Monday, January 24, 2022  | 20 Jamadilakhir, 1443

مولانا ڈاکٹرعادل خان کی نمازجنازہ ادا کردی گئی

SAMAA | - Posted: Oct 11, 2020 | Last Updated: 1 year ago
SAMAA |
Posted: Oct 11, 2020 | Last Updated: 1 year ago

کراچی میں دہشت گردوں کی فائرنگ سے شہید ہونے والے مولانا ڈاکٹر محمد عادل خان اور ان کے ڈرائیور مقصود کی نماز جنازہ آج اتوار 11 اکتوبر کی صبح جامعہ فاروقيہ فيز 2حب ريور روڈ پر ادا کردی گئی ہے۔

جامعہ فاروقيہ کے سربراہ مولانا عادل خان کی نماز جنازہ ان کے بھائی عبید اللہ خالد نے پڑھائی۔ اس موقع پر سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے۔ نماز جنازہ میں بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔ مولانا عادل کو ان کے والد مولانا سلیم اللہ خان کے پہلو میں دفن کیا جائے گا۔

واضح رہے کہ مولانا عادل کو ڈرائیور سمیت 10 اکتوبر کی رات کو کراچی کے علاقے شاہ فیصل کالونی میں اس وقت ٹارگٹ کلنگ میں گولیاں مار کر شہید کیا گیا، جب وہ اپنی ڈبل کیبن گاڑی میں ڈرائیور کے ہمراہ دکان کے باہر رکے۔

وہ وفاق المدارس کے سربراہ مولانا سلیم ﷲ خان کے صاحبزادے، مہتمم جامعہ فاروقیہ کراچی اور رکن مجلس عاملہ وفاق المدارس العربیہ پاکستان بھی تھے۔ واقعہ کے بعد انہیں فوری طور پر اسپتال منتقل کیا گیا، تاہم وہ پہلے ہی دم توڑ چکے تھے۔

پولیس کے مطابق دہشت گردوں نے پیچھا کرکے حملہ کيا۔ واقعہ کی سی سی ٹی وی فوٹيج بھی سامنے آگئی ہے۔ سامنے آنے والی فوٹیج میں ملزم کو فائرنگ کرتے دیکھا جا سکتا ہے۔ واردات کی جگہ سے 9 ایم ایم کے 5 خول بھی برآمد کرلیے گئے ہیں۔

پولیس کے مطابق مولانا عادل مولانا سلیم اللہ خان مرحوم کے صاحب زادے تھے۔ مقتول ڈرائیور کی شناخت مقصود احمد کے نام سے کی گئی ہے۔ موٹر سائیکل سوار نامعلوم ملزمان نے ان پر فائرنگ کی۔ پولیس حکام نے مزید بتایا کہ مولاناعادل خان دارالعلوم کورنگی سے واپس آ رہے تھے۔ فائرنگ کے واقعہ میں ایک راہ گیر بھی معمولی زخمی ہوا۔ مولانا عادل خان کو 2گولیاں لگیں۔ واقعہ کے بعد پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری جائے وقوعہ پر پہنچ گئی۔

نیشنل اسپتال کے ترجمان کے مطابق مولانا عدل اسپتال پہنچنے سے پہلے ہی دم توڑ چکے تھے۔ مولانا عادل کو گردن اور پیٹ میں گولیاں لگیں، جب کہ ان کے ڈرائیور کو 3 گولیاں ماری گئیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube