وکیل اعجازآرائیں کا مبینہ قتل،تحقیقاتی رپورٹ میں اہم انکشافات

SAMAA | and - Posted: Dec 20, 2020 | Last Updated: 6 months ago
Posted: Dec 20, 2020 | Last Updated: 6 months ago

وزیراعظم انصاف دیں

فیصل آباد کےوکیل اعجازآرائیں کےمبينہ اغوا اورغيرقانونی حراست ميں قتل کے کيس میں سندھ پوليس کی اعلیٰ تحقيقاتی رپورٹ نے اہم انکشافات کردئیے۔ رپورٹ میں ایس ایس پی سکھرعرفان سموں اور سابق ڈی ایس پی مسعود مہر کو ذمے دار قراردے دیا گیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق ایس ایس پی عرفان سموں،سابق ڈی ایس پی مسعود مہراوردیگراہلکار وکيل کی موت ميں براہ راست ملوث ہیں۔

اعجازآرائيں ايڈووکيٹ کی موت پنوعاقل ميں پوليس کے نجی ٹارچر سيل ميں ہوئی تھی۔اعجازآرائيں کی بیوہ نے مطالبہ کیا ہے کہ وزیراعظم  انصاف دیں،چھوٹے پولیس اہلکاروں کو پکڑ کر قربانی کا بکرا بنایا جا رہا ہے، کيس ميں ملوث بڑے ملزمان باہر ہیں،انکوائری رپورٹ کی روشنی میں تمام ملزمان کوپکڑاجائے۔

رپورٹ ميں يہ بھی انکشاف کيا گيا ہے کہ اعجاز آرائیں کا اپنی ماں شمیم بیگم سے جائیداد کا تنازع تھاجبکہ شمیم بیگم کے مرکزی ملزم میاں اسد انڈھڑ سے گہرے تعلقات تھے،اس لیے پولیس نے سب کچھ میاں اسد انڈھڑ کے کہنے پر کیا۔

ڈی آئی جی نعیم شیخ نےعرفان سموں کےخلاف محکمہ ایس اینڈ جی اے ڈی اوروفاقی اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کو ریفرنس بھیجنے کی بھی سفارش کی ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube