Monday, March 8, 2021  | 23 Rajab, 1442
ہوم   > پاکستان

مچھ : حملہ آوروں نے 11 کان کنوں کو قتل کردیا

SAMAA | - Posted: Jan 3, 2021 | Last Updated: 2 months ago
Posted: Jan 3, 2021 | Last Updated: 2 months ago

زخمیوں کی حالت تشویش ناک

Coal Mine

بلوچستان کے علاقے مچھ میں نامعلوم حملہ آوروں نے فائرنگ کر کے 11 کان کنوں کو قتل کردیا۔ تحریک نفاذ فقعہ جعفریہ کی جانب سے واقعہ کی شدید مذمت کی گئی ہے۔ قتل کیے گئے تمام کان کنوں کا تعلق ہزارہ ٹاؤن سے تھا۔

لیویز کے مطابق کے بلوچستان کے ضلع بولان کی تحصیل مچھ میں ہفتہ اتوار کی درمیانی شب نامعلوم حملہ آوروں نے اغوا کیے گئے 11 کان کنوں کو فائرنگ کرکے قتل کردیا۔ فائرنگ سے 3 کان کن زخمی بھی ہوئے۔ مقتول کان کنوں کی آنکھوں پر پٹیاں اور ہاتھ پیچھے بندھے ہوئے تھے۔

ڈپٹی کمشنر کی جانب سے 11 کان کنوں کے جاں بحق ہونے کی تصدیق کی گئی ہے۔ کان کن گیشتری کے علاقے میں کام کیلئے موجود تھے، جہاں دہشت گرد کوئلہ فیلڈ میں داخل ہوئے اور انہیں اغوا کیا۔ فائرنگ کے بعد حملہ آور فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے

لاشوں کو ضروری کارروائی، جب کہ زخمیوں کو فوری طبی امداد کیلئے ابتدا میں ڈسٹرکٹ اسپتال مچھ اور بعد ازاں کوئٹہ منتقل کیا گیا۔ اسپتال انتظامیہ کے مطابق زخمیوں کی حالت تشویش ناک ہے۔ میتیوں کی کوئٹہ روانگی ممکن نہ ہوسکی۔ مچھ روانگی کے وقت میتیوں کو مظاہرین کی جانب سے روک لیا گیا، جو میتیوں کے ہمراہ مچھ میں احتجاج کر رہے ہیں۔

لیویز کے مطابق حملہ آوروں نے مچھ میں کام کرنے والے کان کنوں کو کانوں کے پاس سے اغوا کیا اور بعد ازاں انہیں دور مقام پر لے جا کر فائرنگ کرکے قتل کیا۔ واقعہ کی اطلاع ملتے ہی سیکیورٹی فورسز کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی، جب کہ علاقے کی ناکہ بندی بھی کردی گئی ہے۔

قانون نافذ کرنے والے اہل کاروں نے شواہد اکٹھے کرنے شروع کر دیئے۔ تحریک نفاذ فقعہ جعفریہ کی جانب سے حملے کی شدید مذمت کی گئی ہے۔ تحریک کے ترجمان کے مطابق قتل کیے گئے کان کنوں کا تعلق ہزارہ برادری سے تھا۔

صدر تحریک نفاذ فقعہ جعفریہ انجینیر ہادی عسکری کا کہنا ہے کہ دلخرش واقعہ اسلام اور پاکستان دشمن عناصر کی سازش ہے۔

واقعہ پر وزیر داخلہ بلوچستان میر ضیاء لانگو کی جانب سے شددید مذمت کی گئی ہے۔ صوبائی وزیر داخلہ نے واقعہ سے متعلق متعلقہ حکام سے رپورٹ طلب کرلی۔ اپنے بیان میں میر ضیا کا کہنا تھا کہ ملزمان کی گرفتاری میں کوئی کسر نہیں چھوڑی جائے۔ صوبے کے امن کو سبوتاژ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

میر ضیا کا مزید کہنا تھا کہ ریاستی دہشتگردی کسی بھی شکل میں ہو ،نا قابل قبول ہے۔ واقعہ میں ملوث عناصر کسی بھی رعایت کے مستحق نہیں۔ انہوں نے مقتولین اور زخمیوں کیلئے دعا کرتے ہوئے کہا کہ اللہ تعالی ان کے درجات بلند فرمائے اور زخمیوں کو جلد صحت یاب کرے۔

واقعہ پر وزیراعظم عمران خان کی جانب سے بھی شدید مذمت کی گئی ہے۔ اپنے بیان میں وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ دہشت گردوں کو حملہ ایک بزدلانہ کارروائی ہے۔ دکھ کے اس لمحے میں متاثرہ خاندانوں کو تنہا نہیں چھوڑیں گے۔

مچھ واقعہ پر وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید احمد کی جانب سے بھی شدید مذمت کی گئی ہے۔ واقعہ پر وفاقی وزیر داخلہ نے آئی جی بلوچستان سے فوری رپورٹ طلب کرلی۔ حملے کی مذمت کرتے ہوئے وفاقی وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ ایسے واقعات بہادر قوم کے عزم کو متزلزل نہیں کر سکتے۔ واقعہ میں ملوث عناصر کسی بھی رعایت کے مستحق نہیں۔

شیخ رشید کا کہنا تھا کہ دہشت گرد اپنے مذموم مقاصد میں کامیاب نہیں ہوں گے۔ افسوس ناک واقعہ کی جنتی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube