Wednesday, January 20, 2021  | 5 Jamadilakhir, 1442
ہوم   > پاکستان

کرونا وائرس: بڑے شہروں میں شادی ہالز پر پابندی

SAMAA | - Posted: Nov 6, 2020 | Last Updated: 3 months ago
SAMAA |
Posted: Nov 6, 2020 | Last Updated: 3 months ago

فائل فوٹو

کرونا کی دوسری پر نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر نے سخت اقدامات کا اعلان کردیا، ملک کے بڑے شہروں ميں 20 نومبر سے شادی ہالز کے اندر تقریبات پر پابندی لگادی، اب صرف کھلے مقامات پر شادی کی تقريبات کی اجازت ہوگی، سرکاری اور نجی اداروں میں ورک فرام ہوم کی پالیسی پر عملدرآمد ہوگا۔ احتیاطی تدابیر کے دوسرے مرحلے کا اطلاق 31 جنوری 2021ء تک ہوگا۔

نیشل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کا اجلاس وفاقی وزیر اسد عمر کی زیر صدارت ہوا جس میں کرونا وائرس کی دوسری لہر کے دوران وباء کے پھیلاؤ کو روکنے کیلئے سخت اقدامات کا فیصلہ کیا گیا، دوسرے مرحلے کے تحت پابندیوں کا اطلاق کل (ہفتہ 7 نومبر) سے 31 جنوری 2021ء تک ہوگا۔

این سی او سی نے ملک کے بڑے شہروں ميں 20 نومبر سے شادی ہالز کے اندر تقریبات پر پابندی لگادی، شادی کی تقریبات کھلے مقامات پر ہوں گی جن میں ایک ہزار افراد شرکت کر سکیں گے۔

جن شہروں میں پر سخت پابندیاں لگانے کا فیصلہ ہوا ان میں کراچی، لاہور، اسلام آباد، راولپنڈی، ملتان، حیدر آباد، گلگت، مظفر آباد، میرپور، پشاور، کوئٹہ، گوجرانوالہ، گجرات، فیصل آباد، بہاولپور اور ایبٹ آباد شامل ہیں۔

مزید جانیے : تعلیمی ادارے بند کرنے کا فیصلہ نہیں ہوا، وفاقی وزیر تعلیم

اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ فیس ماسک پہننے کے حوالے سے گلگت بلتستان ماڈل پر عملدرآمد ہوگا، ماسک نہ پہنے پر 100 روپے جرمانہ اور 3 ماسک موقع پر فراہم کئے جائیں گے۔

این سی او سی کے مطابق سرکاری اور نجی اداروں میں ورک فرام ہوم کی پالیسی پر عملدرآمد ہوگا، 50 فیصد عملہ گھروں پر رہ کر فرائض انجام دے گا، کرونا سے زیادہ متاثرہ علاقوں میں اسمارٹ لاک ڈاؤن ہوگا۔

پاکستان میں کرونا وائرس سے آج 30 اموات ہوئیں جبکہ اب تک مرنے والوں کی تعداد 6 ہزار 923 تک پہنچ چکی ہے، متاثرہ مریضوں کی تعداد میں بھی تیزی سے اضافہ ہورہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : تعليمی ادارے میں موسم سرما کی تعطیلات نہیں ہونگی

 اسلام آباد کے تعلیمی اداروں میں کرونا وائرس کے مزید 14 نئے کیسز رپورٹ ہوئے، جس کے بعد اسلامک يونيورسٹی اور ماڈل کالج فار گرلز کو سیل کرنے کا حکم دے دیا گیا۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل نے چند روز قبل سماء کے پروگرام ندیم ملک لائیو میں گفتگو کرتے ہوئے پاکستان میں کرونا کیسز بڑھنے کی بڑی وجہ بے احتیاطی ہے، ہم نے سمجھ لیا کہ بیماری ختم ہوگئی، اس لئے ایس او پیز پر عمل نہیں کیا گیا، احتیاط کرنے سے ہی بیماری پر قابو پایا جاسکتا ہے جبکہ بے احتیاطی سے بیماری بڑھے گی، یہ وقت بہت زیادہ احتیاط کا ہے، اگر کیسز بڑھتے ہیں تو سخت اقدامات کی طرف جاسکتے ہیں۔

کرونا وائرس کی دوسری لہر: سندھ میں سخت پابندیاں لاگو

سندھ حکومت نے این سی او سی کے احکامات کی روشنی میں کرونا وائرس کی دوسری لہر سے نمٹنے کیلئے سخت احکامات جاری کردیئے۔ محکمہ داخلہ کی جانب سے جاری نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے کہ صوبہ بھر میں ہر عوامی مقام پر ماسک کا استعمال لازمی ہوگا، خلاف ورزی کرنیوالے پر 1000 روپے جرمانہ کیا جائے گا۔

نئے اقدامات کے تحت غیر ضروری سفر ممنوع قرار دیدیا گیا جبکہ کار میں 2 سے زائد افراد کے سفر پر بھی پابندی ہوگی۔ محکمہ داخلہ سندھ کے مطابق کرونا کیسز بڑھنے پر کسی بھی علاقے کو فوری طور پر بند کردیا جائے گا۔

نوٹیفکیشن میں نجی و سرکاری دفاتر اور کمپنیز کو صرف ضروری اسٹاف کو بلانے اور آن لائن کام کو ترجیح دینے کی ہدایت کی گئی ہے، ساتھ ہی 55 سال سے زائد عمر والوں کو دفاتر بلانے پر پابندی عائد کردی گئی، دفاتر اور کمپنيز ميں خلاف ورزی کی صورت میں منيجرز اور مالکان ذمہ دار ہوں گے۔

WhatsApp FaceBook

One Comment

  1. Anonymous  November 6, 2020 9:48 pm/ Reply

    Good -Decision,-Why-I-Could-Not-Enter-a-space.

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube