Tuesday, October 20, 2020  | 2 Rabiulawal, 1442
ہوم   > پاکستان

بھارت میں انسانیت کےقتل پرعالمی قوتیں خاموش ہیں،رمیش کمار

SAMAA | - Posted: Sep 22, 2020 | Last Updated: 4 weeks ago
SAMAA |
Posted: Sep 22, 2020 | Last Updated: 4 weeks ago

بھارت میں اس وقت ایک ہندو کی حکومت ہے۔

پاکستان ہندوکونسل کےسرپرست اعلیٰ اوررکن قومی اسمبلی رمیش کمارنےکہا کہ بھارت میں انسانیت کا جو قتل ہورہا ہے عالمی قوتیں اس پر خاموش ہیں۔

اسلام آباد میں منگل کوپاکستان ہندوکونسل کےسرپرست اعلی اور رکن قومی اسمبلی رمیش کمارنےکہا کہ بھارت میں انسانیت کا جو قتل ہورہا ہےعالمی قوتیں اس پرخاموش ہیں،اقوام متحدہ کا مقصد پوری دنیا میں جہاں ناانصافی ہو وہاں بولے۔

انھوں نے کہا کہ ڈیڑھ سال سے کشمیر میں جو کچھ ہوا اس پر اقوام متحدہ خاموش ہے،جودھ پورمیں 11 پاکستانیوں کی ہلاکت پرمکمل خاموش کا کیا مقصد ہے؟ کیا اس مسئلےپرپاکستانی سفارت خانے کو واقعے کی وجوہات جاننے کے لیے رسائی دی گئی؟

انھوں نے مزید کہا کہ مخصوص برادری کے لوگوں کے ساتھ جہاں بھی زیادتی ہوگی وہ میری ذمہ داری ہوگی،ہر مذہب انسانیت کے لیے آواز اٹھانے کا درس دیتا ہے۔

رمیش کمار نے کہا کہ پاکستان میں کسی امریکی،برطانوی یا کسی غیر ملکی کیساتھ کوئی ایشو ہو تو پوری حکومت ہل جاتی ہے لیکن بھارت میں 11 پاکستانی ہندو کوخودکشی دکھانا اورایف آئی آر درج نہ کرنا کہاں کا انصاف ہے،اگرخود کشی کی بھی توکیوں سفارت خانے کو اس معاملے میں رسائی نہیں دی گئی۔

رمیش کمار نے کہا کہ بھارت سیکولرریاست تھا لیکن اس وقت کی حکومت کسی اور طرف لے کر جا رہی ہے،موجودہ بھارتی حکومت گاندھی اورنہرو کے نظریے سے دور لے کر ریاست کو لے کر جا رہی ہے۔

انھوں نے زور دے کر کہا کہ منگل کی رات پاکستان کے ہر شہر سے ہندو کمیونٹی اسلام آباد کے لیے نکلے گی اور جمعرات کوڈپلومیٹک انکلیو میں تمام ہندوکمیونٹی جمع ہو کراحتجاج کرے گی۔ انھوں نے کہا کہ ہندوکمیونٹی کواس لیے اکٹھا کیا کیونکہ بھارت میں اس وقت ایک ہندو کی حکومت ہے۔

انھوں نےمطالبہ کیا کہ جب تک بھارتی سفارت خانہ جودھ پور واقعے سے متعلق معلومات شئیرنہیں کرےگا،تب تک یہ دھرنا ختم نہیں ہوگا۔

انھوں نےکہا کہ بھارت میں اگرانسانیت کی آواز کو دبایا جائے گا تو اس دنیا میں جگہ نہیں ملےگی۔

رمیش کمار نے کہا کہ پاکستان میں تمام برادریاں سبزرنگ سے ظاہر ہوتی ہیں،جبکہ جھنڈے میں سفید رنگ امن کی علامت ہے۔بھارت میں سیٹزن ایکٹ ڈرامہ ہے۔

واضح رہے کہ پچھلے ماہ کے اوائل میں پاکستان سے ہجرت کرکے بھارتی ریاست راجستھان میں بسنے والے بھیل خاندان کے 11 افراد کو قتل کردیا گیا تھا جن میں 4 خواتین، 2 مرد اور 5 بچے شامل تھے۔

پاکستانی دفتر خارجہ کی جانب سے راجستھان میں پاکستان سے جانے والے 11 ہندوؤں کے قتل کے واقعہ پر دکھ اور افسوس کا اظہار بھی کیا گیا۔ترجمان کا کہنا تھا کہ پاکستان ہائی کمیشن واقعہ پر بھارتی وزارت خارجہ سے رابطے میں ہے اوراموات کی وجوہات جاننے کی کوشش کر رہے ہیں۔

دوسری جانب راجھستان میں مقامی لوگوں نے ہلاکت پُراسرار قرار دیاتھا اور مقامی افراد کا کہنا تھا کہ تمام افراد کو بی جے پی کے کارکنوں نے قتل کیا۔

مرنےوالےتمام افراد سندھ کے علاقے تھر پارکر سے کچھ عرصہ قبل راجستھان جا بسے تھے

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube