براڈ شیٹ: جسٹس (ر) عظمت سعید کی تقرری مسترد

SAMAA | - Posted: Jan 22, 2021 | Last Updated: 5 months ago
SAMAA |
Posted: Jan 22, 2021 | Last Updated: 5 months ago

ن لیگ نے سپریم کورٹ کے سابق جج پراعتراض اٹھادیا

مسلم لیگ ن نے براڈ شیٹ معاملے کی تحقیقات کیلئے جسٹس (ر) عظمت سعید شیخ کی تقرری مسترد کردی۔ احسن اقبال کہتے ہیں اسکینڈل کور اپ کرنے کیلئے حکومت اب گھر کا قاضی لارہی ہے تاکہ مرضی کا فیصلہ لیا جاسکے مريم اورنگزيب نے سپریم کورٹ کے سابق جج کی سربراہی ميں تحقیقات کرانے کو انصاف کا قتل قرار دیدیا۔

براڈ شيٹ اسکينڈل کی تحيقات کیلئے جسٹس (ر) عظمت سعيد شیخ کا تقرر مسترد کردیا، ن لیگی رہنماؤں نے سوالات اٹھادیئے۔ سابق وفاقی وزیر احسن اقبال بولے مرضی کا فيصلہ لينے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

مزید جانیے: جسٹس ریٹائرڈ عظمت سعید براڈشیٹ انکوائری کمیٹی کے سربراہ مقرر

انہوں نے مزید کہا کہ براڈ شیٹ اسکینڈل کو کور اپ کرنے کیلئے اب گھر کا قاضی لارہے ہیں، ايک ایسی شخصيت جو خود اس پورے معاملے ميں فریق ہے، اس کے ہاتھ ميں تفتيش دينے کا مقصد تو یہی ہے، ہم يہ نہيں ہونے ديں گے۔

سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ جسٹس (ر) عظمت سعید شیخ کا حال بھی نیب چیئرمین جسٹس (ر) جاويد اقبال جيسا ہوگا۔ انہوں نے تجویز دی کہ کمیشن کا سربراہ بن کر خود کومتنازع نہ بنائيں۔

جاويد لطيف نے بھی تحقيقاتی کمیٹی کے سربراہ کیلئے جسٹس (ر) عظمت سعيد کے تقرر کي مخالفت کی۔ انہوں نے کہا کہ جسٹس ریٹائرڈ عظمت سعيد شیخ شوکت خانم اسپتال کے بورڈ آف ڈائريکٹرز ميں بھی تھے، نواز شريف کے پاناما کيس کا فيصلہ دينے والے بھی وہی تھے، عوام کا پيسہ سیاسی مقاصد کیلئے استعمال نہيں کرنے ديں گے۔

یہ بھی پڑھیں : جسٹس عظمت سعید نیب کے وکیل تھے

جسٹس (ر) عظمت سعید کے تقرر پر عطاء تارڑ نے بھی انہيں تنقيد کا نشانہ بنايا۔ وہ کہتے ہیں کہ براڈ شیٹ کا معاہدہ ہوا تو شیخ عظمت سعید نیب پراسیکیوٹر تھے، ان کا براڈ شیٹ کیس کی تحقیقات کرنے کا حق نہیں بنتا۔

سابق وزیر اطلاعات مريم اورنگزيب کہتی ہيں کہ جسٹس (ر) عظمت سعيد شیخ متنازع شخصيت ہيں، نیب کے سابق ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل سے تحقیقات منصفانہ نہيں ہوسکتیں، يہ براڈ شيٹ سے بڑا فراڈ ہوگا۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube