انھوں نے کہا کہ ایسے احتجاج اور دھرنے ہوتے رہتے ہیں اور ٹھیک بھی ہوجاتے ہیں۔

مسلم لیگی رہنما عظمی بخاری نے سماء سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ عمران خان نےوزيراعظم بننے سے پہلے دھرنا ديا تھا تو وہ ٹھیک تھا۔یہ کيسی رياست مدينہ ہے جہاں احتجاج کی اجازت نہيں۔ انھوں نے سوال اٹھایا کہ ملازمين کو گرفتار کررہےہيں لیکن ان سےبات کيوں نہيں کررہے۔

اسلام آباد میں سرکاری ملازمین پرتشدد اورگرفتاریوں کيخلاف مذمتی قرارداد پنجاب اسمبلی میں جمع کرادی گئی۔ قرارداد مسلم لیگ(ن) کی رکن سمیرا کومل کی جانب سے جمع کرائی گئی۔ قرار داد کا متن ہے کہ سرکاری ملازمین نےتنخواہوں میں اضافےکيلئے پُرامن احتجاج کااعلان کیا تھا۔حکومت نےسرکاری ملازمین سےتنخواہوں میں اضافےکاوعدہ کیا تھا۔حکومت سرکاری ملازمین کے احتجاج سے خوفزدہ ہوکر ان کی گرفتاریاں کررہی ہے۔ قرار داد میں گرفتار سرکاری ملازمین کو فی الفور رہا کرنے کا مطالبہ بھی کیا گیا ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube