Monday, January 24, 2022  | 20 Jamadilakhir, 1443

مولاناعادل بڑےعالم تھے،ايسےلوگوں کوتھريٹ ہوتی ہے،پولیس

SAMAA | - Posted: Oct 11, 2020 | Last Updated: 1 year ago
SAMAA |
Posted: Oct 11, 2020 | Last Updated: 1 year ago

ايڈيشنل آئی جی غلام نبی ميمن کا کہنا ہے کہ مولانا عادل خان بڑے عالم تھے، ايسے لوگوں کو تھريٹ ہوتی ہے۔ معاملے کی تحقيقات کر رہے ہيں۔

شاہ فیصل میں جائے وقوعہ پر میڈیا سے گفتگو میں ايڈيشنل آئی جيی غلام نبی ميمن نے بتایا کہ ساڑھے 7 بجے کے قريب پوليس کو واقعہ کی اطلاع ملی۔ ايک موٹر سائيکل پر 3 ملزمان سوار تھے۔ واقعے ميں مولانا عادل اور ان کا ڈرائيور مقصود شہيد ہوئے۔ مولانا کے ساتھ موجود عمير محفوظ رہے۔

پولیس حکام کا کہنا تھا کہ جس گاڑی کو نشانہ بنایا گیا، اس میں 3 لوگ موجود تھے۔ عمیر شمع شاپنگ سینٹر پر مٹھائی کی دکان پر مٹھائی لینے گیا۔ گاڑی رکی ہوئی تھی جب اس پر ٹارگٹنڈ فائڑنگ کی گئی۔

موٹر سائیکل ملزمان نے ٹآرگٹ کرکے فائرنگ کی۔ ایسا لگتا ہے کہ دہشت گرد ان کا پیچھا کر رہے تھے۔ پوسٹ مارٹم رپورٹ کے مطابق ڈائیور مقصود کو ایک گولی سر میں ماری گئی۔ گولی دائيں کنپٹی سے لگی اور بائيں کان کے نیچے سے باہر نکلی۔

تفتیشی حکام کے مطابق گولی ٹارگٹ سے دور سے چلتی گاڑی میں ماری گئیں۔ مولانا کو ٹارگٹ کرنے والے بہت ماہر نشانہ باز ہیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube