Monday, September 27, 2021  | 19 Safar, 1443

سندھ ہائیکورٹ نے سکھرچیمبر آف کامرس کی عمارت غیرقانونی قراردیدی

SAMAA | - Posted: Jan 16, 2021 | Last Updated: 8 months ago
SAMAA |
Posted: Jan 16, 2021 | Last Updated: 8 months ago

سندھ ہائیکورٹ سکھر بینچ کا بیرونی منظر۔ فوٹو سماء ٹی وی

سندھ ہائیکورٹ سکھر بینچ نے بندر روڈ پر تعمیر سکھر چیمبر آف پاکستان پلازہ اور 12 منزلہ عمارت ڈولفن ٹاور کو غیرقانونی قرار دیتے ہوئے فوری طور پر خالی کرانے کا حکم دیدیا۔

جسٹس آفتاب احمد اور جسٹس فہیم احمد صدیقی پر مشتمل دو رکنی بینچ نے سکھر میونسپل کارپوریشن انتظامیہ اور ڈپٹی کمشنر کو احکامات پر عملدرآمد کیلئے 3 فروری تک کی مہلت دی ہے۔

دوران سماعت عدالت کے علم میں آیا کہ کچھ عوامی رفاعی زمینیں مختلف افراد، سرکاری ایجنسیز اور کارپوریٹ باڈیز کو لیز پر دی گئیں۔

سندھ ہائیکورٹ میں جمع کرائی گئی رپورٹ کے مطابق غازی عبدالرشید پارک، میر معصوم شاہ لائبریری پارک، ڈولفن ٹاور، سکھر چیمبر آف کامرس پلازہ، عبدالخالق بلڈنگ اور اقراء آرکیڈ ’’قبضہ کی گئی سرکاری زمینوں پر تعمیر کی گئیں، جن کی منظوری قانون اور قواعد و ضوابط کیخلاف دی گئی تھی‘‘۔

رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ خدمت خلق فاؤنڈیشن بدستور سرکاری زمین پر قابض ہے، یہ زمین مذکورہ این جی او کو لیز پر دی گئی تھی جسے بعد ازاں منسوخ کردیا گیا تھا۔

عدالتی حکم میں کہا گیا ہے کہ عوامی کی بہتری و فلاح جیسا کہ پارک، کھیل کے گراؤنڈ،  لائبریری، اسپتال سمیت دیگر امور کیلئے مختص زمین آئندہ کسی کو بھی تجارتی و کاروباری سرگرمی کیلئے لیز یا لائسنس پر جاری نہیں دی جاسکے گی۔

عدالت نے یہ فیصلہ شہری ساجد قریشی کی جانب سے دائر پٹیشن پر سنایا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube