جسٹس فائز عیسیٰ کا کمرہ عدالت میں ریفرنڈم

SAMAA | - Posted: Feb 4, 2021 | Last Updated: 5 months ago
SAMAA |
Posted: Feb 4, 2021 | Last Updated: 5 months ago

صحافیوں کا سینسرشپ کا اعتراف

سپریم کورٹ نے بلدیاتی انتخابات سے متعلق مقدمات کی سماعت کے دوران ریمارکس دیے ہیں کہ ملک کو منظم طریقے سے تباہ کیا جارہا ہے۔ میڈیا پابندی کا شکار اور اصل صحافیوں کو باہر پھینکا جارہا ہے۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ اور جسٹس مقبول باقر نے جمعرات کو دوران سماعت انتہائی سخت ریمارکس دیے ہیں اور ملکی حالات پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔

سماعت کے دوران جسٹس فائز عیسیٰ نے کمرہ عدالت میں ریفرنڈم بھی کروایا۔ انہوں نے وہاں موجود صحافیوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اگر آپ میں جو صحافی سمجھتے ہیں کہ میڈیا آزاد ہے تو ہاتھ اوپر کریں۔ کسی صحافی نے ہاتھ نہیں اٹھایا۔

جسٹس فائز عیسیٰ نے کہا جو سمجھتے ہیں کہ میڈیا آزاد نہیں وہ ہاتھ اوپر اٹھائیں۔ اس پر کمرہ عدالت میں موجود تمام صحافیوں نے ہاتھ کھڑے کردیے۔ حکومت کی جانب سے پیش ہونے والے اٹارنی جنرل اور دیگر اعلیٰ حکام یہ منظر دیکھتے رہے۔ کمرہ عدالت میں اور کیا باتیں ہوئیں، اس ویڈیو دیکھیں

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube