Tuesday, October 20, 2020  | 2 Rabiulawal, 1442
ہوم   > پاکستان

سرکلر ریلوے کیلئے ’کراچی‘ ہنوز دور است

SAMAA | - Posted: Oct 15, 2020 | Last Updated: 5 days ago
SAMAA |
Posted: Oct 15, 2020 | Last Updated: 5 days ago

تاحال ٹریک پر تجاوزات موجود

سپریم کورٹ نے متعدد مرتبہ واضح الفاظ میں حکم دیا ہے کہ کراچی سرکلر ریلوے رواں سال مکمل کرکے چلائی جائے۔ دوسری جانب زمینی حقائق پر نظر ڈالیں تو کم از کم ایک سال تک یہ امید بر ہوتی نظر نہیں آتی۔

سرکلر ریلوے کی بوگیاں اسلام آباد میں تیار کی جارہی ہیں مگر ٹریک، پلیٹ فارمز، سگنلز، ٹکٹ اسٹیشنز، پیدل پل، انڈرپاسز اور فلائی اوورز سمیت دیگر انفرا اسٹرکچر پر ابھی تک کام شروع نہ ہوسکا۔ 

حیرت انگیز امر یہ ہے کہ ابھی تک سرکلر ریلوے ٹریک سے تجاوزات کا خاتمہ بھی نہ ہوسکا۔ سوال یہ ہے کہ کیا رواں سال کے باقی ماندہ ڈھائی ماہ میں سندھ اور وفاقی حکومت یہ معرکہ کیسے سر کرپائے گی۔

سماء کی اینکر پرسن کرن ناز نے اپنے پروگرام میں منصوبے پر تفصیل سے روشنی ڈالی ہے اور اس سے منسلک حکام کے انٹرویوز بھی کیے ہیں۔ ان کا بھی کہنا ہے کہ کراچی والوں کا کیلئے دلی ہنوز دور است۔

کے سی آر کے پروجیکٹ ڈائریکٹر داؤود پوتہ کا کہنا ہے کہ تجاوزات کا خاتمہ سمیت جو ذمہ داریاں سندھ حکومت پر عائد ہوتی ہیں، وہ مکمل ہوجائیں تو ہم اپنا کام شروع کریں گے۔ 

داؤود پوتہ نے کہا کہ ٹریک کے راستے میں آںے والے انڈر پاسز اور فلائی اوورز بھی سندھ حکومت کے ذمہ ہے اور سندھ حکومت نے اس کا ٹھیکا ایف ڈبلیو کو دیا ہے جبکہ ایف ڈبلیو او نے عدالت کو بھی آگاہ کیا ہے کہ انڈر پاسز اور فلائی اوورز کیلئے کم از کم 6 ماہ درکار ہیں۔

مگر یہ 6 ماہ اس وقت سے حساب ہوں گے جب وہ کام کا آغاز کریں گے اور ایف ڈبلیو او نے تاحال کہیں بھی کام شروع نہیں کیا۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube