Monday, October 25, 2021  | 18 Rabiulawal, 1443

گلگت بلتستان:تحریک انصاف کے تمام ارکان وزیر، مشیر لگ گئے

SAMAA | - Posted: Dec 3, 2020 | Last Updated: 11 months ago
SAMAA |
Posted: Dec 3, 2020 | Last Updated: 11 months ago

گلگت بلتستان کی نئی حکومت میں تحریک انصاف کے تمام ارکان کو وزیر، مشیر، معاون خصوصی یا کوارڈینیٹر لگا دیا گیا ہے۔ مراعات کی بہتی گنگا میں تحریک انصاف کے اتحادی ارکان کو بھی ہاتھ دھونے کا بھرپور موقع فراہم کیا گیا ہے۔

گلگت بلتستان اسمبلی میں کل جنرل نشستیں 24 جبکہ کابینہ ارکان کی تعداد 22 ہے۔ اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر کو ملاکر وزیر کے برابر مراعات یافتہ ارکان کی تعداد 24 ہوگئی ہے جبکہ تحریک انصاف کے اپنے جنرل اور مخصوص نشستوں پر منتخب ارکان کی تعداد 23 ہے۔

مجلس وحدت المسلمین کے ایک رکن کو بھی وزیراعلیٰ کا معاون خصوصی بنا دیا گیا ہے جبکہ تحریک انصاف کے بعض شکست یافتہ امیدواروں کو بھی وزیراعلیٰ کے مشیر، معاون یا کوارڈینیٹر لگا دیا گیا ہے۔

صوبائی حکومت کی جانب سے جاری فہرست کے مطابق وزیراعلیٰ سمیت وزرا کی تعداد 15 ہے۔ ان میں 2 ورزا کو ’سنیئر‘ کا اضافی ٹائٹل بھی دیا گیا ہے۔ ان کے علاوہ وزیراعلیٰ کے 2 مشیر، 3 معاونین خصوصی  اور 2 کوارڈینیٹرز شامل ہیں۔

گلگت بلتستان اسمبلی کی جنرل اور مخصوص نشستوں کی مجموعی تعداد 33 ہے۔ ان میں سے 22 بالواسطہ یا بلاواسطہ کابینہ کا حصہ بن گئے۔ دو ارکان کو اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر بنا دیا گیا۔ ایک اپوزیشن لیڈر بن گیا۔ کل ملا کر مراعات ارکان کی تعداد 24 ہوگئی۔ ان 24 ارکان کو وزیر کے برابر مراعات ملیں گے۔ ان کے علاوہ پارلیمانی سیکریٹریز کا اعلان تاحال نہیں ہوا۔

نو منتخب وزیراعلی خالد خورشید نے عہدے کا حلف اٹھانے کے بعد پہلے خطاب میں کہا تھا کہ گلگلت بلتستان میں بجٹ کا زیادہ  حصہ غیر ترقیاتی اخراجات یعنی حکومت چلانے پر خرچ ہورہا ہے۔ ہم اس کو کم کریں گے اور اس کا آغاز کابینہ سے کریں گے مگر وہ اپنے اس ابتدائی مشن میں ناکام ہوگئے ہیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube