Saturday, October 24, 2020  | 6 Rabiulawal, 1442
ہوم   > پاکستان

دریائےسندھ میں 8 ستمبرسےہائی فلڈ کی وارننگ جاری

SAMAA | and - Posted: Sep 5, 2020 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA | and
Posted: Sep 5, 2020 | Last Updated: 2 months ago

گڈوبیراج پر درمیانے درجے کا سیلاب برقرار

سکھرمیں دریائے سندھ میں مسلسل پانی کے بہاؤ میں اضافہ ہورہا ہے اورسکھر بیراج کے مقام پر درمیانے درجے کا سیلاب ڈکلیئر کردیا گیا ہے۔

ترجمان سکھرعبدالعزیزسومرو بیراج نے ہفتے کو بتایا ہے کہ سکھر بیراج پر3 لاکھ 60 ہزار کیوسک پانی کا ریلا گذررہا ہے،بیراج کی بند کی گئی 4 کنالوں کوکھول دیا گیا ہے۔

ترجمان سکھربیراج کا کہنا تھا کہ سیلابی صورتحال کےباعث حفاظتی بندوں پر نگرانی میں اضافہ کیا گیا،ہائی الرٹ جاری کرکے ملازمین کی چھٹیاں منسوخ کی گئیں۔ عبدالعزیز سومرو نے مزید بتایا کہ سیلابی صورتحال کے باعث کچے کےایک درجن سے زائد دیہات زیر آب آ گئے ہیں۔

عبدالعزیزسومرونےمزید بتایا کہ گڈوبیراج پر درمیانے درجے کا سیلاب برقرار ہے اوردریائے سندھ میں 8 ستمبر سے ہائی فلڈ کی وارننگ جاری کردی گئی ہے۔

ادھردادو مورو پل کے مقام پر دریائے سندھ میں پانی کی سطح میں اضافہ ہورہا ہے۔دادو مورو پل کے مقام پر دریائے سندھ میں پانی کی سطح 2 لاکھ 97 ہزار کیوسک ہے۔ ایریگیشن کنٹرول روم نےبتایا کہ دریائےسندھ میں پانی کی سطح میں اضافے کے باعث پانی کچے میں داخل ہوگیا ہے اورحفاظتی بند سے ملحقہ کچے کےعلاقے سیکڑوں دیہات متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔

اس وقت سیلابی پانی سے متاثرہ دیہات کی تعداد 20 سے زائد ہوگئی ہے۔متاثرہ دیہات میں محمداسماعیل جتوئی، نبن جتوئی، عارب جتوئی و دیگر شامل ہیں۔متاثرین کومحفوظ مقامات پر منتقل کرنےکےلئے اقدامات جاری ہیں جبکہ دادو مورو کے درمیان واقع کےاسپر بند بھی کمزور پڑرہا ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube