Saturday, November 28, 2020  | 11 Rabiulakhir, 1442
ہوم   > پاکستان

پشاور: مدرسے میں دھماکے سے 8 طلبہ شہید، 125 زخمی

SAMAA | - Posted: Oct 27, 2020 | Last Updated: 1 month ago
SAMAA |
Posted: Oct 27, 2020 | Last Updated: 1 month ago

خیبرپختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں ایک دینی مدرسہ کے اندر بم دھماکے میں بچوں سمیت 8 طلبا جاں بحق اور 125 زخمی ہوگئے ہیں۔

پشاور پولیس کے مطابق متاثرہ مدرسہ جامعہ زبیریہ پشاور کے علاقہ دیر کالونی میں کوہاٹ روڈ پر واقع ہے جہاں کم ازکم 1100 کے قریب بچے زیر تعلیم ہیں۔ دھماکے کے وقت مدرسے میں 100 سے زائد طالب علم موجود تھے اور مدرسے کے استاد رحیم اللہ حقانی درس حدیث میں مصروف تھے مگر وہ دھماکے میں محفوظ رہے۔

زخمیوں کو طبی امداد کیلئے پشاور کے مختلف اسپتالوں میں منتقل کردیا گیا ہے۔ وزیر صحت تیمور جھگڑا کے مطابق 96 زخمی لیڈی ریڈنگ اسپتال، 2 خیبر ٹیچنگ اسپتال اور 2 زخمی حیات آباد میڈیکل کمپلیکس میں زیرعلاج ہیں۔ ان کے علاوہ 25 زخمیوں کو نصیر اللہ بابر اسپتال میں طبی امداد کے بعد گھر بھیج دیا گیا ہے۔ پشاور کے تمام اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔

سی سی پی او پشاور کے مطابق مدرسے کو نشانہ بنانے سے متعلق کسی قسم کا تھریٹ الرٹ جاری نہیں کیا گیا تھا جبکہ ایس پی سٹی وقار عظیم نے کہا کہ کوئی شخص صبح 8 بجے مدرسے میں آیا اور ایک بیگ رکھ کر چلا گیا۔ جس کے بعد دھماکہ ہوگیا۔

ائی جی خیبر پختونخوا ثنا اللہ عباسی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ دھماکے میں 5 کلو بارودی مواد استعمال کیا گیا۔

انہوں نے بتایا کہ تھریٹ الرٹ سے متعلق گزشتہ روز اجلاس ہوا تھا۔ اس کے بعد دہشت گردانہ کارروائیوں سے متعلق ممکنہ اہداف کو سیکیورٹی بھی فراہم کی گئی مگر اس مدرسے کا تھریٹ الرٹ میں ذکر نہیں تھا۔ صوبے کی مجموعی سیکیورٹی یقینی بنانے کی کوشش کررہے ہیں۔

آئی جی نے دعویٰ کیا کہ پشاور دھماکے کے بعد کچھ لوگ باجوڑ سے پکڑے گئے ہیں۔ تفتیش جاری ہے، فوری طور پر معلومات میڈیا کے ساتھ شیئیر نہیں کرسکتے۔

خیبرپختونخوا کے وزیراعلیٰ محمود خان نے متاثرین کیلئے مالی معاونت کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ شہداء کے اہل خانہ کو 5 لاکھ روپے اور زخمیوں کو علاج معالجہ کیلئے دو لاکھ روپے دیے جائیں گے۔

وزیراعلیٰ نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ کسی کو صوبے کا امن سبوتاژ کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔

اس رپورٹ کے فائنل ہونے تک کسی بھی تنظیم نے دہشت گردانہ کارروائی کی ذمہ داری قبول نہیں کی۔

واقعہ کے بعد آئی جی سندھ نے صوبے بھر میں پولیس کو کو ہدایات جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ صوبائی سطح پر سيکيورٹی انتظامات مزيد سخت کريں۔ پوليس پیٹرولنگ، پکٹنگ، اسنيپ چيکنگ مؤثر اور کامياب بنائيں۔ ايس پيز، ڈی ايس پيز، ايس ايچ اوز اپنی موجودگی يقينی بناتے ہوئے مساجد، امام بارگاہوں و ديگر پبلک اور اہم مقامات پر سيکيورٹی غيرمعمولی بنائيں۔

دوسری جانب وزیراعظم عمران خان، سابق وزیراعظم میاں نواز شریف، مریم نواز شریف، بلاول بھٹو زرداری، مولانا فضل الرحمان، سراج الحق سمیت تمام سیاسی رہنماؤں نے دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے متاثرین کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کیا ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پشاور مدرسے میں دہشت گرد حملے پر نہایت افسردہ ہوں۔ میری ہمدردیاں متاثرہ خاندانوں کے ساتھ ہیں اور میں زخمیوں کی جلد صحت یابی کیلئے دعاگو ہوں۔ میں قوم کو یہ بھی یقین دلاتا ہوں کہ اس بزدلانہ سفاک حملے کے ذمہ دار دہشت گردوں کو جتنا جلد ممکن ہوسکے گا قانون کی گرفت میں لائیں گے۔

سابق وزیراعظم میاں نواز شریف نے کہا کہ پشاور میں دہشت گرد حملے نے سانحہ اے پی ایس کا دکھ تازہ کر دیا ہے۔ معصوم جانوں کا زیاں انتہائی المناک ہے۔ میں متاثرہ خاندانوں کے دکھ میں برابر کا شریک ہوں اور زخمیوں کی صحتیابی کےلئیے دعاگو ہوں۔ حکمران زخمی بچوں کے خون میں لت پت چہروں سے ٹپکتے آنسوؤں کو دیکھیں اور انکی تکلیف کا فوری ازالہ کریں۔

پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ معصوم شہریوں کو نشانہ بنانے والوں کا کوئی مذہب نہیں، یہ درندے ہیں۔ دہشت گرد پاکستانی قوم کے عزم و حوصلے کو متزلزل نہیں کرسکتے۔

مریم نواز نے کہا کہ بچوں اور ان کے والدین کی تصاویر دیکھ کر دل خون کے آنسو رو رہا ہے۔ ہم اتنی تکلیف میں ہیں تو اندازہ کریں ان کا حال کیا ہو گا جن پر یہ قیامت گزری ہے۔ اندازہ لگانا بھی مشکل ہے۔

انہوں نے کہا کہ آپریشن ضرب عضب اور ردالفساد سے جس دہشت گردی کی کمر ٹوٹی تھی، اسی دہشت گردی نے آج مسلط شدہ نا اہلی کی وجہ سے ایک بار پھر سر اٹھا لیا۔ ملک کے زمہ داروں کی توجہ اپنی ذمہ داریوں کی بجائے اپوزیشن کو دبانے پر مرکوز ہو تو ملک دشمنوں کی توجہ ملک کا امن برباد کرنے پر ہوتی ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube